ﺷﮩﯿﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ 10 دسمبر

ﺗﺤﺮﯾﺮ:ﭼﯽ ﺑﻠﻮﭺ

shaheed faisal mengal

ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮱ ﻗﻠﻢ ﺍﭨﮭﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﭘﯿﻦ ﺍﯾﮏ ﭘﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮨﺘﮭﯿﺎﺭ ﮨﮯ ﺟﺴﮯﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﻇﻠﻢ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﯿﻦﺳﮯ ﺟﻮ ﻟﻔﻆ ﻣﯿﮟ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﻇﻠﻢ ﺍﻭﺭ ﻗﺒﻀﮧ ﮔﯿﺮﯾﺖ ﮐﮯﺧﻼﻑ ﻟﮑﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﻟﻔﻆ ﻣﺠﮭﮯ ﮔﻮﻟﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻃﺮﺡ ﺩﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﻮﺳﺖ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮨﻀﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮭﮯ ﯾﺎ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎﮮ.ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﻭ ﻣﺤﮑﻮﻡ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺟﺐ ﻇﻠﻢ ﮐﮯﺧﻼﻑ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﯾﺎ ﻇﻠﻢ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﻠﻢ ﮐﯽ ﻧﻮﮎ ﺳﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮐﻮﺷﺶﮐﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻏﻼﻣﻮﮞ ﮐﮯﻓﺮﺭﺯﻧﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﺷﮩﯿﺪ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻧﻈﺮﯾﮧ ﺍﻭﺭ ﻓﮑﺮﮐﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﮯ۔

ﺍﺏ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺎﺩﺭﺀ ﮔﻞ ﺯﻣﯿﻦ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ……ﻣﺎﺩﺭﺀ ﮔﻞ ﺯﻣﯿﻦ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﻗﺒﻀﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﻮﭺ ﻗﻮﻡ ﺭﻭﺯﺀ ﺍﻭﻝ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻗﺒﻀﮧ ﮔﯿﺮﯾﺖ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺟﮩﺪ ﺀ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﮐﺮﺭﮨﺎ ﮨﮯ. ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﻓﺮﺯﻧﺪﺍﻥﺀ ﻭﻃﻦ ﮔﻞ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﺁﺟﻮﺋﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮱﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﻧﺬﺭﺍﻧﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ . ﮐﺴﯽ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﺢ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺮﮐﮯ ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﭘﻠﯿﭧ ﻓﺎﺭﻡ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮧ ﮔﯿﺮﯾﺖ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﻗﺒﻀﮧ ﮔﯿﺮ ﻇﺎﻟﻢ ﻧﮯ ﺣﻖﺀ ﺁﺟﻮﺋﯽ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﭘﺎﺩﺍﺵ ﻣﯿﮟ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﮐﻮ ﺩﺑﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮱ ﻧﺖ ﻧﺌﮯ ﺣﺮﺑﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﮯ . ﺟﯿﻞ ﻭ ﺯﻧﺪﺍﻥ , ﮔﺮﻓﺘﺎﺭﯾﺎﮞ ﺁﺧﺮ ﺟﺐ ﻇﺎﻟﻢ ﻗﺒﻀﮧ ﮔﯿﺮ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻧﮧ ﻣﻼﺗﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﻧﮯ ﻇﻠﻢ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻧﯿﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﻣﺎﺭﻭ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﻨﮑﻮ ﮐﯽ ﭘﺎﻟﯿﺴﯽ ﺍﭘﻨﺎﺋﯽ ﺍﺱ ﻃﺮﯾﻘﮧﺀ ﻇﻠﻢ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﺍﻏﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﭨﺎﺭﭼﺮ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ 4 ﺷﮩﯿﺪ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﮐﻮﭨﺎﺭﮔﭧ ﮐﻠﻨﮓ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﻇﺎﻟﻢ ﺍﭘﻨﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﭼﭙﮭﺎﮰ ﺭﮐﮭﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﭙﺘﺎ.ﺁﺝ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﻠﻮﭺ ﻗﻮﻡ ﭘﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻇﻠﻢ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱﮐﺮﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻋﻈﯿﻢ ﻓﺮﺯﻧﺪﺍﻥﺀ ﻭﻃﻦ ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯿﺎﮞﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﻥ ﺭﺍﺕ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺷﻤﺢ ﺀ ﺁﺟﻮﺋﯽ ﮐﻮﺭﻭﺷﻦ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ ﮔﻞ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﻗﺮﺑﺎﻥﮐﯿﮟ۔

