بلوچ گوریلا لیڈرجنرل شیروف مری

tft-23-p-24-a-600x400

بیبرگ بلوچ
“بلوچ آ تا دا جدوجہد دنیا نا مچا مظلوم آ انسان آتا جدوجہدءِ۔دا ملک نا مظلوم قوم آتا جدوجہد ءِ ۔دا جدوجہد سندھی،اوغان او بلوچ آتا جدوجہد ءِ ۔ دا جدوجہد بین الاقوامی سامراج و اْوتا دلال آتا خلاف ئے۔
دا تاریخی آ ہیت آک ہمو شخصیت نا او ہراکہ بلوچستان ٹی زوراکی قوضہ نا خلاف مسٹمیکو بغاوت ئے برجا کرے۔
خواجہ منصور جونیجو تینا کتاب ‘بلوچستان کا گوریلا رہنما جنرل شیروف ” اٹ نوشتہ کیک کہ نن بلوچستان نا ہرا ہیرو نا چاہنداری ئے کننگ اون او بلوچستان نا مش تے آنبار مضبوط و بڈر ئے۔نن اونا اسے دوٹی شاعری نوشتہ کننگ کن قلم ء خنینہ تو ایلو دوٹی تے توفک ء خننگک۔دانا ہمت و حوصلہ غاتا صوب آن بلوچستان نا الس آجوئی نا بیرک ء دوئی کرینے۔بلوچ قوم پرست،مارکسسٹ نا سوچ ء تخوکا، بلوچ قومی جدوجہد نا جہد کار،شاعر،ادیب،نقاد و کل آن زیات بلوچ نا سرحد آتا سوگوئی و ننگ و ناموس نا خیالدار گوریلا لیڈر اس ہم ئس۔ سردار سینا خاندان آن ئس ولے سرداری وڑڈول آن خلاف اَس۔
انگریز نا دور ٹی کوہلو ٹی ودی مروکا دا مرد قلندر نا پن “شیر محمد” تخننگا ہرا کوہلو نا مری قبیلہ غان تعلق تخاکہ۔ولے بلوچستان ٹی بندغاک مہر و محبت اٹ اودے”بابو شیرو” پاریرہ۔مری قبیلہ نا سردار خیر بخش مری پاریکا شیرو ننا شیر ءِ ۔دا ٹی ہچو شک ئس الّو کہ او بلوچستان نا خاطر کن جنگل و مش تیٹی شیر آمبار جنگ کرے۔
بھٹو نا دور ٹی اندا شیرو مری تاریخ نا پنّہ غاتیٹی جنرل شیروف نا پن ٹی مونا بس۔انگریز نا دور ٹی قباہلی زندگی ءْ سرداری وڑڈول نا خلاف بغاوت کرے۔سڑداری ٹیکس نا خلاف کننگ نا سوب آن جیل ٹی بند مس۔
ولے پاکستان نا جوڑ مننگ آن پد اْو بلوچ قومیت نا نعرہ ءْ مارکسسٹ سوچ ءِ ارفسہ تینا سیاست نا بناء کرے۔بابا خیر بخش مری اونا فکری آ قائد اس ءْ سردار عطاء اللہ ،نواب اکبر خان بگٹی ہم تینا نظریاتی سنگت پاریکا۔
اسے پاراغان برصغیر ہند نا بشخ بانٹ نا مخالف اَس ایلو پاراغان مسلمان قومیت نا پِنٹ پاکستان نا مخالف اَس۔بلکن دانا خاطر کن جد وجہد اَم کننگ اَس۔ہرا ایوب نا دور باری ٹی جنرل ٹکا خان نا کماشی ٹی بلوچستان ٹی فوجی آپریشن مس بابو نوروز خان قرآن نا پنٹ مش تیان شیف کننگا اڑان بابو ہَفتِنگا سنگت آتیتو پھانسی تننگان گڈ دانا رِدٹ شیرو مری تینا سنگت آتون اَوار مش تِیا اِنا مسٹیمیکوگوریلا جنگ نابنداؤ کرے۔
