ٓآزمانک: احمدءِ ھوٹل

Humanism3

ساھل بلوچ
ھمک روچ بیگاہ ءِ زردی ءَ مانشانت ماں گوں چار سنگت ءَ احمدءِ ھوٹل ءَ شُت اِنت۔ چاھے وراگ ءَ بیگاہ ءَ ،چاہ ءَ پدا سنگتانی مجلس ءِ وتی ارزشت ءِ، مئے دیوان برجاہ اَت کہ یک مردے ءَ کُرسی زُورت مئے گُورا نشت ،دراہینت ءِ سنگتاں شماں وش ءُ جوڈ اِت! ماں دُرست ءَ دیم ترینت ءُ پسّو دات ماں وش ءُ شادئے ۔نندگاں گوں مرد بندات بوت گپ کنگ ءَ بازیں گپ ءِ جت سنگتاں انچوں کہ وان اِت ھمنچو عمل کنگ ھژدری انت ۔انسان دوست بہ بئے ، انسانیت ءِ سرا بے جہڑ اِت، وتی بزگیں راج ءِ سرا بے جہڑ اِت، مردے گپ برجاہ اِت انت کہ تہاری ءَ مانشانت سنگتے ءَ دراہینت واجہ تہی گپ سک وش انت بلے نوں شپ اِنت ،مرد ءَ گُشت ھو بلے من ھمک روچ اے وھدءَ ھمدءَ ھوٹل ءَ کایاں شماں ھم بیااِت۔ ھمک روچ کہ بیگاہ بوت ماں وتارا احمدءِ ھوٹل ءَ سرکُت مرد پیسرءَ ھمودا ساڈی اَت۔ مُدام مردءَ وت گپ بندات کُت۔ برے برے مئے نشتگیں سنگت ءَ بازیں جُست کُت مرد ءَ بچکندگ ءِ جت ءُ پسّو دات مئے دل گیشتروش بوت۔ جُستاں چہ پد سنگتے ءَ دراہینت واجہ مئے گُور ا ھمساھگ ئے ھست کہ ھاہی ءِ جنکوہیں چُک کینسرءِ آماچ اِنت انو کراچی ءِ مزن نادُراہ جاہ ءَ داخل اِنت ماں ھمے لوٹ اِنت کہ گونڈل ءِ زمدمان ءَ بہ رکھین ئے۔ مردا گُشت سنگتاں انسان بلوٹیت چے کُت نہ کنت۔ مرد ءَ پدا انسانءِ زندمان ءِ سرا بلاہیں دراجیں کسہ ءِ آورت مارا دلبڈی ءِ دات۔ ماں سنگتاں شور ءُ سلاہ ءَ پد کار بندات کُت برے ڈی سی ءُ برے یک پروفیسر ءِ در ٹُک اِت و تی ارض سرکُت ۔ماں پنچمی روچ ءَ کِساس یک لکھ روپی گپت ءُ مُدامی وڈا بیگاہ کُت احمد ءِ ھوٹل ءَ وتارا سرکُت۔ مرد ھم اھت ماں گُشت واجہ ما یک لکھ روپی گپتگ مرد ءَ پدا دلبڈی دئیگ بندات کُت۔ ما دُرست اں دپ یک ءِ کُت نا!!!! واجہ تہی داتگیں دلبڈی اَنت کہ ماں اے کار کُتگ مردءَ گُشت کہ من ھم لہتیں مردم دیستگ بگندے اے ھم مارا کسانیں کُمکءِ بکن انت، سنگت ءَ دُرست ءِ زر ءُ ڈس ءُ نشان مرد ءَ دات انت گُشت ءِ کہ تو لہتیں ذر وڈ بکن یکجا راھبدے ، مردءَ گُشت ھو من وتی جُہد ءَ برجاہ کنیں پدا سنگت ءَ گُشت بلے واجہ باندءَ المی راہ دئیگ لوٹاں چوں مردا گُشت بس من باندءَ راہ ءِ دیاں دوھمی روچ ءِ بیگاہ ءَ ماں شُت اِنت احمدءِ ھوٹل ءَ سر بوت انت کمو رندترءَ مرد اھت گُشتے پہل بکن انت من کمو دیر کُتگ ما گُشت نا واجہ چُشیں گپ ءِ نہ اِنت ۔گِند ءُ نندءَ پد سنگتءَ گُشت واجہ زر تو دیم دات انت ،مردءَ گُشت منی پت مرچی ھج ءَ واگ بوتگ زر کم بوتگْ انت من زر پت ءَ را دات انت من چارت کہ اے ھم یک سوابی کار ءِ پمیشکہ من مرچی کمو دیر کُتگ ھوٹل ءِ آھگ ءَ�آ ؁ گپانی ھُش کنگ ءَ پد ماں دُرست پُرشت اِنت ھرکس ءَ وتی باتن ءِ تہا وتاءَ وت جُست کنگ ءَ اَ ت من ھماں روچ ءَ زانت کہ انسانیت ءِ سرا گپ کنوک باز انت بلے انسانیات ءِ دردوار کم اَنت۔

تاریخ میں طلبا تنظیموں کی کردار

bso-azad

تحریر: میر بلوچ 
تعلیم ایک بنیادی سماجی ادارہ ہے ،طلبا اس کا بنیادی ارکان میں سے ایک ہیں،بنیادی رکن ہونے کے ناطے سماجی اور سیاسی سطع پر نہایت اہم کردار ادا کرتے ہیں۔دوسرے کئی سماجی گروہوں کی طرح طلبہ کے سیاسی کردار کی جھڑیں بھی نشاتہ ثا نیہ سے ملتی ہیں۔ نشاتہ ثانیہ سولہویں صدی کے بعد یورپ میں سیاسی ،سماجی ،اقتصادی ،ثقافتی ،اور علمی میدانوں میں آنے والا ایک جاندار انقلاب تھا۔نشاتہ ثانیہ کے بعد صنعتی انقلاب اور انقلاب فرانس نے قدیم اقتصادی ،سیاسی، اور سماجی اداروں کو یکسر بدل کرکے رکھ دیا۔بادشاہت کی جگہ جمہوریت نے لے لی، جاگیرداری کی جگہ سرمایہ داری آگئی اور چرچ کو ریاستی امور سے ہاتھ دھونا پڑا۔ تبدیلی کی اس ہوا کو عقلیت پسند مصنفین جیساکہ فرانسس بیکن، رہنے ڈیکارٹ، روسو، والیئٹر اور برونو وغیرہ نے مزید توانہ بخشی۔ جمہوریت، قانون کی بالادستی اور سائنسی طرز فکر جیسی کئی نعمتوں کے ساتھ یورپ میں شخصی آزادی ،معاشرتی مساوات ،انصاف ،اور انسان دوستی کی نئی اقدار اور تصورات وجود میں آئے۔ تعلیمی نظام کو چرچ کے تسلط سے آزادی ملی۔ ان سب عوامل نے یونیورسٹیوں کے ماحول میں ڈرامائی تبدیلیاں برپا کیں اور طلبا کو اپنا نقطہ نظر اپنانے، اظہار رائے کرنے اور جمہوری اصولوں پر مبنی تنظیم بنانے کے لیے مناسب ماحول میسر آیا۔ اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ سیاسی منظر پر طلبا کا کردار ابھر کر سامنے آیا۔سب سے پہلے جن نظریات نے یورپ کے طلبا کو اکٹھا کیا وہ تھے جمہوریت اور قوم پرستی۔ یورپی ممالک پر نپولین کا حملہ جرمنی اٹلی آسٹریا اور روس کے طلبا کی قوم پرستی کی تحریک کی ایک بڑی وجہ بنا۔ 1815ء میں جینا یونیورسٹی کے جرمن طلبا نے Urburschenshaften نامی ایک یونین بنائی۔ اس تنظیم نے قوم پرستی کے نظریات کو پھیلانے کے لئے کام کیا، اس نے اپنی شاخیں دوسری تمام جرمن یونیورسٹیوں میں بھی پھلا دیئے۔ اس تنظیم کی سرگرمیاں نیم اتحادی جرمن ریاستوں کی حکومت کو بہت خطرناک لگیں اور اسے 1819 ء میں کالعدم قرار دے دیا گیا۔ مگر کالعدم قرار دیئے جانے کے باجود کئی سال تک اس کی سرگرمیاں خفیہ طور پر جاری رہیں۔
1848 میں پیرس، ویانا اور برلن میں انقلاب کی ایک بڑی لہر اٹھی۔ اس انقلابی تحریک میں طلبا صف اول میں شامل تھے۔ بعدازاں اٹلی کے طلباء غیر ملکی دخل انداز یوں کے خلاف متحد ہوگئے اور بطور قوم اٹلی کو متحد کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ روسی طلبا نے زار حکومت کے خلاف جدوجہد کرنے کے لئے انہیں تقلید کی۔
قوم پرستی نظریات ترقی یافتہ ممالک کی یونیورسٹیوں کے ذریعے ان ممالک کی کالونیوں تک بھی پہنچ گئے۔ ایک اور اہم عوامل یہ بھی تھا کہ ان کالونیوں کی اشرفیہ کے جو نوجوان مغربی یونیورسٹیوں میں پڑھ رہے تھے قوم پرستی، شوشل ازم اور سیکولرازم کے جدید نظریات سے متعارف ہوئے اور واپس آکر نہ صرف انھوں نے ان نظریات کو پھیلایا بلکہ اپنی اپنی اقوام کے راہنما بھی ثابت ہوئے۔
قومی حالات کو دیکھتے ہوئے ان کالونیوں میں قوم پرست طلبا تنظیمیں وجود میں آئیں جو جلد ہی قومی آزادی کی تحریکوں میں بدل گئے۔ غیر ملکی تسلط سے نفرت اور سوراج کی زبردست محرک ثابت ہوئے ،انڈونیشیا کے طلبا اس کی بہترین مثال ہیں۔ انہوں نے قومی آزادی کی جددجہد کے ساتھ ساتھ قوم پرستانہ نظریات کو پھلانے کا کام بھی کیا ۔برصغیر کی تاریخ بھی اس طرح کی مثالوں سے بری پڑی ہے۔1905 میں برصغیر کے طلبا نے بنگال کی تقسیم پر حکومت برطانیہ کے خلاف زبردست احتجاج کیا۔1920 کی تحریک خلافت میں بھی انہوں نے اہم کردا ادا کیا۔ برصغیر کی دو اہم تنظیمیں آل انڈیا اسٹوڈنٹس فیڈریشن اور آل انڈیا مسلم اسٹوڈنٹس فیڈریشن شامل ہیں جو 1936 اور 1937 میں قائم ہوئیں۔ ان تنظیموں نے ہندوستان کی تحریک آزادی میں اہم کردا ادا کیاتھا۔ اس کے علاوہ انقلابی طلباء نے بھی ہندوستان کی تحریک آزادی اور سوشلسٹ انقلاب کے لئے بہت کام کیا۔ عظیم ہیرو بھگت سنگھ بھی ان میں سے ہی ایک تھا۔
بیسویں صدی کا پہلا نصف حصہ دنیا سے کالونیوں کے خاتمے کا دور تھا۔ اسی لئے اس عرصہ میں طلبا تحریکوں کا بنیادی مقصد ملکی آزادی حاصل کرنا ہی تھا۔ جبکہ نصف صدی کے بعد ان کا زیادہ تر رجحان سوشلزم ،مارکسزم اورعمومی سماجی تبدیلی کی طرف زیادہ ہوتا گیا۔ شوشل از م نظریات کے اثرات اتنے گہرے تھے کہ 1991 میں سوشلسٹ بلاک کے انہدام تک تقریبا تمام ترقی یافتہ اور ترقی پزیر ممالک میں طلبا کی سیاست پر ان کی اجارہ داری رہی۔ تاہم کئی مستثات بھی ہیں جیسا کہ انقلاب ایران میں شامل کچھ طلبا گروپ اور مذہبی و نسلی ایجنڈے پر کام والی دائیں کی دیگر کچھ تنظیمیں جیساکہ اسلامی جمیعت طلبا اسلام بالواسطہ یا بلاواسطہ طور پر مغربی طاقتوں کی حمایت یافتہ بھی رہی ہیں تاکہ سرد جنگ میں انہیں روس کے خلاف استعمال کیا جاسکے۔طلبا تنظیموں میں کچھ ایسے تھیں کسی خاص نظریہ کے بجائے خاص حالات و واقعات کے ردعمل میں وجود میں سامنے آئے جیسا کہ جنگ عظیم اول میں یورپی طلبا تنظیموں نے جنگ کے خلاف تحریک چلائی اور جنگ عظیم دوئم میں امریکہ کی شمولیت کے خلاف امریکی طلبا تنظیموں نے تحریک چلائی اور بیسویں صدی کے پہلے نصف میں سیاہ فاموں کے حقوق کے لئے تحریک چلائی گئی۔ مئی 1968 کی تحریک کو کئی تاریخ دان دوسرا انقلاب فرانس کا نام بھی دیتے ہیں۔ مئی 1968 نے فرانس کی قدامت پرست، مذہب، حب الوطنی اور بالادست طبقات کے لئے عزت جیسی اقدار کو روشن خیال مساوات شخصی آزادی اور انسانی حقوق کی اقدار کے ساتھ بدل دیا اور آج فرانس کی پہچان ہیں۔ آج دنیا میں جتنے بھی آزادی تحریکیں چل رہی ہیں ان میں طلبا تنظیموں کا کرداربہت اہم ہیں ،جیسا کہ تبتی تحریک جو چین کے زیر قبضہ ہے اور وہاں بھی ایک سیاسی طلبا تنظیم کی جدوجہد جاری ہے تبت کی طلبا تنظیم ایس ایف ٹی(student for a free tibet) 1994کی قیام عمل میں آیاہے۔ تبت کو چین نے 10مارچ 1959 کو قبضہ کیا تھا اور تبت کی تحریک آزادی میں طلبا و طالبات کے فعال کردار کی کمی کو محسوس کرتے ہوئے چند تبتی آزادی پسند سیاسی کارکنوں اور تبتی اسٹوڈنٹس نے اس تنظیم کی بنیاد رکھی۔ دلچسپ امر یہ ہے کہ ایس ایف ٹی تبت کے اندر جدوجہد کرنے کے بجائے باہر ممالک میں مقیم تبتی طلبا و طالبات پر مشتمل ایک انٹرنیشنل نیٹ ورک قائم بھی کر چکی ہے۔ جو عالمی سفارتکاری اور لابینگ کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ھوئے ایس ایف ٹی کی عالمی سطح پر تنظیم کی ممبر شپ تیزی سے بڑھتی گئی اور دو سال کے اندر دنیا کے مختلف میں اسکے 150 چیپٹرز قائم ہوئے۔ ابتدائی طور پر تنظیم نے اپنی جدوجہد کا محور ساتھی طلبا و طالبات میں تبتی تاریخ و ثقافت، چینی قبضے اور آزادی کی تحریک کے متعلق آگائی مہیم پھلائی گئی اور تیزی سے باہر ممالک میں مقیم تبتی اسٹوڈنٹس کی توجہ کا مرکز بن گیا۔ فی الوقت ایس ایف ٹی 35 ممالک میں پھلی ہوئی ہیں اور دنیا کی مختلف یونیورسٹیوں،کالجوں، اسکولوں اور عام کمیونیٹوں میں اسکے 650 چیپٹرز ہیں۔اور اس تنظیم کا ہیڈکواٹر امریکہ میں ہے اور اس کے علاوہ کینڈا، انڈیا، اور برطانیہ میں بھی اس کے دفاتر موجود ہیں۔چین نے تبت پر 10 مارچ 1959 کو قبضہ کیا تھا اور تبتی اسٹوڈنٹس اس دن کو دنیا کے مختلف جگہوں میں اس دن کے متعلق آگائی مہیم پھلائی جاتی ہیں، اور اپنے اوپر ہونے والے چینی مظالم کے بارے میں تقریریں کرتے ہیں اور ریلیاں نکالتے ہیں۔ کردستان ورکر پارٹی کردستان میں جاری آزادی کی تحریک میں کرد قوم کے ساتھ شانہ بشانہ ہیں کردستان ورکرز پارٹی کا قیام 27 نومبر 1978 میں لائس نامی گاوں میں رکھی گئی جس میں عبداللہ اوجلان نے اہم کردار ادا کیا اور وہی اس کے حقیقی بانی ہے۔ نظریات حوالوں یہ تنظیم انقلابی سوشلزم و کردش قوم پرستی کے نظریات کا مرکب ہے۔ ابتدائی عشروں میں اوجلان نے کرد طالب علموں کو یکجا کرنا شروع کیا اور بعدازاں یہ گروپ ترکی کے جنوب مشرق کے علاقوں میں آباد کردوں سے تعلقات قائم کیے اور خود کو سیاسی جماعت کردستان ورکرز پارٹی کی صورت میں ڈالنے میں کامیاب ہوا۔ 1984 میں جب اس تنظیم نے آزاد کردستان کے قیام اور خصوصا ترکی کی جبری قبضے کے خلاف اپنی جدوجہد کا آغاز کیا تو ترک سرکار نے اس تنظیم کو مکمل طورپر صفایا ہستی سے مٹانے کی ٹھان لی۔ ترکی نے اپنے بین الاقوامی پروپیگنڈے کے تحت اسے محض تنگ نظر و لسانی اور دہشت گرد تنظیم گردانتی ہیں یہ تنظیم امریکہ یورپی یونین سمت متعدد ممالک میں اس تنظیم پر پابندی دی جاچکی ہیں۔
اگر ہم اپنے بلوچ قومی تحریک آزادی پر نظر ڈالیں تو ہمیں بھی ایسے ہی ایک طلبا تنظیم نظر آئی گی جو ہر مشکل حالات میں بڑے سے بڑے مشکلات کا سامنا کرتے ہوئے اپنی جدوجہد جاری رکھا ہوا ہے۔ ویسے تو ریاست پاکستان نے بلوچ قومی تحریک میں جدوجہد کرنے والے تنظیموں کے خلاف پابندی عائد کردی گئی ہے لیکن بی ایس او آزاد کے خلاف کچھ زیادہ ہی اپنی مشنری استعمال کررہا ہے۔ جب ریاست پاکستان نے بی ایس او آزاد پر پابندی عائد کردی تو ان کے کارکنان کو گرفتار کرنا اور یونیورسٹیوں میں ان کے کارکنان کے ہاسٹلوں میں چھاپہ مار کر ان کے کتابوں کو دہشت گرد مواد ظاہر کرنا ریاست کی ناکامی کا منہ بھولتا ثبوت ہے کہ ریاست پاکستان بی ایس او آزاد سے کتنا خوف زدہ ہے۔ اور ریاست نے بی ایس او کو کمزور و ختم کرنے کے لئے تنظیم کے مرکزی جنرل سیکرٹری زضا جہانگیر کو شہید اور تنظیم کے چیئرمین زاہد بلوچ کو لاپتہ کرکے بی ایس او کو کمزور کرنے کی کوشش کی مگر کسی حد تک کامیاب نہ ہوسکے اور بی ایس او آزاد نے 2015 کو اپنا کامیاب سیشن کر کے ریاست کو یہ باور کرایا کہ بی ایس او ایک تحریک کا نام ہے اور وہ ایک نوجوانوں کی تحریک ہے جسے کوئی بھی مٹھا نہیں سکتا۔ بی ایس او نے ایسے بہت سے نوجوان پیدا کیے ہیں جو اپنی قومی آزادی کے لئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرسکتے ۔شہید کامریڈ رضا جہانگیر ہو یا قمبر چاکر، شفیع بلوچ، کامریڈ قیوم، اور دوسرے بہت سے بلوچ نوجوان جو اپنے مقصد سے ذریعہ بھی پیچھے نہیں ہٹھے اور اپنی تنظیم کے لئے قومی تحریک کی خاطر جان کا نذرانہ پیش کردیا گیا۔ آج بلوچ قومی تحریک سیاسی حوالے سے اتنی مضبوط ہیں اس کے پیچھے بی ایس او آزاد کا اہم کردار ہیں۔ کیونکہ طلبہ تنظیمیں ہی اپنی قوم کے نوجوانوں کی تربیت کرتی ہے اور انہیں اپنی قومی تاریخ و ثقافت کے بارے میں معلومات فراہم کرتی ہے اور وہ اپنے تاریخی اہمیت کو جان کر جدوجہد کی طرف مائل ہوجاتا ہے۔ ایک انقلابی تنظیم ہی اپنی قومی تحریک کو اچھی طرح گائیڈ کرسکتا ہے آج تبت تحریک، کرد تحریک اور بلوچ قومی تحریک ان تینوں تحریکوں میں طلبا تنظیموں کا کردار بہت اہم ہیں۔ اور ریاست کی کریک ڈاون کے باوجود بھی بی ایس او آزاد مضبوط اور مستحکم ہوتا جارہا ہے۔ بلوچ نوجوانوں کوچاہیے کہ وہ اپنے قومی تحریک کے ساتھ وابستہ رہے اور بی ایس او کا ساتھ دیں کیونکہ بی ایس او کی جدوجہد بلوچ قومی تحریک کے لئے ہے اور تحریک بلوچ قوم کی بقا سے وابستہ ہے۔