ﺁﺝ 10 ﺩﺳﻤﺒﺮ ﮐﻮ ﮬﻢ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﻈﯿﻢ ﻓﮑﺮﯼ ﺳﺎﺗﮭﯽﻣﺎﺩﺭﺀ ﻭﻃﻦ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﮔﻤﻨﺎﻡ ﻋﻈﯿﻢ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﮨﯽ ﮬﻢ ﻧﮯ ﮐﻢ ﺳﻨﺎ ﮬﻮ . ﯾﮧ ﮬﻤﺎﺭﯼﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﮩﮯ ﯾﺎ ﺟﺎﻧﺒﺪﺍﺭﯼ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭ ﯾﺎ ﻗﺒﺎﺋﻠﯽ ﮐﻮ ﺭﯾﻔﺮﯾﻨﺴﺰ ﯾﺎ ﺳﻤﺎﺟﯽ ﻧﯿﭧ ﻭﺭﮎ ﻓﯿﺲ ﺑﮏ ﯾﺎ ﺩﯾﮕﺮ ﭘﺮ ﺗﺼﻮﯾﺮﯾﮟ ﺗﻮ ﺩﯾﺘﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﻥ ﮔﻤﻨﺎﻡﺷﮩﯿﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﻠﻮﭺ ﻗﻮﻡ ﮐﮯﺁﻭﺍﺯ ﮐﻮ ﮬﺮ ﻓﻮﺭﻡ ﭘﮧ ﺑﻠﻨﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﭘﺎﺩﺍﺵ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﯿﺪ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﻥ ﻋﻈﯿﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔

ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ 8 ﺟﻮﻻﺋﯽ 1976 ﻣﯿﮟ ﮔﻞ ﺩﺍﺩ ﺑﻠﻮﭺ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ. ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﻣﯿﻨﮕﻞ ﻗﺒﯿﻠﮯ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻓﯿﺼﻞ ﻣﯿﻨﮕﻞ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﭘﮑﺎﺭﺍ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ ﮐﮩﻮ.ﻣﯿﭩﺮﮎ ﺗﮏ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮔﻮﺭﻧﻤﻨﭧ ﺳﮑﻮﻝ ﮐﻠﯽ ﺷﺎﺑﻮ ﮐﻮﺋﭩﮧﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﭩﺮﻣﯿﮉﯾﭧ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﻧﻮ ﮐﺎﻟﺞ ﺳﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﯿﺎ ﮔﺮﯾﺠﻮﺋﺸﻦ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺳﭩﺮﺯ ﺍﻥ ﮨﺴﭩﺮﯼ ﮐﯽ ﮈﮔﺮﯼ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﻟﯽ. ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺀ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺷﮩﯿﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﺑﯽ.ﺍﯾﺲ .ﺍﻭ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻠﻖﮨﻮﮰ ﺷﮩﯿﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﺭﻭﺯ ﺍﻭﻝ ﺳﮯ ﺑﻠﻮﭺ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﭘﺎﺭﭨﯿﻮﮞ ﮐﮯﻣﻨﺘﺸﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮ ﺗﮏ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﯽﺑﺎﺕ ﮐﮩﯽ ﮐﮧ تمام ﺑﻠﻮﭺ پارٹیز کا ایک ہی ایجنڈا ہو۔

شہید نے یونیورسٹی سے  فارغ ہونے کہ بعد این جی اوز جوائن کیا جہاں وہ  جاپان ناگاساکی اور ہیرو شیماء گئے ﺟﮩﺎﮞﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻧﺎ ﺍﻧﺼﺎﻓﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺳﮑﻮﮪ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﭩﻤﯽ ﺩﮬﻤﺎﮐﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﻮﭨﻨﮯﻭﺍﻟﯽ ﺟﺎﻥ ﻟﯿﻮﺍ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﮔﺎﮦ ﮐﯿﺎ، جند عرصے بعد وہ ہندوستان میں ورلڈ سوشل فورم گئے وہاں شہید نے بلوچوں پر ہونے والے نا انصافیوں کو  اُجاگر کیا۔