جنرل شیرو مری 64 سال زند گِدریفے بازاک پارا 70 سال ولے اگہ ارنگے 10 اونا چنّکی نا زند مریک اڑان پد 10 نا زند او شوانَی ٹی گدریفے 13 سال نا زند اونا جیل ءْ بندی تیٹی تیر مسونو 12 سال ملک آن پیشن جلا وطن مس 13 سال بلوچستان نا مش تیٹی تینا قوم اکن گوریلا نا زند گدریفے اگہ 64 نا خساب ٹی پین 6 سال بچّیرہ ارا شعر و شاعری ٹی گدرینگانو۔
شیرو مری تینا اسے انٹرویو سیٹی فرقہ پرستی نا حوالہ ٹی اسے سوج سینا وَرندی ٹی پاہِک اِی مچا بندغ آتے خاص کر مْلا تے دا پاننگ خواہ کہ نما فرقہ پرستی نا وجہ غان بلوچستان اسے پین جنگ سینا گواچی مفک اگہ نم دا گڑا نا کوشش ہم کریرے گڑا دانا نسخان ء ہم نمے ارفوئی تَمک۔فرقہ
پرست اِنگا مْلاک دا ہیت آتے اْست آن دپّس کہ ذگریک ہم بلوچ قوم تون تعلقداری تِخرا دا سوچ نم اَسْل ختم کننگ کپیرے نم دا سوچ ختم کننگ نا کوشست کریر گْڑا یاد تخیرے تیویٰ بلوچ قوم نما خلاف اسے جاہ مروئے۔
سندھی قوم پرست آتے کْلو ترسہ پاہِک نمتون جذبہ ارے ہمت ارے ولے منظم افیرے دانا سوب دادے نم تون جوانو قیادت اف۔اسے مضبوط سیاسی پارٹی ئس اف۔اندن بلوچ قوم تینا حق کِن جنگ کننگے اندن نمے یعنی سندھی قوم ء ہم کروئیءِ ۔
شیرو مری تیویٰ زند تینا اصول آتا سودا کتوے۔ ملکی سیاست آن مْر مرسہ نواب خیر بخش مری تون افغانستان آ اِنا اندا وختا تینا سنگت نواب خیر بخش مری آن خفا مس گْڑا او دھلی نا کسر آن کراچی آ بس اندا وخت آ ناجوڑ مس۔تینا علاج ہم کرفسہ کرے۔ ولدا علاج نا خاطر کن دھلی آ اِنا۔دھلی ٹی 11 مئی 1993 ٹی دا جہانِ آن رخصت کرے۔اینو بابو شیرو مری بلوچ قوم نا نیام ٹی اَف ولے بلوچ قومی تاریخ نا پنہ غاتیٹی اونا کڑد داسکان اَرے۔بلوچ قومی جد و جہد اٹ اونا قربانی و کڑد مدام یاد تخننگک۔
اینو ام بلوچ قومی آزادی نا دا جہد ٹی شہید آتا دِتر آک ءْ غازی تا قربانیک اریر۔اگہ بابو شیرو مری نا وڑنگاک ننے غان جونی وڑٹ جتاؤ ولے فکری ء ْ نظریاتی وڑاٹ داسکان نن تون ساڑی او۔