تلار ایک عظیم کردار

63287

چراگ بلوچ
دنیا میں ایسے ہزاروں جانثار گزرے ہیں جنہوں نے اپنی جدوجہد کے بدولت تاریخ میں مورخ کو اپنی خدمات اور جدوجہدپر قلم اورلب کوشائی کی جانب مبزول کروایا ہے کیونکہ اُن لوگوں کی جدوجہد معاشرے کے اندر ایک جستجو کی موجب بنی ہیں۔ایک جمودزدہ معاشرے میں تجسوس ہی اسُکی جمود کو توڑ کر اُسے ترقی کی جانب سفر پر راغب کراتی ہے۔اسی طرح تاریخ کے اوراق میں سقراط کا ذکر جستجو زادہ معاشروں میں کافی اہمیت حاصل کر چکی ہے ،کیونکہ سقراط ہی وہ ہستی تھے جنہوں نے یونان کی جمود زادہ معاشرے میں بحث و مباحث کی رواج کو پروان چھڑایا ،خود تومعاشرے کو جمود میں رکھنے والوں کی ہاتھوں قتل کردئیے گئے مگر تاریخ نے اُسے سرخروح بنا کر اُن لوگوں کے لئے مشعل راہ بنا دیا جو اپنے اپنے معاشروں میں جستجو کو پروان چھڑھانے کیلئے مصروف بہ عمل ہیں۔
جب ہم تاریخ میں مزید گوطہ زنی کرتے ہیں تو تاریخ ہمیں ایسے بے شمار کرداروں سے روشناس کراتی ہے جو جمود کو توڑنے میں کامیاب رہ چکے ہیں ۔اگر ہم مذاہب کے تاریخ کو کھنگالتے ہیں تو ہمیں نبیوں سے لے کر پادریوں تک ایسے بہتوں کرداروں سے واقف کراتی ہے جو معاشرے میں امن اور خوشحالی لانے کی سہرا اُن کے سر جاتا ہے ۔اسلامی تاریخ میں حضرت محمدﷺ ہی وہ شخص تھے جوعرب معاشرے کی جمود کو توڑ کر وہاں بڑی تبدیلی لانے میں کامیاب ہوچکے تھے ،اُس نے اُس وقت کے جاہل عربوں کو انسان بنایا ہے،وہاں کے جبر وتشدد کے ماحول میں امن وخوشحالی آئی اور انکے دورِ حکمرانی تک برقرار رہی ہے ۔فارس کے تاریخ میں مذہبی رہنما مزدک کی تذکرہ بھی بڑی اہمیت کے حامل ہے جو شہشناہ کے دربار میں ایک قریبی ملازم ہو کر قہت کے دنوں میں شہنشاہ کی جمع پھونجی پر لوگوں کو اجازت دے کر لوگوں کے دل میں ایک نبی کی حیثیت حاصل کرکے لوگ اُسکی پوجھا کرکے اُسے ایک باقاعدہ مذہبی شکل مل جاتی ہے ،کیونکہ جابر بادشاہ کی دربار میں سالوں سے آئے ظلمت سے لوگوں آزاد کراکر اُن کی زندگیوں کو بچاتا ہے۔
عیسائیت کی تاریخ میں جب رومن کیتولک کے پادری سماج کو ترقی کے بجائے تنزلی کی جانب دکیل دیتے ہیں تو اُنکے خلاف ایک اہم کردارکنگ مارٹن لوتر کی شکل میں اپنے95 تیسس پیش کرتا ہے اور اُسکے تیسس عیسائیت کو دو جگہوں میں تقسیم کر دیتا ہے ،لوگ اُن بدگمان،اور کرپٹ پادریوں کے خلاف پروٹسٹ کرکے اپنا خود کا ایک الگ فرقہ بنا دیتے ہیں ،وہ فرقہ آج بھی پروٹسٹینٹ کے نام سے یورپ کے اکثریتی ممالک میں آباد ہیں۔اسی عیسائیت ہی کی تاریخ میں ایک اور کردار آرچ بشپ میکیریس جو ایک پادری ہونے کے ساتھ ایک آزادی پسند جہدکار بھی تھے ،جنہوں نے سائپرس کی آزادی کو اپنے عقیدے کے ذریعے سائپرس کے لوگوں کو ترکی اور یونان دونوں سے ایک ہی وقت میں جنگ کی درس دیا کرتے تھے۔
جب نظر دنیا کی آزادی کی تحریکوں کے اوور جاتی ہے تو وہاں مظلوم اقوام کے بہادر سپوتوں کی ایک طویل فہرست مل جاتی ہے کہ جنہوں نے معاشرے کی آزادی کی خاطر ایک انمول کردار نبا کر تاریخ میں سرخ رو ہوئے ہیں۔جن میں کیوبا اور لاطینی امریکہ کی آزادی کے لئے جدوجہد کرنے والا ڈاکٹر چے گویرا،چین کو ایک متحداور آزاد ریاست بنانے والا ماؤے زے تنگ،مزدوروں کو آواز بننے اور اُنہیں متحرک کرنے والاکارل مارکس، یونان کے ڈکٹیٹرشپ پاپاڈوپولس کی استحصال ،ظلم اور جبر کے خلاف اپنے لوگوں کی آزادی کے لئے تاریخ رقم کرنے والے کردار الیگزینڈر پیناگولز ،دنیا کی پہلی کمیونسٹ اور سوشلسٹ ریاست کی بنیاد ڈالنے والا باصلاحیت انسان ولادی میرلینن،امریکی اور فرانسیسی سامراج سے ایک نہ تمنے والا جدوجہد سے ویتنامی عوام کو آزادی کی شاہراہ میں لانے والا دربیش صفت انسان ہوچی من،اوردنیا کے اندر پائے جانے والے نسلی تضادات کو ختم کرنے کی پاداش میں اپنی آدھازندگی جیل میں بسر کرنے والا نیلسن منڈیلاقابل ذکر ہیں،انہی حضرات کی متہین کردہ راستے پر چلتے ہوئے آج دنیا کے تمام مظلوم طبقہ،نسل،اور اقوام اپنی حق اور آزادی کے لئے جدوجہد کر رہے ہیں،چائے وہ اقوام چین کے مظلوم ایغور اورتبتی،ایران،ترکی،شام اور عراق کے کرد ہوں،یا ایران،افغانستان،اور پاکستان کے جبری قبضہ میں رہنے والے بلوچ ہوں،یا پھرہندوستان کے نیکسل وادی ،امان کے ظفاری،نائجریا کے سفاری ہوں اپنے اپنے جدوجہد میں کبھی شدت کے ساتھ آگے آتے ہیں تو کھبی حادثات کے شکار ہوکر سالوں تک میڈیا اور بحث و مباحثوں سے یکسر غائب ہو کر عدم توجہی کے شکار بن جاتے ہیں۔آج امان کے ظفاری اسکی ایک واضع مثال ہے۔کرد اور بلوچوں کی جدوجہد میں بھی وقت و حالات کے مطابق شدت اور حادثات آئے ہیں۔مگر ان میں ہر وقت کرداروں کی کمی محسوس نہیں ہوئی ہے۔بلوچ جدوجہد کی شروعات سے ہی کرداروں کی ایک لمبی لڑہے۔ان کرداروں میں نواب محراب خان سے لے کرنورا مینگل،بابو نوروز،جنرل شروف،بالاچ مری،غلام محمد، رضا جہانگیر،حاجی رزاق،اُستاد صبا دشتیاری تک ایک لمبی فہرست ہے جو بلوچ جدوجہد کو ایک قبائلی معاشرے سے نکال کر ایک ادارہ جاتی معاشرے میں لا کر آزادی کی منزل کو قریب سے قریب تر کرتے جا رہے ہیں۔
راقم کو ایک کردار کی کوج تھی ،اُسی کردار میں راقم کو ان سب کرداروں سے اس لیے تعلقات استوار کرنا پڑھا کہ راقم کا کردار اوپر بیان کئے گئے کرداروں سے مماثلت رکھتے تھے ۔ اگرآج کے بعد اُس کردار کی جدوجہد کو سمجھنے اور پرکھنے کے لئے اُنہیں ایک مورخ نہ تو سہی کم از کم تاریخ کا ایک طالب ہونا پڑھے گا۔
وہ کردار تلار (سلیمان جان) کے علاوہ کون ہو سکتا ہے ۔میرا تلار بھی بلوچستان کے پیناگولزہی تھا۔ابھی کچھ اپنی عظیم کردار کے مالک تلار جان کی جدوجہدکے لئے کچھ رقم کرنے کی جسارت کرتا ہوں ۔تلار (سیلمان) جان ایک سیاسی کارکن تھے ،وہ بلوچ نیشنل موومنٹ کیچ ریجن کے صدر تھے ۔تلار ویہی انسان ہے( جو کیچ خاص کر تربت جو ریاستی رٹ کا گڑ مانا جاتا ہے ،یہاں ایک آئی جی بیٹھا ہے تربت ایک ہیڈکواٹر ہے، کہنے کا مطلب یہ ہے کہ تربت ہی بلوچستان میں قابض فوج کا بلوچستان میں دوسرا مرکز ہے یہاں سے مکمل مکران کی مانیٹرینگ ہوتی ہے بلوچستان میں آپریشنوں کی تیاری یہاں سے کی جاتی ہے اس لئے اس علاقے کو جدوجہد سے پاک کرنا اولین شرط تھی ،اُسی کے تسلسل میں تربت سے بلوچ جدوجہد کاروں کی ایک ختم نہ ہونے والے جبری گمشدگی اور مسخ شدہ لاشوں کا سلسلہ شروع ہوا جس کے زد میں بی این ایم اور بی ایس او آزادکے کہیں لیڈر و کارکنان آئے ہیں۔جن میں بی این ایم کے بانی غلام محمد،لالامنیر،شیرمحمد،امدا بجیر،رازق گل ،رضا جہانگیر،کمبر چاکر ،رسول جان سمت کہیں کارکنان بشمول تلار جان بھی شامل ہیں)جب ریاستی کریک ڈاؤن تیز سے تیز تر ہوگئی تو وہاں تلار جان جیسے کرداروں نے علاقے میں حقیقی سیاست جو کہ بلوچ کی آزادی کی ضمانت ہے کو زندہ کرکے اُسے قوت بخش دی۔آزادی کے لئے قربانی سے سرشار لوگوں کو اکھٹا کرکے انکی سمیت کو منزل کی جانب کردیا تھا۔ایک دفعہ پھر تربت کے سیاسی موسم بھال ہوگئی ہر گھر اور دیوان میں آزادی ،جدوجہد کی موضوع گفتگوں کی زینت بن گئی۔ریاست نے کریک ڈاؤن کے ساتھ ساتھ منشیات کے پھلاؤ کو معاشرے میں تیز کر دیا تھا تاکہ نوجوانوں کو قابوں میں رکھا جا سکیں ،تلار اور دوستوں نے نوجوانوں کے ہاتھوں بیئر کی بوتل کی جگہ ڈاکٹر مبارک علی،ڈاکٹر خالد سہیل،عنایت اللہ بلوچ اور پروفیسر حمید بلوچ کی تسانیف مکران،تاریخ اور معاشرہ،تاریخ کے نئے زاویے،سماجی تبدیلی ارتقا و انقلاب،The Problem of Greater Balochistanتما دی ۔جب تربت میں فورسز نے بلوچ عورتوں کو گھیرے میں لے کر اغوا کرنے کی کوشش کی تو تلار ہی وہ نوجوان تھا جس نے ریاستی گناہونے عمل کو بی این ایف کی پلیٹ فارم کے تحت ناکام بنا دیا۔
راقم کا تلار سے پہلی ملاقات مارچ 2015میں ہوئی تھی اُس دو دنوں کی ملاقات میں، میں نے تلار کی قائدانہ صلاحیت کو بہت قریب سے دیکھا ۔اُس شخص کے اندر سخت سے سخت تر حالات میں تنظیم کاری ،ماس موبلائزیشن،رابطہ کاری کی صلاحیت موجود تھے۔وہ اپنے کارکنان اور عوام کو تنظیمی پالیسوں کے تحت کام لینے سے بھی اچھی طرح واقف تھے۔
پارٹی اور تنظیموں میں ایسے کردار کارکنان کے لئے حوصلہ ہوتی ہیں ۔جب بھی حالتِ مایوسی اور بیزاری کی کفیت آجاتی ہے تو وہاں ایسے کردار بیچ میں آکر حالات سے لڑنے کی تلقین کرتے ہیں،اس لئے یہ کہاوت عام ہے کہ ایک کردار بن کر جیو کیونکہ کردار مرتے نہیں ہیں ۔وہ تاریخ کے اوراق میں رہ کر ہمیشہ جدوجہد کے لئے رہنمائی کرنے آتے ہیں۔
آخر میں کامریڈ تلار جان کے چند الفاظ ہمیں اپنے جدوجہد میں طاقت اور عوامی سیلاب کو دشمن کی طرف کرنے کے لئے ایک لازوال قربانی کے لئے تیار رہنا ہوگا ۔قربانی ہی وہ شے ہے جس کے ذریعے ہم اپنے دشمن کے ہر عمل کو ناکام بنا کر عوامی حوصلے میں قوت پیدا کر سکتے ہیں ۔اس کے لئے بی این ایم اور بی ایس او آزاد کے کارکنان کو اس کے لیے خود کو عملی طور پر تیار کرنا ہوگا۔جب ہم آج سے لازوال قربانی کے لیے تیار ہونگے ہماری اندھیری راتوں کو جلد روشنی میسر ہوگی،اور وہ روشنی اس پورے خطے اور انسانیت کی بقا کی ضامن ہوگی۔
تلار نے لازوال قربانی کی راہ میں گامزن ہوتے ہوئے ہمیشہ کیلئے نمیران ہوگئے۔

