یومِ شہداء کے دن ایک اور بلوچ فرزند نے مٹی کا قرض اُتار دیا۔۔۔

یومِ شہداء کے دن ایک اور بلوچ فرزند نے مٹی کا قرض اُتار دیا۔۔۔

اس مٹی کا قرض تھا مجھ پہ

میں نے اپنا قرض چکایا

کیا نہیں احسان کسی پہ

میں نے اپنا فرض نبھایا

میں نے اس کی آن بچائی

اس پہ جیون وارا ہیں

آنے والوں اسے سنھبالو

اب یہ وطن تمہارے حوالے ہیں

اب یہ وطن تمہارے حوالے ہیں

اب تم آجوئی کا سورج دیکھو

اپنی ہوگئی رات

اپنی ہوگئی رات

3 comments on “یومِ شہداء کے دن ایک اور بلوچ فرزند نے مٹی کا قرض اُتار دیا۔۔۔

  1. Ey ama wajae bach’e ke aksar marduma ishiye sra beve maqsad’e tankeed kita anni ke wajae 3mi bach shaeed janag bu nu marduma sohrey salam pesh kangya aga waja Sher Mohammad pa Baloch Raj’a harab butey gura wajae 3 zahg pa Gulzameen’e hatira nadr nabutagata b…Allah jannat naseeb bika shaeed Haqnawaz Bugti’a.

  2. Pingback: یومِ شہداء کے دن ایک اور بلوچ فرزند نے مٹی کا قرض اُتار دیا۔۔۔ | brckarachi

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s