  جب شہید دوبارہ آئے تو انہوں نے چائلڈ ابیوز پر ریسرچ کیا جس کے لیے وہ خضدار اور گوادر میں رہے، اس دوران شہید کو ایم آئی اور آئی ایس آئی کی جانب سے مار دینے کی بھی مسلسل دھمکیاں ملتی رہئ۔شہید نے بلوچستان کے مختلف اضلاح میں تعلیم کے موضوع پر بھی کام کیا، 2009 میں دوستوں کے مشہورے کے بعد شہید فیصل امریکی کونسلیٹ سے منسلق ہوگئے۔ ﺳﻨﮕﺖ ﻓﯿﺼﻞ ﻧﮯ ﺑﻠﻮﭺ ﮐﺎﺯ ﮐﮯ ﻟﯿﮱ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺁﺭﭨﯿﮑﻞ ﺑﮭﯽﻟﮑﮭﮯ۔

ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻭﺭﯼ ﺳﮯ ﺍﮔﺴﺖ 2011 ﺗﮏ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺍﯾﺠﻨﺴﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺩﮬﻤﮑﯿﺎﮞ ﻣﻠﯽ ﻣﮕﺮ ﺷﮩﯿﺪ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻮﻗﻒ ﺳﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﭩﮭﮯ  سپتمبر2011 ﻣﯿﮟ ﺟﺮﻣﻨﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺗﻨﻈﯿﻢ ہینس کو جوائن کیا۔

 10 دسمبر 2011 کو شہید جب اپنے دوستوں کے پاس پی آئی ڈی سی ہوٹل کی طرف جارہے تھے تو راستے میں جہاں سندہ کے وزیرِ اعلیٰ کی رہشگاہ بھی ہےوہ علاقہ انتہاہی حساس ہیں جہاں ہمیشہ سیکورٹی ریڈ الرٹ رہتی ہےوہاں ایجنسیوں کے کارندوں نے اندھا دھند فائرنگ کے کرکے وطن عزیز کے عظیم فرزند کو ہم سے جسمانی طور پر ہمیشہ کےلیے جُدا ہوگئے

ﺟﮩﺎﮞ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻓﺮﺯﻧﺪﺍﻥﺀ ﻭﻃﻦ ﮐﮯ ﺗﺸﺪﺩ ﺫﺩﮦ ﻻﺷﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﻨﻮﺍﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﮔﺬﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺷﮩﯿﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﮐﮯ ﮐﯿﺲ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﺮ ﺛﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ. ﻇﺎﻟﻢ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﺗﻮﻗﻊ ﮐﯽ ﺟﺎﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ، ﺷﮩﯿﺪ ﻓﯿﺼﻞ ﺑﻠﻮﭺ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺗﻮ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮨﻮﮰ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﮑﺎ ﻧﻈﺮﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﺯﻧﺪﮦ ﻭ ﺟﺎﻭﯾﺪﺍﮞ ﮨﯿﮟ۔

 ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺷﻌﺮ

 ﺑﮩﺎ ﮐﺮ ﺧﻮﻥ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﮮ ﮐﮯ ﺣﺼﮧ, ﻭﻃﻦ ﺳﻼﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ

ﺟﮭﮑﺎ ﺳﮑﺎ ﻧﮧ ﻋﺪﻭ ﻣﺮﺍ ﺳﺮ, ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﺎﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ  ﮨﻮﮞ

 ﯾﮧ ﻣﻮﺕ ﺍﮎ ﺩﻥ ﺗﻮ ﺁﺋﯿﮕﯽ, ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﭽﮫ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﮈﺭ

 ﻏﻼﻡ ﺟﺴﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮦ ﺭﮨﻨﺎ, ﮨﮯ ﯾﮧ ﻗﯿﺎﻣﺖ! ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ

ﺍﻧﻘﻼﺏ ﺯﻧﺪﮒ ﺑﺎﺩ
ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﺁﺟﻮ ﺑﺎﺕ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s