نیشنل ازم

maxresdefault

تحریر : حمید بلوچ
نیشنل ازم کیا ہے؟ قوموں کی تشکیل میں نیشنل ازم کا کیا کردار ہے ؟ قوموں کو متحد کرنے اور ان کی ترقی میں نیشنل ازم نے کیا کردار ادا کیا ہے؟ان سوالوں کا جواب معلوم کرنے کے لیے ضروری ہے کہ قوم اور قومیت کیا ہے جب ہم صیح ان کے مفہوم سے آگاہ ہوجائیں تو نیشنل ازم کا نظریہ ہماری سمجھ میں آسانی سے آ جائے گا۔ قوم کی تعریف مختلف مفکرین نے کی ہیں جن میں چند درج ذیل ہے۔ 
لارڈ برائٹس کے بقول؛ قوم ایک ایسی قومیت ہے جس نے اپنے آپکو سیاسی طور پر منظم کرلیا ہو خواہ وہ آزاد ہو یا آزادی حاصل کرنے کی خواہش رکھتی ہو۔ ہیز کے خیال میں قومیت جب اتحاد اور حاکمانہ خود مختاری حاصل کرلیتی ہے تو قوم بن جاتی ہے۔ماہر عمرانیات کے مطابق قوم سے مراد وہ علاقہ یا خطہ جس کے رہنے والوں میں تاریخی تسلسل پایا جاتا ہو لیکن شرط یہ ہے کہ تاریخی تسلسل کئی صدیوں تک برقرار رہا ہو۔ ان تمام تعریفوں کی روشنی میں ہم قوم کی تعریف اس طرح کرسکتے ہیں کہ قوم لوگوں کے ایسے اجتماع کو کہتے ہیں جو کسی خاص خطہ زمین پر آباد ہو جنکی زبان ثقافت تاریخ رسم ورواج مشترکہ ہو لیکن یہ ضروری نہیں ہے کہ زبان ایک ہی ہو۔ ایک قوم میں مختلف زبان بولنے والے افراد موجود ہوتے ہیں۔جب لفظ قوم کا استعمال ہوتا ہے تو اس سے مراد لوگ اور شہری ہوتے ہیں اور تاریخی طور پر ان کا تعلق ریاست سے ہوتا ہے اور ان کی پہچان قومیت ہوتی ہے۔ 1300 ویں صدی میں جب قوم کا اصطلاح استعمال کیا گیا تو اس دور میں قوموں کی پہچان بادشاہوں اور امراہوں کے ذریعے ہوتی تھی لیکن جب انقلاب فرانس کے بعد قومی ریاستیں وجود میں آہیں تو قوموں کی پہچان قومیت بن گئی۔ قوم کے وجود نے ہی قومیت کو جنم دیا اور قومیت نے قوم پرستی کو جنم دیا۔ قوم پرستی کو بیان کرنے کے لیے قومیت کی تعریف ضروری ہے قومیت کو مختلف مفکرین نے اپنے نقطہ نظر میں بیان کیا ہے جن میں چند مندرجہ ذیل ہے۔ بین الاقوامی عدالت انصاف قومیت کی تعریف ان الفاظوں میں کرتا ہے۔ وہ قانونی بندھن جسکی بنیاد سماجی حقیقت پر مبنی ہو جس سے احساس مفاد اور وجود کا حقیقی واسطہ ہو اور جہاں حقوق و فرائض لازم و ملزوم ہو۔ جے ایچ روز کے مطابق قومیت دلوں کا ایسا اتحاد ہے جو ایک مرتبہ پیدا ہوجائے تو کبھی ختم نہیں ہوتا۔لارڈ برائس کے مطابق قومیت سے مراد ایسی آبادی ہے جو بعض رشتوں مثلاً زبان، ادب، افکار اور رسم و رواج کی بنیاد پر اسطرح متحد ہو کہ اسے وحدت کے طور پر محسوس کیا جاسکے۔جان اسؤرٹ مل قومیت کی تعریف کو اس طرح بیان کرتا ہے کہ قومیت انسانوں کا ایک ایسا اجتماع ہے جو اپنے اندر مشترکہ ہمدردیوں کے سبب آپس میں متحد ہو اور یہ اتحاد دوسروں کے درمیان نہیں ہوتی اور جسکے سبب دوسروں کی نسبت آپس میں تعاون کرنے میں رضامند ہوتے ہیں اور رضامندانہ طور پر ایک حکومت کے اندر رہنا چاہتے ہیں اور اپنی حاکمیت چاہتے ہو۔ ان تمام تعریفوں کا مختصر یہ ہے کہ قومیت محبت و دوستی کا ایسا جذبہ ہے جو قوم میں اتحاد کا جذبہ پیدا کرتی ہے اور قوم کو احساس دلاتا ہے کہ وہ ایک ہے اور دوسروں سے مختلف اور یکتا ہے۔محبت اور دوستی کے جذبے اور دوسروں سے الگ ہونے کے تصور نے ہی قوم پرستی کو جنم دیا۔قوم پرستی کی بنیاد دراصل عقلی بنیادوں پر نہیں بلکہ جذبات پر ہوتی ہے اس لیئے ہٹلر جیسے رنماؤں نے قوم کے جذبات کو ابھار کر انیہں جنگ پر آمادہ کیا۔ہے۔نیشنل ازم کی تشکیل میں ان عناصر کا اہم کردار ہے جنھوں نے مختلف گروپوں جماعتوں برادریوں اور قبائل کو آپس میں متحد کرکے قوم پرستی کا جذبہ پیدا کیا کچھ مفکر ین جغرافیہ اور آب و ہوا اور کچھ زبان تاریخ ثقافت کو اسکی وجہ قرار دیتے ہیں۔اگر امریکہ کی جنگ آزادی کا مطالعہ کریں تو اس جنگ میں نیشنل ازم کا جذبہ کار فرما تھا جس نے قوم کو متحد کرکے آزادی کی جنگ کا حصہ بنایا۔فرانس کا انقلاب جس نے لوگوں کو شہنشاہت سے آزادی دلائی اور یہ لوگ یورپی حملوں کے خلاف متحد ہوئے۔ انقلاب فرانس میں ہی نیشنل ازم کا لفظ پہلی بار استعمال ہوااور 1830ء کے یورپی انقلاب میں اس لفظ کو دہرایا گیا۔کوہن نے قوم پرستی کے ابھار میں دو نقطہ نظر دیئے اسکے مطابق جہاں عوام کے نمائندے طاقتور تھے وہاں نیشنل ازم سیاسی و معاشی طاقت کے طور پر ابھرا جبکہ کمزور ملکوں میں کلچر کے ذریعے اس کا ابھار ہوا۔نیشنلزم کی اہمیت اسکے عناصر کی وجہ سے ہیں خود مختاری اتحاد اور شناخت یہی تینوں عناصر معاشرے کو ذہنی طور پر آمادہ کرتے ہیں کہ وہ ایک آزاد ملک و معاشرے کے لئے جدوجہد کریں اور وقت آنے پر قربانی دیں۔19ویں صدی میں نیشنل ازم نے قومی ریاستوں کی بنیاد رکھ کر ایک مثبت کردار ادا کیا نیشنل ازم نے یورپ پر اثر ڈالااور اس اثر نے افریقہ و ایشیا کے ممالک کو بھی متاثر کیا۔کولونیل دور میں ایشیا و افریقہ کے ملکوں میںآزادی کی تحریکیں ابھریں انکی بنیاد کلچرل نیشنل ازم تھی ان تحریکوں کا مقصد کولونیل ازم سے آزادی تھی اس لیے انہوں نے مغربی افکار کو چیلنج کیا اور اپنے کلچر کی تبلیغ کی جس نے عوام کے ذہنوں کو فتح کیا۔جدید دنیا نے قومی ریاست کی اہمیت کو بہت زیادہ بڑھایا ہے آج کی دنیا میں اقوام متحدہ کا رکن بننے کے لئے قومی ریاست کا ہونا ضروری ہے قومی ریاست اس صدی کی پیداوار ہے جب دنیا میں سرمایہ دارانہ نظام ترقی کررہاتھااسلئے ان ریاستوں کو منڈیوں کی تلاش تھی اور اسی تلاش نے سامراج کو پیدا کیا اور دنیا میں قبضے کا عمل شروع ہوا۔ دنیا کے طاقتور قوموں نے کمزور و نہتے ممالک پر قبضہ کرنا شروع کیا مقبوضہ ممالک کے کلچر اور روایات کو توڑ کر اپنی روایات و کلچر کو فروغ دیکر تصادم کا ماحول پیدا کیا اور مظلوموں کی شناخت کو پیچیدہ بنادیا۔مظلوموں نے قومی شناخت کے لئے اپنے عوام کی شعوری تربیت کرکے قومی وجود کا احساس دلایا اور ظالم سے خود کو الگ ظاہر کرکے قوم کو ایک پلیٹ فارم دیا اور جدوجہد کرنے کا پیغام دیا انہی قومی تحریکوں سے نئے ملک آزاد ہوئے لیکن ظالم و طاقتوروں نے انکی سرزمین کو تقسیم کرکے اپنے مفادات حاصل کئے انکی زبان کلچر کو علیحدہ خانوں میں بانٹ دیا گیا ۔مشرق وسطٰی میں اردن و اسرائیل خلیج فارس میں عرب امارات ہندوہستان کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا بلوچستان کے علاقے ایران، پاکستان اور افغانستان کو دیئے گئے افریقہ، کوریا اوریتنام کو بھی تقسیم کیا گیا۔لیکن سامراجی پالیسیوں نے آزادی کے بعد بھی ان ریاستوں میں اپنے حمایت یافتہ حکمرانوں کو بٹھاکر قومیت کا استحصال کیا اور نام نہاد قوم پرست حب الوطنی کا نعرہ لگاکر عوام کو ریاستوں سے جوڑ رہے ہیں۔ موجودہ دور میں قومی ریاستیں ملٹی نیشنل کمپنیوں کے پھیلاؤ سے خطرے میں ہے جو انکی طاقت کو ختم کررہی ہے۔ نیشنل ازم کی تاریخ سے پتہ چلتا ہے کہ اس کا کردار تاریخ میں اہم ہے یہ ایک موثر طاقت کے طور پر ابھرا اور اپنی قوت سے عثمانیہ سلطنت اور دیگر امپائر کا خاتمہ کردیا۔ قوم پرستی کی تاریخ سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے کہ اسکے لئے ایک قوت اور جدوجہد کی ضرورت ہے جو قوموں کو غفلت کی نیند سے جگادے مگر آج بھی دنیا قومی ریاستوں کی تشکیل میں تعصب کا شکار ہے انسانی حقوق کے چمپین ادارے اور ممالک سرمایہ داروں کے ہاتھوں یرغمال ہے بجائے کمزور قومی ریاستوں کی مدد کرنے کے بجائے ظالم ملکوں کو مدد کررہے ہیں اور انسانی جانوں کے ضیاع پر خاموش تماشائی کا
کردار ادا کررہے ہیں۔انسانی اداروں کو خضدار توتک میں اجتماعی قبریں، خواتین پر تیزاب پاشی ،بلوچ عوام کی مرضی کے بغیر سی پیک معاہدہ اور بلوچستان میں خونی آپریشن نظر نہیں آتی۔ اگر بلوچوں کو پاکستانی تسلط سے چھٹکارا پاناہے تو اس مقصد کے لئے کسی محرک کی تلاش سوائے جذبہ قومیت کے بالکل غلط ہے انگریز سرکار اور پاکستان نے بلوچوں کی سرزمین کو تقسیم کرکے سرداروں کی طاقت میں اضافہ کرکے بلوچ قوم کو قبائل میں تقسیم کردیاہے اور ان کا خاتمہ قوم پرستی ہی کرسکتا ہے۔ بلوچ کی نجات اسکی قومی آزادی ہے اور قومی آزادی کے لئے بلوچ عوام کا متحرک ہونا ضروری ہے اور اسکا اہم ہتھیار قوم پرستی ہے جس کے ذریعے عوامی جذبے کو ابھار کر انہیں جنگ آزادی کے لئے تیار کیا جاسکتا ہے۔انگریز سامراج اور پاکستانی سامراج نے سرداران بلوچستان کو طاقت و مراعات سے نواز کر اتنا مضبوط کردیا ہے کہ انہوں نے قوم کو مختلف قبائل میں تقسیم کرکے ٹکڑوں میں بانٹ دیا ہے۔آج کے پرآشوبی دور میں بلوچ سیاسی پارٹیوں پر بھاری ذمہداری عائد ہوتی ہے کہ وہ بلوچ قوم میں نیشنلزم کے جذبے کو ابھار کر قوم کو متحد کریں اتحاد ہی ہمیں قومی آزادی دلاسکتا ہے۔

تاریخ ساز

akbar-bugti-620x330

منظور بلوچ 
نواب صاحب ! 
کتنا عرصہ بیت چکا ہے جب آپ نے اپنے فیصلے کے مطابق اپنی شہادت کی راہ چنی ۔۔۔ لیکن آپ کے جانے کے بعد جو حالات رونما ہوئے ‘ ہو رہے ہیں وہ بڑے عجیب و غریب ہیں۔ 
لوگ شاید ۔۔۔ میری بات سے اتفاق نہ کریں ۔۔۔ لیکن بھلا تاریخ کو ہماری کیا پرواہ ۔۔۔ تاریخ تو انہی چیزوں کو محفوظ رکھتی ہے جن کی اہمیت ہو ۔۔۔ باقی سب کاٹھ کباڑ ۔۔۔ جی ہاں ۔۔۔ نواب صاحب ۔۔۔ آپ کے بعد ہم ۔۔۔ اور اکثریت کاٹھ کباڑ کی ہے۔
آپ کے وہ سارے دوست ‘ اقرباء ‘ عزیز ‘ آپ کی محفل میں شریک ہونے والے ‘ آپ سے سب فیض پانے والے ‘ آپ کا دم بھرنے والے ‘ سارے کے سارے ‘ اسی صف میں کھڑے ہیں ۔۔۔ جس میں قاتل بھی ہیں ‘ رہزن بھی ۔۔۔ 
مجھے یاد آتا ہے کہ جب آپ ڈیرہ بگٹی کی بجائے کوئٹہ میں ہوتے تھے تو آپ کے مہمان خانے کی رونق ہمیشہ دوبالا ہوتی تھی ۔۔۔ ہر طرح کے لوگ ۔۔۔ وہاں آتے تھے ۔۔۔ کوئی خود کو سیاسی رہنماء کہلواتا تھا ‘ کوئی آپ کا جانثار ہوتا تھا ۔۔۔ کوئی صحافی کہلاتا تھا کسی کو یہ زعم تھا کہ وہ دانش ور ہے ۔۔۔ 
لیکن نواب صاحب ۔۔۔ آپ نے مزاحمت کا فیصلہ کر کے کچھ اچھا نہیں کیا ۔۔۔ کتنے صاحب دستار لوگ ہیں ‘ جو آج سر بچانے کی فکر میں دستار کھو بیٹھے ہیں ۔۔۔ کتنے آپ کے بزم کے لوگ ہیں ‘ جو رات کی سیاہی کے ہمسفر بنے ۔۔۔ کچھ کے چہروں پر بھی یہ سیاہی نظر آتی ہے ۔۔۔ 
اب آپ کے مہمان خانے کی وہ رونق نہیں رہی ۔۔۔ درست ہے کہ مہمان خانے ‘ اپنے میزبان کی وجہ سے جانے پہچانے جانتے ہیں نواب صاحب ۔۔۔۔۔۔ آپ نے ستم ڈھایا ۔۔۔ آپ کے سارے نام لیوا ۔۔۔ آج صف قاتلوں میں جگہ ڈھونڈتے پھر رہے ہیں ۔۔۔ 
آپ جہاندیدہ تھے ‘ لوگوں کی پہچان بھی تھی لیکن پھر بھی کچھ لوگوں نے اپنے چہروں پر اتنے چہرے سجا رکھے تھے ۔۔۔ کہ ان کے اصلی چہرے اس وقت رونما ہوئے ۔۔۔ جب آپ شہادت کے منصب پر اپنا مقام حاصل کر چکے تھے ۔۔۔ بہت آسانی کے ساتھ ۔۔۔ آپ کے ’’ دوستوں ‘‘ نے وہیں کی راہ لی ‘ جہاں سے ان کا خمیر اٹھاتھا کسی کو سول ایوارڈ ملا ‘ کسی نے عدل کے ایوانوں میں مناصب ہتھیائے ‘ کوئی آپ کے نام کی مالا جینے لگا ۔۔۔ 
جو آپ کی مہربانیوں سے ’’بڑے ‘‘ آدمی بنے تھے ‘ پارلیمنٹ میں دھواں دھار تقاریر کرتے تھے یا وہ جلسوں میں اچھے اچھے سیاسی رہنما?ں کو آنکھیں دکھاتے تھے ایسی باتیں کرتے تھے ‘ گویا وہ چی گویرا کے رشتہ دار ہوں ۔۔۔ لیکن الحمد اللہ ۔۔۔ سارے خیر خیریت سے ہیں۔ مزے کر رہے ہیں۔ پیسے کما رہے ہیں۔ دنیاداری کر رہے ہیں ان میں سے اکثریت کو لوگ بھول چکے ہیں لیکن وہ بیچار ے اب بھی کام کر رہے ہیں ۔۔۔ 
نواب صاحب ! آپ نے کمال کر دیا ۔۔۔ وہ سارے ’’ایسے ویسے ‘‘ لوگ ‘ جن کو آپ کی زندگی میں نظریں اٹھانے کی جرات نہ تھی ‘ وہ آج آپ کی قوم کو دھمکیاں دیتے ہیں ۔۔۔ ’’بیچارے لوگ ‘ ‘جو آپ کے لہو سے آج بھی رزق کما رہے ہیں ‘ ان کے ہاں ‘ آپ کے ہی بزم کے لوگ ‘ اسی طرح ملنے جاتے ہیں ۔۔۔ جس طرح کبھی وہ آپ سے ملنے آیا کرتے تھے۔ 
وہ سارے لکھنے والے ‘ صحافی وغیرہ وغیرہ ۔۔۔ اب آپ کو بھول چکے ہیں ۔۔۔ لیکن عام آدمی ‘ محکوم اقوام آپ کو نہیں بھولے آپ ان کے ہیرو ہیں ۔۔۔ تاقیامت رہیں گے .نواب صاحب ۔۔۔ آپ کو معلوم نہ ہو ۔۔۔ کہ آپ کے بعد خیبرپختونخوا میں ایک طالب علم مشال خان کی صرف اس لئے جان لی گئی کیونکہ اس کے ہاسٹل کے کمرے میں آپ کی تصویر بھی تھی ۔۔۔ اور حکمران ‘ اشرافیہ کیلئے یہ بڑی خطرناک بات تھی کہ باچا خان کے عدم تشدد کے فلسفے کے پرچار کرنے والوں میں کوئی آپ کا نام لیوا جنم لے۔
آپ کی شہادت کے بعد ۔۔۔ جس طرح سے سندھ متاثر ہوا تھا ۔۔۔ اس کے بدلے میں 2008ء کے انتخابات میں پیپلز پارٹی کو اقتدار ملا ۔۔۔ ’’بیچارے لوگ ‘‘ کوئی ایم این اے بنا ‘ کوئی وزیراعلیٰ کے منصب پر پہنچا ۔۔۔ لوگوں میں لطیفہ مشہور ہے کہ سائیکل چور بھی وزیر بنے ۔۔۔ 
بہر حال ۔۔۔ زرداری اور پیپلز پارٹی نے خوب مزے کئے ۔۔۔ گو کہ اسٹیبلشمنٹ کی جانب سے لعنت ملامت کا سلسلہ بھی برابر جاری رہا ۔۔۔ نواب صاحب ۔۔۔ آپ کے لہو نے جن کو بلوچستان میں اقتدار بخشا ۔۔۔ وہ ’’بیچارے ‘‘ تو اندراج ’’سکیم ‘‘ کا شکار ہوئے ۔۔۔ اور پھر ان کی جگہ ۔۔۔ ’’قوم پرست ‘‘ نامی اجنبی لوگوں نے لے لی۔ 
یہ اجنبی ۔۔۔ جنہیں قوم پرستوں کے نام سے پہچانا جاتا ہے سنا ہے کہ کسی زمانے میں آپ کے بھی بہت قریب تھے ۔۔۔ آپ کی سربراہی میں 1988ء میں انہوں نے بھی انتخابات میں حصہ تھا اور کامیاب ہوئے تھے اور میر بزنجو کو شکست دی تھی۔
عجیب معاملہ ہے کہ ان کو اقتدار آپ کی مزاحمت کے نتیجے میں ملا ۔۔۔ لیکن وہ آج کل وفاداری میر بزنجو سے ظاہر کرر ہے ہیں نواب صاحب ۔۔۔ آپ کی شہادت نے ہمیں بھی کہیں کا نہیں چھوڑا ۔۔۔ یہ جو بلوچستان میں چھوٹا سا ایک طبقہ ’’ لکھنے والوں ‘‘کا ہے ان کی حالت بھی دیدنی ہے ۔۔۔ 
’’بیچارے ‘‘ اب میر بزنجو کے صد سالہ جشن منا رہے ہیں ۔۔۔ کبھی ان کو میر گل خان نصیر کی یاد ستاتی ہے ۔۔۔ کبھی وہ یوسف عزیز مگسی کی شخصیت کے سائے میں پناہ ڈھونڈنے لگتے ہیں۔ 
دھوپ کی ایسی تمازت ہے کہ موم سے بنے چہرے پگھل رہے ہیں ۔۔۔ غالباً عطاء شاد نے ہی کہا تھا کہ ۔۔۔
دھوپ کی تمازت تھی موم کے مکانوں پر 
اور تم بھی لے آئے سائبان شیشے کا 
نواب صاحب ۔۔۔ آپ نے مزاحمت اور شہادت کا فیصلہ کر کے کچھ بھی اچھا نہیں کیا گو کہ آپ کے اس فیصلے سے یاروں کے دسترخواں پھیل گئے ہیں لیکن ان کے چہرون پر ہوائیاں سی اڑ رہی ہیں۔
اور ہاں ۔۔۔ وہ آمر ۔۔۔ پرویز مشرف ۔۔۔ آج کل ۔۔۔ جہاں جاتا ہے ۔۔۔ ’’عزت افزائی ‘‘ کا شکار ہوتا ہے ۔۔۔ 
اور نواز شریف بھی ۔۔۔ ایک بار پھر اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھوں خوار نظر آ رہا ہے ۔۔۔ اور یہاں کے نیم پڑھے لکھے ’’سیاسی ‘‘ آج کل عمران خان؂
کی گن گا رہے ہیں یہ سارے پڑھے لکھے ’’بونے ‘‘ سیاسی عمل کی بجائے ری ایکشن کی پیداوار ہیںآج پاکستان بے پناہ بحرانات سے دوچار ہے ۔۔۔ نواز شریف کی رخصتی ‘ عمران خان کے ڈھول تاشے ‘ ٹرمپ کے بیانات ‘ آئے روز ’’سیاسی ‘‘ مسائل ۔۔۔ بڑھ رہے ہیں ۔۔۔ اور لوگ یہ کہنے سے قاصر ہیں کہ اسلام آباد جن بحرانات سے دوچار ہے ان کی جڑیں بلوچستان اور بلوچ قومی جدوجہد سے وابستہ ہیں۔ 
اگر پرویز مشرف بلوچستان میں آگ نہ لگاتے ‘ نواب مری کو گرفتار نہ کرتے ‘ آپ کے خلاف فوجی آپریشن نہ کرتے تو شاید تاریخ بہت مختلف ہوتی ۔۔۔ 
نواب صاحب ۔۔۔ آپ کا شکریہ ۔۔۔ کہ آپ نے ہمیں لوگوں کی اصلیت سے واقف کر دیا ۔۔۔ نام نہاد دانشور ۔۔۔ نام نہاد صحافی ۔۔۔ نام نہاد سیاست دان ۔۔۔ نام نہاد سیاسی جماعتیں ۔۔۔ نام نہاد قوم پرست ۔۔۔ سارے ایک ہی حمام میں ننگے دکھائی دے رہے ہیں ۔۔۔ اور اندھے لوگوں کو بھی ان کی اصلیت نظر آ رہی ہے 
اس تناظر میں دیکھیں تو ۔۔۔ 
آپ ہی ۔۔۔ ایک تاریخ ساز نظر آتے ہیں ۔۔۔ جس نے جعلی معاشرے کی بنیادوں کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔
اگست کا مہینہ خونی ہو چکا ہے ۔۔۔ اور اس خونی مہینے میں یار لوگوں کی سیاست ‘ اشتہار بازی ‘ ہورڈنگز ۔۔۔ چمچ گری ۔۔۔ سبھی کچھ آئینہ ہو چکا ہے۔ 
نواب صاحب ۔۔۔ موقع ملا ۔۔۔ تو آئندہ بھی آپ سے کچھ کچھ باتیں ہوتی رہیں گی۔

بلوچ ریاست کے دفاع میں ناکامی کی وجوہات

571293d539bce

حمید بلوچ 
1839 ء تا 1945ء دنیا کی تاریخ کا وہ سیاہ دور ہے جب سامراجی قوتوں نے ایک دوسرے کو نیچا دکھانے اور دنیا میں اپنی حکمرانی قائم کرنے کے لئے انسانی اقدار کی دھجیاں اڑاکر رکھ دیے تھے۔ البتہ اسی جنگ کی تباہ کاریوں نے برطانیہ جیسی طاقت کو سخت نقصان سے دوچار کرکے اسے مجبور کیا کہ وہ اس نازک صورتحال میں اپنی نو آبادیوں سے نکل جائے۔ لیکن اپنے’’ تقسیم کرو اور حکومت کرو‘‘ کی پالیسی کے تحت اْس نے ہندوہستان کی تقسیم کا بھی اعلان کردیا تاکہ ایک ایسا ملک اپنے ایجنٹوں کے ذریعے وجود میں لایا جاسکے جو مستقبل قریب میں برطانوی مفادات کی چوکیداری اِس خطے میں کرتا رہے اور اس سلسلے کا پہلا کام سر اسٹیفورڈ کرپس کی سربراہی میں ایک مشن کے ذریعے انجام دیا گیا۔ لیکن اس برطانوی کاوش کو کانگریس نے ناکام بنایا اسکے بعد بھی انکی کاوشیں جاری رہیں اور بالاخر 3جون 1947 کو انگریزوں نے ہندوہستان کی تقسیم کا اعلان کردیا اور اعلان کیا کہ 15 اگست کو ان ملکوں کو اقتدار بھی منتقل کیا جائے گا ۔ اسکے بعد قلات کی بھی آزادی کا اعلان کیا گیا اور 4 اگست 1947 کو وایسرائے ہند جناح اور خان کے درمیان ملاقات کے بعد بلوچستان کی آزادی کا اعلان آل انڈیا ریڈیو دہلی سے نشر کیا گیا اس آزادی کو پاکستانی حکمران جناح نے بھی تسلیم کیا۔ 1839 ء میں انگریز کا حملہ، 1893 ء میں مکمل قبضہ، 1947 ء میں آزادی اور صرف 9 ماہ کے عرصے میں ایک اور سامراجی چوکیدار کا قبضہ، اور اس قبضے کے خلاف بغاوت اور بغاوت کی ناکامی کئی سوالاات کو جنم دیتی ہے کہ کیوں بلوچ اپنی آزادی کا دفاع کرنے میں ناکام ہوئے اور کیوں انکی پاکستان کے خلاف بغاوت چندمہینوں کے بعد دم توڑ گئی یہ ایک ایسا سوال ہے جس پر آج بھی بحث جاری ہے اور ان بحثوں میں اکثر ایک سوال دہرایا جاتا ہے کہ اگر بلوچ اپنی آزادی حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے تو اپنی ریاست کا دفاع کرسکیں گے یا ایک مرتبہ پھر ایک اور ریاست ان پر قابض ہوجائے گا ان سوالوں کا جواب تلاش کرنے کے لئے ہمیں تاریخی پس منظر میں جانا ہوگا تاکہ ماضی میں ہوئی ناکامیوں کا سائنسی بنیادوں پر تجزیہ کرنے کے بعد مستقبل کے لئے لائحہ عمل تیار کیا جاسکے تاکہ ہماری آزادی کو دنیا کی کوئی دوسری طاقت سلب کرنے کی کوشش نہ کرسکیں۔آزادی کے اعلان کے بعد 15 اگست 1947ء کو سربراہ بلوچ ریاست میر احمد یار خان نے عوامی اجتماع سے خطاب کیا اور اپنے نظریات اور مستقبل کی منصوبہ بندی کے لئے عوام کی تعاون کی درخواست کی ۔ حکومت سنبھالنے کے کچھ دن بعد ریاست کاآئین بنایا گیا، آئین کے مطابق ملک میں عام انتخابات ہوئے، اسمبلیوں کا قیام عمل میں لایا گیا تاکہ ملک کے لئے قانون سازی کی جاسکے ،ریاستی انتظام چلانے کے لئے وزرا کی کونسل بنائی گئی، جس کا سربراہ وزیر اعظم ہوتا تھا اور جن کی تقرری کا اختیار سربراہ ریاست کو بنایا گیا، اختیارات اور طاقت کا مرکز خان تھا ۔خان نے اپنے تقریر میں اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ تمام بلوچوں کو متحد کریں گے اور اپنی آزادی کے دفاع کے لئے ہر طرح کی قربانیوں کے لئے ہمہ وقت تیار رہیں گے۔لیکن آزادی حاصل کرنے کے کچھ مہینوں بعدبلوچ ریاست کو مختلف مسائلوں نے گھیر لیا کہ وہ مستقبل میں کسی دوسرے ملک کے ساتھ الحاق کریں گے یا اپنی آزاد حیثیت کو برقرار رکھے گے۔ اس اہم مسئلے کو حل کرنے کے لئے ریاست قلات نے 12 دسمبر کو الحاق حوالے ایوان زیریں کا اجلاس طلب کیا گیا اور اسکے بعد فروری کو ایوان بالا کا اجلاس طلب کیا گیا تاکہ الحاق حوالے کسی نتیجے پر پہنچا جاسکے ۔پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں نے الحاق کو سرے سے ہی مسترد کردیا اور قرداد پیش کیا کہ ہم پاکستان کے ساتھ دوستانہ معاہدہ کریں گے لیکن الحاق نہیں کسی صورت نہیں کریں گے۔ وزیراعظم قلات قرداد کی کاپیاں لیکر جناح سے ملنے کراچی گئے تاکہ مستجار جگہوں پر اور الحاق حوالے بات کی جاسکیں لیکن جناح نے صرف الحاق کے مطالبے کو ہی دہرایا۔ وزیر اعظم قلات کا دورہ مکمل طور پر ناکام ہوا اور اس ناکامی نے خان کو سخت مشکلات سے دوچار کردیاتھا ایک طرف عوام جو الحاق کے خلاف تھے اور دوسری طرف پاکستان کا دھمکی آمیز رویہ اور اسکی سب سے بڑی وجہ پاکستانی تنخواہ خور وزیر اعظم محمد اسلم خان تھا جس نے اپنی ڈبل پالیسی کے ذریعے خان اور ریاست قلات کے لئے سخت مشکلات کھڑی کردی تھی جس کا اعتراف خان خود بھی کرتا ہے خان کہتے ہیں کہ میری مشکلات اس وقت کم 
ہوئی جب مجھے پتہ چلا کہ جناح سبی تشریف لارہے ہیں اور میں ساری صورتحال کو ان کے سامنے رکھوں گا اور ان کا صیح حل نکل آ ئے گا۔ جب 11 فروری 48 19 ء کو جناح سبی تشریف لائے اور خان سے ملاقات میں جناح نے پھر الحاق کا مشورہ دیا دوسری ملاقات میں انہوں نے گورنمنٹ آف انڈیا ایکٹ اور آزادی ایکٹ 1935 ء کی کاپیاں خان کو دی ۔ بقول خان کہ اس رویئے نے مجھے دماغی طور پر سخت نڈھال کردیا میں بیمار پڑگیا ۔جناح کی سازش کے خلاف خان نے پاکستانی سیکرٹری خارجہ سے احتجاج کیا لیکن اس احتجاج کا کچھ بھی فائدہ 
نہیں ہوا۔ 8 مارچ 1948ء کو جناح نے خط کے ذریعے خان کو پیغام دیا کہ اب میں ذاتی حوالے سے قلات کے معاملے کو آگے نہیں بڑھاوں گا بلکہ اب اس کا فیصلہ وزارت خارجہ پاکستان حل کریں گے۔ پاکستان کے اس اقدام سے ظاہر ہوتا ہے کہ اب حکومت پاکستان قلات کے خلاف جارحانہ اقدام اٹھانے کا فیصلہ کرچکی ہے اور انکی نیت کا بھی اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔ اس اقدام کے بعدبلوچ ریاست کے خلاف سازشوں کا جال تیار کیا گیا جس میں خان کو پھنسا کر آسانی سے بلوچستان پر قبضہ کیا جاسکے۔خاران اور بیلہ کے سردار خان کے مخالف تھے، اب اس سازش میں مکران کے نواب بائیان گچکی کو بھی شامل کیا گیا، بائیان گچکی علاج کی غرض سے کراچی گئے اور وہاں شئے عمر کے ذریعے خفیہ طور پر پاکستانی اداروں کے ساتھ ملکر خان کے خلاف باتیں کیں اور ان پر الزام لگایا کہ خان ٹیکس لیتا ہے اور اپنے عوام میں جناح کے خلاف پروپگنڈہ کرتا ہے۔ اگر حکومت پاکستان ہمارے ساتھ الحاق نہیں کرتا تو ہم کوئی اور قدم اٹھانے پر مجبور ہونگے ۔بائیان کی ملاقات کے بعد کابینہ کا ایمرجنسی اجلاس بلایا گیا ۔جس میں فیصلہ ہوا کہ ان ریاستوں کے ساتھ الحاق کو منظور کیا جائے تاکہ خان پر دباو ڈال کر الحاق پر مجبور کیا جاسکے۔ ریاست پاکستان نے 17 مارچ 1948ء کو مکران بیلہ اور خاران کے ساتھ الحاق کرکے ایک غیر آئینی قدم اٹھایا۔ اس خبر کو وزارت خارجہ پاکستان نے اخباری بیان کے ذریعے 18 مارچ 1948 ء کو تصدیق کی کہ خاران، مکران اور لسبیلہ کے الحاق کے بعد 
قلات اپنے آدھے حصے سے محروم ہوگیا۔اسکے بعد انہوں نے دیگر سرداروں کے ساتھ رابطے کئے تاکہ انہیں رشوت دیکر اپنے ساتھ ملا کر خان پر دباو بڑھایا جاسکے ۔یہ سازشیں جاری تھی کہ 27مارچ 1948ء کو آل انڈیا ریڈیو سے وی پی مینن کا ایک بیان جاری ہوا جس میں انہوں نے کہا کہ ’’ خان نے اپنا سفارتی نمائندہ الحاق کے لئے ہندوہستان بھیجا ہے‘‘ اسی رات پاکستانی فوج نے قلات پر چڑھائی کرکے خان سے بندوق کی نوک پر الحاق نامے پر دستخط کروائیں۔اس جبری قبضے کے خلاف عوامی ریلیوں کا آغاز ہوا، عوامی طوفان کو کنٹرول کرنے کے لئے فوج کو الرٹ کردیاگیا، قلات اسٹیٹ پارٹی پر پابندی عائد کردی گئی ،لیڈران گرفتار کردئے گئے ،قلات کے معاملات چلانے کے لئے 15 اپریل 1948 ء کو پاکستانی ریاست نے پولیٹیکل ایجنٹ کا تقرر کیا اور پورے قلات کا انتظام اپنے ہاتھوں میں لے لیا۔ اس غیر آئینی و غیر جمہوری رو یے نے پورے بلوچستان میں بے چینی اور مایوسی کو جنم دیا اس نازک صورتحال میں خان قلات کے بھائی پرنس کریم آغا خان نے قومی تحریک آزادی کی قیادت کا فیصلہ کرلیا۔آغا عبدالکریم اپنے ساتھیوں کے ہمراہ سرلٹھ کے مقام پر جمع ہوئے۔ لیکن اس مقام پر افغان حکومت نے آپکو پیغام دیا کہ ہم اپنے سرحد سے آپکو پاکستان کے خلاف کاروائی کی اجازت نہیں دینگے آپ ایک پناہ گزین کی حیثیت سے افغان علاقوں میں ایک پناہ گزین کی حیثیت سے آجائیں ہم آپکو حق دینگے۔ لیکن ہیاں بھی کچھ ایسے لوگ موجود تھے جن کے رابطے پولیٹیکل ایجنٹ کے ساتھ تھے میجر بیگ نے مختلف حلیے بہانے سے آپکو وہاں جانے سے روکا اور دوسری طرف غوث بخش بزنجو نے بھی مسلح جدوجہد کی مخالفت کی۔ اندرونی و بیرونی امداد نہ ملنے کی وجہ سے مجبور ہوکر پرنس کریم قلات آئے جہاں قران پر ہاتھ رکھ کر معاہدے ہوئے ۔لیکن پاکستانی فوج نے معاہدے کی خلاف ورزی کرکے پرنس اور اسکے ساتھیوں پر حملہ کرکے انہیں گرفتار کرلیا ان پر مقدمات چلائے گئے ۔27نومبر 1948ء کو پرنس اور اسکے ساتھیوں کو مختلف سزائیں اور جرمانے کئے گئے پرنس اور ساتھیوں کی گرفتاری نے بلوچوں کی تحریک کو شدید نقصان سے دوچار کردیا اور یہ تحریک اپنے اختتام کو پہنچی اور بلوچ معاشرے میں ایک مرتبہ پھر مایوسی اور ناامیدی نے جنم لیا ۔یہ بلوچ قومی آزادی قبضہ بغاوت کی ایک مختصر تاریخ تھی جن کے مطالعے سے پتہ چلتاہے کہ بلوچ کیوں اپنے آزادی کے دفاع میں ناکام ہوئے اور کس طرح آسانی سے پاکستانی فوج نے قومی تحریک آزادی کو کچل دیا۔ 21 ویں صدی میں یہ سوال بلوچ قوم کے لئے آج بھی اہمیت رکھتا ہے کہ ناکامی کی وجوہات کیا تھی اگر اس سوال کا جواب نہ ڈھونڈا گیا اور ماضی کی غلطیوں کا سائنسی بنیادوں پر تجزیہ نہیں کیا گیا تو ہماری مستقبل کی آزادی بھی ظالم ریاستیں سلب کرسکتی ہے ۔ میرے رائے کے مطابق بلوچ مندرجہ ذیل وجوہات کی بنا پر اپنے آزادی کا دفاع کرنے میں.ناکام ہوئے ۔
1.موروثی سرداروں کی طاقت.
بلوچ ریاست دفاع میں ناکامی کی اہم وجہ سرداروں کی طاقت تھی۔ کیونکہ یہ سردار اپنے مفادات کے لئے کبھی برطانیہ سرکار کے ساتھ اور کبھی پاکستانی ریاستوں کے ساتھ خان آف قلات کے خلاف سازشوں میں مصروف عمل رہے۔ انہی سرداروں نے 1839 ء میں نواب محراب خان کا ساتھ دینے کے بجائے چپ سادھ لی تھی اور یہ وہ سردار تھے جب رابرٹ سنڈیمن دربار سبی میں آئے تھے تو ایک سردار کو چھوڑ کر باقی تمام سردار سنڈیمن کے ساتھ تھے۔ ان سرداروں کو ہروقت اپنا ذاتی مفاد عزیز تھا اور یہ اپنے مفادات کو مقدس سمجھتے تھے ۔ رابرٹ سنڈیمن نے جب بلوچ سرزمین پر قدم رکھا تو اس نے وہاں کے سرداروں کی طاقت میں اضافہ کیا انہیں مراعات و سہولیات دی تاکہ انگریز سرکار انہیں اپنے مفاد کے لئے استعمال کرسکیں ۔سنڈیمن نظام کے نفاذ نے سرداروں کو سخت طاقتور بنادیا اور ان سرداروں نے اپنے طاقت و اختیارات کا ناجائز فائدہ اٹھایا عوام کو انہوں نے اپنا غلام بنایا یہ وہ سردار تھے جو ترقی و خوشحالی سے نفرت کرتے تھے اسلئے انہوں نے اپنے عوام کو ترقی سے دور رکھ کر ہمیشہ اپنے مفادات کے لئے استعمال کیا ۔ جب ریاست پاکستان نے قلات پر جبری قبضہ کیا تو اس قبضے کو آسان بنانے میں بھی ان موروثی سرداروں کا بڑا ہاتھ تھا جنھوں نے پاکستانی حکمرانوں سے سازباز کرکے الحاق کیا اور خان کے خلاف ساشوں میں مصروف عمل رہے۔ بلوچ قومی تحریک آزادی کے خلاف انہوں نے ہمیشہ طاقتور ملکوں کا ساتھ دیکر اپنے سرزمین سے غداری کی اور اس تحریک کی ناکامی میں اور اسکے دفاع میں ناکامی کی اہم وجہ سرداروں کی طاقت تھی جنھوں نے عوام کو تحریک آزادی سے دور ر رکھنے کی ہر ممکن کوشش کی ۔
2.تعلیم سے دوری.
بلوچ ریاست کے دفاع میں ناکامی کی دوسری اہم وجہ تعلیم سے دوری تھا۔ نیلسن منڈیلا کہتے ہیں کہ کسی ملک کی ترقی میں تعلیم ایک اہم کردار کرتا ہے لیکن بدقسمتی سے بلوچ عوام کو تعلیم سے ہمیشہ دور رکھا گیا اور تعلیم کو سردار کے گھر کی لونڈی ہر طاقتور نے بنایا۔ ڈاکٹر عنایت بلوچ اپنی کتاب ” بلوچستان کا مسئلہ” کے آرٹیکل گرہن آزادی میں لکھتے ہیں کہ قومی تحریک کے ناکامی کی سب سے بڑی وجہ قومی تعمیر کے لئے ایک ترقی پسند سماج کی ناپیدی تھی سرداروں نے جدید اداروں اور اصلاحات کی مخالفت کی 1929 ء سے لیکر 1948 ء تک کوئی کالج یونیورسٹی قائم نہیں کی گئی۔ لیکن پہلے بلوچ قوم کو برطانیہ نے سرداروں کے ذریعے تعلیم سے دور رکھا اور اسکے بعد سرداروں نے مسلم لیگ کے جھنڈے تلے بلوچ قوم کو علم کی روشنی سے دور رکھا تاکہ وہ شعور و زانت کی طاقت سے محروم ہوکر اپنے غلامی کو مزید طول دیں ۔ 
3.خواتین کی تحریک میں عدم شرکت۔
ریاست قلات کی آزادی کے دفاع میں ناکامی کی ایک اہم وجہ عورتوں کی انتظامی امور اور تحریک آزادی میں عدم شمولیت تھی ۔ جب انگریز سرکار نے قلات کی آزادی کا اعلان کیا تو آئین کے مطابق اسمبلیاں بنائی گئی لیکن ان اسمبلیوں میں عورت کے لئے کوئی بھی نشست مختص نہیں کی گئی تھی۔ اسکے علاوہ پرنس کریم کی شروع کردہ بغاوت میں بھی کسی خواتین کا ذکر نہیں ملتا ہے۔ اگر ہم دنیا کی تحریک آزادیوں کا مطالعہ کرتے ہیں تو ان تحریکوں میں عورتوں کا 50 فیصد کردار نظر آتاہے ۔لیکن بنیادی بلوچ تحریک میں عورت کہیں بھی نظر نہیں آئی جو تحریک کی ناکامی کی بڑی وجوہات میں شامل ہے۔ بلوچ سماج میں عورت کا ایک قابل ذکر کردار ملتا ہے کہ عورت جرگوں میں فیصلے کرتی نظر آتی تھی جنگ کے میدان میں عورت نظر آتی تھی، لیکن جب اس سرزمین پر انگریز نے قبضہ جمایا سنڈیمن نظام کے ذریعے بلوچ سماج میں عورتوں کے کردار کو ختم کردیا گیا اور اسی قبضہ گیر کے نظام نے بلوچ سماج میں کاروکاری جیسی اصطلاحات کو پرموٹ کیا۔ اس لئے عورت کی سماجی، تعلیمی ،سیاسی و معاشی نظام میں کردار ختم ہوگیا اور وہ گھر کی چار دیواری کی زینت بن گئی۔ 
4. کمزور ادارے۔
ریاست قلات کی ناکامی کی ایک وجہ ریاست میں مضبوط اداروں کا نہ ہونا تھا نہ ہی ریاست کے پاس دفاعی ادارے موجود تھے۔ جو کسی ناخوشگوار حالات میں ملک کے دفاع کے فرائض سر انجام دیتے ۔سنڈیمن نظام کی وجہ سے سرداروں کے پاس باقاعدہ لیویز کی شکل میں فوج موجود تھی لیکن ریاست کے پاس باقاعدہ ریگولر آرمی موجود نہیں تھی جو پاکستان آرمی کے خلاف جنگ لڑتی اور انہیں اپنے سرزمین سے نکال دیتی جب پرنس کریم نے جنگ کا اعلان کیا تو اسوقت بھی کچھ قبائل کے لوگ ان کے ہمراہ تھے۔ 
5. خان سیاسی لیڈر سے زیادہ مذہبی رہنما۔
ناکامی کی ایک وجہ خان سیاست کے داؤ پیج سے عاری ایک حکمران تھا وہ ایک سیاسی لیڈر سے زیادہ مذہبی رہنما لگتا تھا۔ میر گل خان نصیر تاریخ بلوچستان میں خان کے متعلق کہتے ہیں کہ خان کے سیاسی نظریات میں تضاد پایا جاتا ہے ایک طرف وہ قومپرستی کے علمبردار اور دوسری طرف ایک خالص مذہبی ریاست کے داعی ہیں۔ وہ قومی اور مذہبی حکومت میں کوئی فرق نہیں کرتے جو انکے کردار میں پختگی کی کمی کو ظاہر کرتی ہے۔ اس لئے وہ اپنے لئے کوئی راہ کا انتخاب نہیں کرسکے تھے ۔ انہوں نے 15 اگست کی تقریر میں بھی واضح طور پر کہا کہ وہ ملک میں اسلامی دستور اور شریعت کے لئے جدوجہد کرینگے اور آئین میں جو پابندیاں دوسرے لوگوں پر تھی علماء پر ان کا کوئی اطلاق نہیں ہوتا تھا اس لئے بلوچ سماج جو اپنے خان کو فوجی جرنیل کی حیثیت سے دیکھنا چاہتے تھے مذہبی لیڈر کی حیثیت سے نہیں۔ اس لئے عوام نے انکے نیم مذہبی اور نیم قومی رحجانات کو قبول نہیں کیا اور خان نے اپنے پروگرام کو مکمل کرنے کے لئے غیروں کو اپنا سمجھا۔ جنہوں نے ان کے اقتدار کو ختم کرکے اقتدار اپنے لوگوں کو منتقل کردیا۔ 
6.غیروں پر انحصار ۔
کہتے ہیں کہ دنیا کی سیاست قومی مفادات کے تحت چلتی ہے اور دنیا کا ہر ملک اپنے مفادات کو مدنظر رکھ کر خارجہ پالیسی بناتی ہے۔ اور انہی مفادات کو مدنظر رکھ کر اپنے تعلقات بناتے ہیں۔ لیکن خان آف قلات سیاست کے ان مفروضوں سے عاری ایک کمزور شخص تھا جس نے اپنے ریاست کا انتظام کے ایک ایسے ملک کے تنخواہ خور ملازم کے ہاتھ میں دیا تھا جو ہمیشہ دوسروں کے ٹکڑوں پر پلنے کا عادی ہے۔ اور اسی وزیر اعظم نے خان کو ایسے پھنسا دیا تھا کہ اس مشکل سے نکلنا خان کے بس کی بات نہیں تھی۔ اسکے علاوہ وزیر خارجہ ڈی وائی فل جو برطانوی نژاد تھا ۔ وہ ڈی وائی فل ہی تھا جس نے خان کو مزاحمت کرنے سے روکا اسکے علاوہ جب پرنس کریم نے بغاوت شروع کی تو اس نے اپنے عوام پر اعتماد کرنے کے بجائے روس اور افغانستان کی طرف نظریں گھمائیں جنھوں نے مدد سے انکار کردیا اور وہ مجبور ہوکر واپس قلات آئے اور گرفتار کردئے گئے اور ان کی گرفتاری کے بعد قومی تحریک بھی دم توڑ گئی۔ 
7.فیصلہ کرنے سے عاری لیڈرز۔
ایک لیڈر ہی قوم کی کشتی کو طوفانوں اور مشکلات سے نکال کر کنارے پر لے جاتا ہے۔ لیکن بلوچ لیڈر ان صلاحیتوں سے عاری تھے ۔ان میں مشکل وقت میں فیصلہ کرنے کی طاقت نہیں تھی اس لئے پاکستان نے بزور طاقت قلات پر حملہ کردیا اگر اسوقت خان جنگ کا فیصلہ کرلیتا تو آج یہ صورتحال پیش نہیںآتی۔ 
8.مرکز اور ریاستوں میں ہم آہنگی کا نہ ہونا۔
دفاع میں ناکامی کی ایک وجہ قلات اور اسکے ملحقہ ریاستوں میں رابطوں کا فقدان تھا خاران اور بیلہ کے حکمران ہمیشہ خان کے خلاف بغاوتوں کی کوشش میں مصروف تھے ۔وہ پاکستان کے ساتھ الحاق پر زور دے رہے تھے اسکے بعد انکے ساتھ مکران کا نواب بھی شامل ہوگیا مرکز کا صوبوں سے رابطہ وتعلقات ہی ریاست کو مضبوط کرتا ہے لیکن ہیاں مکمل انڈر اسٹینڈنگ نہ ہونے کی وجہ سے قلات پاکستان کے قبضے میں چلا گیا۔ 
برطانوی و پاکستانی سازش ۔
ریاست قلات اپنے آزادی کے دفاع میں اس لئے بھی ناکام ہوئی کہ پاکستان اور برطانیہ نے قلات کی آزاد حیثیت کو کبھی بھی دل سے تسلیم نہیں کیا وہ ہر وقت موقع کی تلاش میں تھے کہ مناسب موقع ملتے ہی قلات پر قبضہ کیا جاسکے۔ انہی سازشوں کی وجہ سے ہی ریاست پاکستان نے قلات پر ہلہ بول دیا اور زبردستی بندوق کی نوک پر خان سے الحاق نامے پر دستخط کروائے۔ برطانیہ نے ہمیشہ بلوچستان کو ہندوہستانی ریاست کے طور پر دیکھا اور اپنے اقتدار کے خاتمے کے بعد بھی قلات کی آزاد حیثیت کی مخالفت کرتا رہا۔ شاہی نمائندے نے لارڈ ماونٹ بیٹن نے کو اس خطرے سے بھی آگاہ کیا برطانیہ کو یہ بھی ڈر تھا کہ کہیں قلات ریاست سویت یونین کے ساتھ تعلقات قائم نہ کریں۔ اسلئے اسکی کوشش تھی کہ ریاست قلات پاکستان کے ساتھ الحاق کریں۔ اسکی واضح مثال یہ ہے کہ برطانوی ریاست نے دانستہ طور پر ریاست قلات کو ہتھیار نہ دیئے جس کی وجہ سے قلات پاکستان کے زیر قبضہ چلا گیا پاکستان نے بھی موروثی سرداروں کے ساتھ ملکر قلات کے خلاف سازشیں کیں جسکی وجہ سے خان کی پوزیشن سخت کمزور ہوگئی اور وہ مشکل وقت میں کوئی فیصلہ نہ کرسکا اور قلات پر پاکستان نے اپنا قبضہ جما کر بلوچ قوم کی آزادی کو سلب کردیا۔ قلات کی آزادی کے بعد پاکستانی قبضہ، پرنس کی مزاحمت اور مزاحمت کے ناکامی اور اسکی وجوہات بلوچ قوم کے لئے بہت اہمیت کا حامل ہے۔ آج بھی بلوچ قوم اپنی آزادی کے لئے جدوجہد کرر ہے ہیں اور ان تمام ناکامیوں کو مدنظر رکھ کر بلوچ سیاسی پارٹیوں کو اپنی حکمت عملی بنانا ہوگی اگر ان غلطیوں کا تجزیہ سائنسی بنیادوں پر نہیں ہوا تو بلوچ قوم مستقبل میں بھی اس طرح کے حالات کے شکار ہوسکتے ہیں ۔آج بلوچ انقلابی پارٹیوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ بلوچ عوام میں سرداروں کے خلاف شعور و آگاہی فراہم کریں کہ یہ سردار بلوچ قوم کے ہمدرد نہیں بلکہ سامراج کے ہاتھوں میں استعمال ہونے والے کھلونے ہیں۔ جس طرح قلات اسٹیٹ پارٹی نے ریاستی الیکشن میں ان کو عبرتناک شکست سے دوچار کرکے ثابت کردیا کہ وہ ایک عوامی پارٹی ہے اور عوام میں اپنی جڑیں رکھتی ہے۔ آج بلوچ پارٹیوں کو بھی اسی جذبے و حکمت عملی کی ضرورت ہے بلوچ نوجوانوں کو تعلیم کی طرف راغب کرنے کے لئے اپنی جدوجہد کو تیز کرنا چاہئیے اور بلوچ خواتین کو تحریک آزادی میں متحرک کرنا چاہیئے اسکے علاوہ آزادی پسند تنظیموں کی ذمہ داری ہے کہ بلوچ قوم کو اس حقیقت سے واقفیت دلانا ضروری ہے کہ دنیا میں کوئی کسی کو آزادی نہیں دلاسکتا بلوچ تحریک کی اصل طاقت بلوچ عوام ہے اور عوام کی شرکت کے بغیر آزادی کی منزل حاصل کرنا محض ایک خواب ہوگا ۔

کمال بلوچ کا پیغام بلوچ نوجوانوں کے نام

Screen-Shot-2017-08-04-at-10.56

 میرے کاروا ن کے عظیم ساتھیو،
بلو چ قومی آزادی کی جد وجہد کس جانب گامزن ہے اور اس میں آپ لو گو ں کا کردار کیا ہے اس سے بلوچستان کا ہر شخص بخوبی آگاہ ہے۔ ہم اپنا کر دار مزید کس طر ح بہتر طریقے سے ادا کرسکتے ہیں، یا ہمیں کس طرح کردار کرنا چاہیے اس بات پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ اس وقت جو تبد یلیاں دنیا میں رونما ہو رہی ہیں اس سے ہمیں با خبر رہنا چا ہیے۔یہ حقیقت ہے کہ طا قتور اور مظلوم کے درمیان جو رشتہ ہے وہ آقا اور غلام کا ہے، اس فلسفے کو سمجھتے ہو ئے ہمیں یہ جاننے میں آسانی ہو تی ہے کہ کیوں بلو چستا ن پر قبضے کے خلا ف آواز بلند کرنے پر ریاست ہمارے خلاف انتقامی کاروائیوں پر اتر آئی ہے۔ ہم آقا اور محکوم کے تفریق کو ختم کرنے کے لئے جدوجہد کررہے ہیں، اس لئے ہمارے لوگ چن چن کر غائب کیے جارہے ہیں اور ہمیں مسخ شدہ لاشیں مل رہی ہیں۔ خاص کر ہر بلوچ طالبعلم کے ذہن میں یہ سوا ل ضرور پیدا ہو نا چاہئے کہ یہ سب کچھ کیو ں اور کس لئے ہو رہا ہے؟ ان سوالوں کے جوابات تاریخ کے صفحات پر موجود ہیں، ہر نوجوان کو ان سوالوں کا جواب تلاش کرنا چاہیے۔ جب ہم تاریخ پر نظر ڈالتے ہیں تو کمزور اور حاکم کے فرق کو ختم کرنے کی جدوجہد کے حوالے سے صفحات کے صفحات بھرے پڑے ملتے ہیں۔ اس میں کوئی حیرانگی کی بات نہیں کہ زندہ رہناالگ بات، محکوم کے مرنے کااختیا ر بھی اس کے اپنے ہا تھ میں نہیں ہو تا ہے۔ بلوچ طالبعلم کی حیثیت سے ہمیں یہ معلوم ہونا چاہیے کہ تا ریخ کو بدلنے والے عظیم انسان عام طرح کے لو گوں میں سے ہوتے ہیں۔کیا معلوم تاریخ میں خود کو سرخرو کرنے کا یہ سہرا کون اپنے سر پر باندھے۔ہم میں سے ہر ایک یہ سو چ لے کامیابی ہم حاصل کرسکتے ہیں،اس کے لئے دن رات ایک کر نے کا جذبہ موجود ہو تو اس بات میں کوئی شبہ نہیں کہ اپنی مقصد میں کامیاب ہوجائیں۔ تاریخ کے اوراق جہد کاروں کو ہمیشہ سنہرے الفاظ میں یاد کرتے ہیں۔
بی ایس او آزاد کے کا رکنان کے ساتھ ہر بلو چ طالب علم پر فر ض بنتا ہے کہ وہ اپنے اند ر قومی جذبہ رکھے۔ کیو نکہ انقلا ب اور تبد یلی لانے والے نوجوان ہی ہو تے ہیں اگر چین، جنوبی کو ریا اور انڈیا کی تاریخ پر نظر ڈا لیں تو نو جو انو ں کا کر دار وہاں نما یا ں نظر آتا ہے۔ بلو چ جد وجہد میں بھی بلوچ طالب علم رہنما ہراول دستے میں موجود ہیں۔ مثال کے طو رپر ڈاکٹر اللہ نظر میر عبدالنبی سمیت دیگر بہت سے کردار ہیں جو آج اہم مقام پر فا ئز ہیں۔اس لئے میں آپ لو گو ں سے یہ عرض کر نا چاہتا ہوں کہ اپنے اندر اتنی مضبو طی پیدا کریں کہ کو ئی طا قت آپ لوگوں کوتقسیم نہ کر سکے، کچھ لوگ بی ایس او کے باقی دھڑوں کی موجودگی کو جواز بنا کر یہ سو چتے ہیں آج ہم کیو ں تقسیم ہیں۔ لیکن میر ے خیال میں یہ تا ریخی حقیقت ہے کہ ہم تقسیم نہیں بلکہ ہم دو مختلف نظر یات کے مالک ہیں۔ یہ نظر یہ بلو چ قومی آزادی اور انقلاب کی ہے دوسر ی سوچ وہی ہے جو پا کستان کے ساتھ رہنے کی حمایتی ہے۔اور یہی نظریہ قومی مفادات کی بجائے انفرادی مفا دات کو ترجیح دیتا ہے۔  ایک تا ریخ کے طالب علم ہو نے کے ناطے میں اُن سے یہ کہناچاہتا ہو ں کہ آپ لوگ غلط سمت پر جا رہے ہیں۔ جو تاریخ اس وقت رقم ہو رہی ہے اس سے آپ لوگو ں کو محروم رکھا گیا ہے، آپ غلط راہ کا انتخاب کر چکے ہیں۔ میں اس تحر یر میں بی ایس او پجا ر بی ایس او مینگل کے کا رکنان کو یہ واضح پیغام دینا چاہتا ہوں کہ وہ حقیقی راہ کا انتخاب کر یں۔ اسی میں بلو چ کی نجا ت اور ہما ری بقا ہے۔ کیو ں ہم تاریخ سے واقفیت کے باوجود تاریخ سے سبق حاصل نہیں کرتے؟ ہر کسی کے اشارے پر ادھر اُدھر دوڑنا شروع کردیتے ہیں۔ آئیں اسی راہ کا انتخاب کریں جس سے آزادی کے منزل تک پہنچا جا سکتا ہے، جہاں آزاد وطن و ریاست کے مالک بلو چ عوام رہیں۔ کم از کم اپنے اندر اس بحث کا آغا ز تو کر یں۔ آپ لو گو ں کے ذہن میں یہ بات ڈالی جا چکی ہے کہ بی ایس او آزاد نے غلط راستے کا انتخاب کیا ہے،یہ اس لئے کہا جا رہا ہے کیوں کہ بی ا یس او آزاد تاریخ کا درس دیتی ہے، بی ایس او آزاد اپنے حق پر بات کرنے کادرس دیتی ہے، بی ایس او آزاد کتاب اور قلم کی بات کر تی ہے۔اگر یہ درس غلط ہے تو پھر ہر وہ جہد کار غلط ہے جس نے آزادی کی جدوجہد کی اور ہر وہ حق گو غلط ہے جو حق بات کہنے کی جرات کرتا ہے۔ اگر قومی خوشحالی کی بات کرنا غداری ہے تو مجھ سمیت بی ایس او آزاد کا ہر کارکن غدار ہے۔ ہر بلوچ طالبعلم کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اِس طرز کے منفی پروپگنڈوں کوناکام بنانے کی بھر پور کوشش کرے۔
ممکن ہے کہ کچھ دوست یہ سوچ رہے ہیں کہ کیوں بی ایس او کی لیڈر شپ پہلے کی طرح میڈیا میں نظر نہیں آتی ہے۔ میرے خیال میں یہ سوچ ایک مفروضہ ہے،ہم اپنے کا رکنان کیساتھ ہر وقت بحث مباحثوں میں ایک ساتھ ہیں ہم جہا ں کہیں بھی ہو ں ہر وقت ہم اپنے کا رکنوں کے ہمراہ ہیں اپنی تقریروں، پروگراموں اور تحر یو ں کی شکل میں ہم ایک ساتھ ہیں۔
 بی ایس او آزاد کے کا رکنو! آج بلو چستان کے حالات کس نہج پر ہیں اس سے آپ لو گ بخوبی باخبر ہیں۔ سیاسی معاملات کا مطالعہ کرنے کے ساتھ آپ ذرائع ابلاغ سے روز خبریں سنتے اور دیکھتے ہیں۔اسی لیئے بلو چستان کیلئے قابض حکمران کی پالیسیاں عالمی برادری یا کسی بھی بیرونی ادارے سے زیادہ آپ لو گو ں پر واضح ہیں۔ اگر آپ قبضہ گیر کی تماتر تر پالیسیوں کا بغور مطالعہ کریں تو آپ بخوبی اندازہ ہو جائے گاکہ ریاست اپنے استعماری مفادات کے حصول کیلئے کس حد تک متحرک ہے۔آج پاکستان اپنے استحصالی پروجیکٹس کی تکمیل کیلئے مختلف قسم کے حربوں کے ساتھ منفی پروپگنڈے بھی کر رہا ہے۔
اگر دیکھا جائے تو اس وقت ریاست کی پوری توجہ گوادرپورٹ کی تعمیر میں ہے۔ایک طرف تو ریاستی میڈیا پورٹ کے نام نہاد فائدے لوگوں کو بتارہی ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہا ں لو گو ں کو زندہ رہنے کیلئے پینے کاپانی تک دستیا ب نہیں ہے۔ تو کیا یہ بات سمجھنے کیلئے کا فی نہیں ہے کہ طاقتور کس طرح جھوٹ کا سہارا لیکر اپنے منصوبوں کو تکمیل تک پہنچانا چاہتی ہے۔لہذا اس دور کے تعلیم یا فتہ نوجوان جو تحقیق پر بھروسہ کرتے ہیں وہ تحقیق کر یں اور وہ بیما ری نکال باہر کر یں جو قومی صحت کیلئے نقصان دہ ہے۔ کہنے کامقصد آسان الفاظ میں آقا اور غلام کے رشتے کو جانناچاہئے کہ وہ رشتہ کیا ہے۔ بطور معاشرے کے زمہ دار طبقہ آج جو ذمہ داری ہم پر عائد ہے، یا جوذمہ داری ہم نے لی ہے، کیا ان پر ہم پو را اُتررہے ہیں؟ میر ے خیا ل میں جو محنت آپ لوگ کر رہے ہیں اس سے پو ری دنیا آگا ہ ہے۔ مگر اس خوش فہمی میں نہیں رہنا چاہیے کہ ہم منطقی منزل تک پہنچ چکے ہیں۔
بی ایس او آزادہزار مشکلات کے باجو د بھی اپنے پیغامات دنیا تک پہنچا رہی ہے۔سالوں سے بی ایس او آزادکے کا رکنان اور لیڈران کو پاکستانی فوج چن چن کر اغو ا کر کے قتل کررہی ہے۔لیکن اسکے باوجود ہما ری تنظیم کے کارکنان کے پاؤں میں لرزش تک نہیں آئی ہے۔ بلکہ اپنے کام میں مزید بہتری لا رہے ہیں۔ سرگرمیوں کو سر انجام دینے کیلئے ہما رے کارکن دن رات محنت کر رہے ہیں جو قابل ستائش ہے۔ جو سیا سی پر ورش آپ لوگوں کی اس پلیٹ فا رم پر ہو رہی ہے اس کا مقصد بلو چ نو جو انو ں میں سیاسی شعور پید اکر نا ہے، حق اور سچ کی راہ دکھا نا ہے تاکہ یہ آگاہی تمام بلوچ سماج اور نوجوانوں میں آ سکے۔ مستقبل کی رہنما آپ لو گ ہیں اگر اپنے مستقبل کیلئے فکر مند ہیں تو آج آپکو لازماََ جدوجہد کرنا ہوگی۔اس وقت بلو چ جنگی اور انقلا بی حالات سے گزر رہی ہے اس نازک صورت حال کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کس طرح کی پالیسیاں تشکیل دینی چاہیے۔
بلوچستان میں نظام تعلیم ایک الگ بحث ہے کہ بلوچو ں کیلئے تعلیم کا دروازہ قبضہ کے پہلے دن سے بند رہا ہے۔اسی وجہ سے بلوچستان کے اکثر علا قوں میں پر ائمری تعلیمی ادارے ہی نہیں ہیں تو نوجوان کس طرح یورنیو رسٹیز جا سکیں گے۔ بیشتر اسکولوں میں پا کستان پرست نیشنل پارٹی اور دیگر پارلیمانی جماعتوں کے سفارشی بھر تی کیے ہوئے ٹیچرز تعینات ہیں۔ اس طرح کی مثالیں بلو چستان کے طول و عرض میں موجود ہیں۔ کہنے کا کا مقصد یہ ہے کہ ریا ست کبھی بھی یہ نہیں چاہتی ہے کہ بلوچ معیاری تعلیم حاصل کر یں۔بلکہ وہ بلوچوں کو جاہل رکھ کر صدیوں پیچھے دھکیلنا چاہتا ہے۔بلوچوں نے ماضی میں جس طرح ہر چیلنج کا سامنا کیا اور سرخرو رہے ہیں، اسی طرح آج کے زمانے کے چیلنجز کا سامنا کرکے بلوچ سرخرو نکلیں گے۔
تعلیم کا معیار پا کستان کی تعلیمی اداروں میں ہمیشہ نیچے ہی رہا ہے۔ اُس کے دانشوار خود اس با ت کو تسلیم کر تے ہیں کہ یہا ں سیا سی معاشی بحران کے ساتھ ساتھ اخلاقی بحران بھی اپنے عروج پر ہے۔ان تما م حالات کاجا ئز ہ لیں تو پاکستان کی اجتماعی صورت حال کو سمجھنا ہمارے لئے آسان ہوگا۔ چوں کہ پاکستان کی تشکیل قومی بنیادوں پر نہیں بلکہ مسلم بھائی چارگی کے نام نہاد نظریے کی تحت پر ہوئی ہے۔)یہاں اس بات کی وضاحت کرنا ضروری ہے کہ مختلف قومیتوں کے تشخص کو ختم کرکے انہیں مذہب کے نام پر یکجا کرنے کی دلیل کمزور ترین دلیل ہے(۔ اسی لئے آج ایک مخصوص طبقے کے علاوہ عام سندھی، پنجابی، پشتون اور دیگر قومیتیں بھی معاشی، سیاسی، ثقافتی استحصال کا شکار ہیں۔ اُن قوموں کو بلوچوں کی جدوجہد سے رہنمائی حاصل کرنا چاہیے۔ کیونکہ بلوچوں نے  ایک کٹھن راستے کا اتخاب ایک عظیم مستقبل کیلئے کیا ہے۔
ریاست کے نام نہاد د دانشور بلوچ قومی جد وجہد پر انتہائی منفی پر وپیگنڈا کر کے اسے غلط ثابت کر نے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ دوسری طرف پاکستان پر ست پا رٹیو ں کی جانب سے یہ پروپگنڈا رعام ہے کہ بلو چ خا نہ جنگی کا شکار ہیں۔وہ یہ بات ہر خاص و عام کو باور کرانا چاہتے ہیں کہ بلوچستان خانہ جنگی کا شکار ہے۔ مگر اس طرح کے خیالات حقیقت سے کو سوں دور محض اندازے ہیں۔ اس طرح کی باتیں پھیلانے کا بنیادی مقصد بلو چ تحر یک کو ختم کر نے کی ایک ناکام کوشش ہے۔ سیاسی کارکن ہونے کے ناطے ہمارے لئے ضروری ٹھرتا ہے کہ دشمن کے ہر منفی پروپگنڈے کو ناکام بناتے ہوئے تمام تر سیاسی تقاضوں، حقائق، کمزوریوں اور تغیرات کو مد نظر رکھ کر قومی آزادی کی جدو جہد میں بہتر سے بہتر کردار ادا کریں۔  ان معاملات کو سمجھنے اور ان مسائل کو حل کرنے میں دنیا کے تحریکوں اور اقوام کی تاریخ بہترین رہنماء ہے۔

شے مُرید

IMG_0179-768x512

:بیبرگ بلوچ
ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتا ہے
    بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا
بی ایس او آزاد کے چیئرپرسن کریمہ بلوچ شہید رضا جہانگیر کے شخصیت کا
احاطہ ان الفاظ میں کرتے ہیں ” میری نظر میں رضا جہانگیر ایک شخص کا نام نہیں ہے بلکہ ایک عہد کا نام ہے۔بی ایس او کی وہ عہد جو تاریخ میں ایک بڑے کریک ڈاؤن کی نظر ہو گئی یا وہ عہد کہ بلوچ قومی تحریک میں کریک ڈاؤن کے دوران بلوچ نسل کشی میں تیزی آئی تاریخ میں اس عہد کا نام شہید رضا جہانگیر ہے۔“
ویسے لوگ دنیا میں پیدا ہوتے ہی ہیں مرنے کے لیئے لیکن کچھ لوگ زندہ ہونے کے باوجود مرنے والوں میں شمار ہوتے ہیں۔اور کچھ لوگ  دنیا کو رخصت کر کے چلے جاتے ہیں لیکن پھر بھی زندوں میں شمار ہوتے ہیں۔ شہید رضا جہانگیر بھی انہی لوگوں میں سے ہیں جو رخصت کرکے چلے گئے ہیں لیکن پھر بھی زندہ لوگوں میں شمار ہوتے ہیں۔
کس کو کیا معلوم تھا کہ آواران میں بختیار بلوچ نامی شخص کے گھر میں پیدا ہونے والا یہ دبلا،لاغر بدن سا شخص بڑا ہوکر ریڈیکلزم کے بنیاد پر اپنی سیاست کا آغاز کرے گا اور بی ایس او آزاد جیسے ریڈیکل آرگنائزیشن سے اپنی وابستگی جوڑ کر مرکزی سیکٹری جنرل کے عہدے پر فائز ہوگا۔
شے مُرید نام رکھا تو تھا لیکن یہ شے مرید واقعی میں ایک شے تھا۔اِس شے مُرید اور اُس شے مُرید میں فرق صرف اتنا تھا کہ وہ حانی کیلئے اپنے آپ کو شرابِ عشق میں بھگو دیا اور پھر زندگی بھر اسی کا عاشق ہو گیا۔لیکن جو ہمارا شے تھا شہید رضا جہانگیر وہ تو بلوچ اور بلوچستان کا ایک ایسا محب اور عاشق بن گیا کہ جس نے زندگی میں کچھ اور کام نہ کیا وہ جب ایک بار بلوچستان کی محبت سے دوچار ہوا پھر زندگی بھر اسی بلوچ وطن کا ہو گیا۔2010 کے دوران بی ایس او آزاد اور بلوچ قومی تحریک کے اندر ایک کریک ڈاؤن شروع ہو جاتا ہے اور بی ایس او منتشر ہونے کی طرف جارہی ہوتی ہے۔سامراج کی سامراجیت، قبضہ گیر کی قبضہ گیریت، سردارون کی سرداریت، دلالوں کی دلالیت زور پکڑ کر  رہا ہوتا ہے اور اس میں کچھ اپنوں کی مہربانیاں بھی شامل ہوتی ہیں۔جس طرح حانی کے عشق میں شے مُرید جلا وطن ہو جاتا ہے کئی سال گُزرنے کے باوجود کوئی نام نشان نہیں ہوتا ہے کہ شے مرید کدھر گیا اچانک چاکر رند کے دربار میں تیر اندازی مقابلے کے دوران حانی کا شے مرید منظر پر آجاتا ہے۔ بلکل اُسی طرح بلوچستان کا شے مُرید دیوانوں کی طرح منظر پر اُبھر آتا ہے اور ایک محب، ایک مفکر، ایک شاعر اور ایک سیاسی کارکن کی حیثیت سے زاہد جان اور دیگر دوستوں کے ساتھ ملکر بی ایس او کو منتشر ہونے سے بچانے کیلئے اپنی دن رات ایک کرتے ہیں، اس مقصد میں کامیاب بھی ہوجاتے ہیں۔ بی ایس او 2012 اپنی کونسل سیشن کی طرف چلی جاتی ہے۔جس میں بلوچستان کی شے مُرید بلامقابلہ مرکزی سیکرٹری جنرل منتخب ہوتے ہیں بس کیا تھا ایک طرف بلوچستان اور دوسری طرف اس کا دیوانہ شے مُرید تھا جس نے اپنی دن رات ایک کی۔بقول دوستوں کے شے مُرید کے مجلس میں بات بی ایس او اور بلوچ قومی تحریک سے شروع ہوکر اور اسی پر ختم
 ہوتا تھا۔
رضا کی سوچ وفکر سے اور ان کی جدوجہد سے لے کر حتی کہ ان کی شہادت تک کی زندگی سے ہمیں یہ سبق ملتا ہے کہ دشمن نے ہماری زمین اور ہر چیز پر قبضہ کرلیا ہے اور اس نے ہمیں غلام بنا لیا ہے۔ہماری زندگی کے ہدایت نامے وہ لکھ رہے ہیں اور یہ زندگی ہمارے لئے ایک بتدریج موت ہے، ایک جیتی جاگتی موت۔ ہم ان کی تیار کی ہوئی زندگی نہیں جی سکتے، یہ سوچ کر دل ڈوبنے لگتا ہے کہ ہم ہتھکڑیوں میں جھکڑے غلاموں کی طرح ہمیشہ کیلئے پناہ گزینوں کی زندگی گزارنے پر مجبور گئے ہیں لیکن خوشی کی بات یہ ہے کہ یہ مزاحمت بڑھتی جا رہی ہے اور کسی دن ہم وہ سب کچھ حاصل کر لیں گے جو ہمارا حق ہے،آج اگرچہ ہمارے لوگ غلام پیدا ہورہے ہیں مگر ضرورت پڑنے پر شہید رضا جہانگیر جیسے لوگ اپنی جان دیں گے تاکہ آنے والے نسل غلامی کی موت نہ مرے۔
شہید رضا جہانگیر جیسے لوگ جانتے ہیں کہ پاکستانی فوج ان کے پیچھے لگی ہوئی ہے، کیونکہ سامراجی فوج نے بہت سے بلوچوں کی آنکھوں پر پٹی باندھ کر اور ہاتھوں پر ہتھکڑی لگا کر لے گئے ہیں اور ان میں سے بہت کی مسخ شدہ لاشیں پھینک دی گئی ہے اور بہت سے ابھی بھی ٹارچر سیلوں میں ازیت سہہ رہے ہیں سامراجی فوج بلوچوں کو ان قتل گاہوں میں لے کر جاتے ہیں جہاں سے صرف غلام، تابع دار اور شکست خوردہ لوگ ہی واپس آسکتے ہیں۔
شہید رضا کو بھی آنے والے وقتوں کی خطرناک بو آرہی تھی اور وہ اپنی جدوجہد سے یہ ثابت کر رہا تھا کہ اگر میں شہید ہوگیا تو میری جدوجہد کو آگے لے جانا میری روح کیلئے دعا کرنا اور میری ناقابل فراموش شہیدوں میں شامل ہونے پر خوشی منانا تمام وہ لوگ جو انصاف، آزادی اور اپنی سرزمین کیلئے لڑتے ہیں اور جان دیتے ہیں، وہ کامیاب لوگوں میں شامل ہوتے ہیں