شہید آغا عابد شاہ بلوچ

S_GQ0Nkj

بلک بلوچ
آغا عابد شاہ بلوچ 1980ء کے دہائی میں بلوچستان کے علاقے پنجگورمیں ڈاکٹرسعیدعلی کے یہاں پیدا ہوئے۔ انہوں نے بنیادی تعلیم ماڈل سکول پنجگور سے حاصل کیا ۔ ڈگری کالج پنجگور سے انٹر میڈیٹ و گریجویٹ کی ڈگری حاصل کی اور سوشیالوجی کے شعبہ میں جامعہ بلوچستان سے ماسٹر کی ڈگری حاصل کی ۔اس دوران بلوچستان میں نوجوانوں کی سیاسی و سماجی شعور کے حوالے سے بی ایس او اہم کردار ادا کر رہا تھا۔ آغا عابد شاہ بھی بی ایس او کی عملی سیاست سے متاثر ہوکر 1993 ء کو باقاعدہ بی ایس او میں شمولیت اختیار کی۔ بی ایس او کا بلوچ سماج اور سیاست میں ہمیشہ سے ایک متحرک اور منظم کردار رہا ہے اور بی ایس او ہمیشہ پاکستان اور اس کے کاسہ لیسوں کے لیئے عملاً رکاوٹ رہاہے ۔ بی ایس او کے فعال اور منظم کردار کے سبب ریاست اور پارلیمانی سیاست کرنے والے ریاست کے کاسہ لیسوں کا ہمیشہ سے کوشش رہا ہے کہ بی ایس او کو غیر فعال کیا جائے اور ہمیشہ بی ایس او کے اندرونی معاملات میں مداخلت کی کوشش کیا اور بعض اوقات بی ایس او کو وقتی صورت متاثر کرنے میں کامیاب بھی رہے ہیں ۔جبکہ پارلیمانی سیاست کرنے والوں نے ہمیشہ اپنا لیے پاکٹ ونگ بنا رکھے اور ان پاکٹ ونگز کو بی ایس کے نام دیتے رہے ۔ لیکن حقیقی بی ایس او ہمیشہ ریاست اور اس کے کاسہ لیسوں کی مخالفت میں سب سے آگے تھا کیونکہ وہ صرف بلوچ قوم کی بقا اور شناخت کو بچانے کے لئے جد وجہد کر رہی تھی تو شہید آغا عابد نے بھی پارلیمانی اور باقی تمام دہڑوں کو مسترد کرتے ہوئے بی ایس او کے باشعور دوستوں ہمراہ ہوتے ہوئے اس نے یہ فیصلہ کیا کہ وہ اپنے قوم کی بقاء کی جنگ لڑے گے۔ اس لیئے اس نے حقیقی بی ایس او کی پلیٹ فارم سے سیاست شروع کی جوبلوچ قوم کی مستقبل اور بقا کی جنگ لڑ رہی تھی۔
وہ اپنے انتک محنت اور خلوص کی وجہ سے 2006 کی کونسل سیشن میں باری اکثریت سے ووٹ لیکر بی ایس او آزاد کی وائس چیئرمین منتخب ہوئے ۔انہوں نے اپنے قومی فکر علم وزانت اور محنت سے بی ایس او کو بلوچستان بھر میں فعال کرنے کی کوشش کی اور کسی حدتک اس میں کامیاب رہے۔ اسطرح وہ 2009 ء میں اسٹوڈنٹس سیاست کو خیرباد کرتے ہوئے بلوچ نیشنل مومنٹ (بی این ایم ) میں شامل ہوگئے بی این ایم کے سنٹرل کمیٹی کے ممبر کے عہدے میں ہو کر قومی جہد کو آگے لیجانے میں اہم کردار ادا کیا ۔آغا عابد شاہ نے تمپ میں شہید خالد اور شہید دلوش کے شہادت کے پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ جہد شعوری اور سائنسی بنیاد پر رواں دوا ں ہے۔ قومی جہد کے لیے نوجوان مختلف طریقے سے جہد کررہے ہیں ۔شہادت کے فلسفہ پر بات کرتے ہوے انہوں نے کہا کہ مرنا ایک بہت مشکل عمل ہے لیکن وہ سرمچار، وہ بلوچ نوجوان جو نظریاتی پختگی سے اپنے زندگیوں کا نظرانہ پیش کررہے ہیں اس سے ایک بات واضح ہوجاتی ہیں قومی آزادی جیسے عظیم مقصد کیلئے زندگیوں کو قربان کرنا ایک معمولی عمل ہے۔ انہوں نے مزہد کہا کہ بی ایس او (آزاد) قومی جہد میں بہت اہم کردار ادا کررہا ہے اور یہ جدو جہد آنے والی کل کی خوشحالی کے لیئے ہے۔ اس جدو جہد کی ہربلوچ کو حمایت کرنی چاہیے اور ہر بلوچ کو اس میں اپنا حصہ ڈالنا چاہئے ۔ہربلوچ چاہئے وہ لکھاری ہو، شاعر ہو، ادیب ہو، استاد ہو، اور زندگی کے تمام شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے اگر اپنی حیثیت کے مطابق اپنا حصہ ڈالے تو یہ میرا ایمان ہے کہ بلوچ جہد اپنی کامیابی طرف ایک قدم آگے بڑئیگی۔آغا اپنے زندگی میں قوم کی خوشحالی اور آزادی کیلئے ہمیشہ سرفہرست رہے ہیں۔ یقیناً آپ نے جو قربانیا دی ہیں وہ تاریخ میں رقم ہیں اور کھبی بھی فراموش نہیں کیے جائینگے ۔آغا طلبہ سیاست سے لیکر عوامی سیاست تک بلوچ قومی آزادی کے موقف پر ڈٹے رہے اور ان کی بلوچ جہد سے انتاء کی لگاؤ نے دشمن کی نیندیں حرام کردی تھے۔ دشمن ان سے خوف، خطرہ محسوس کررہاتھا کیونکہ وہ شعوراور فکر کو پروان چڑا رہے تھے ۔
اسطرح پاکستان کے خفیہ ایجنسیوں اورفورسز نے 15 اگست 2010 کو انہیں ان کے دوست ماسٹر سفیر بلوچ، ماسٹر عبدالستار کے ہمراہ دن دھاڑیں چتکان بازار پنجگور سے اغوا کر دیا۔ 9 ماہ تک انہیں ٹارچرسیل میں دوستوں کے ہمرہ اذیتں دیتے رہیں لیکن وطن مادر کے بہادر بیٹوں نے دشمن کے سامنے سر تسلیم خم کرنے سے انکار کی وجہ سے انہیں مارکر پنجگور کے کسی ویرانے میں پیھنک دیئے تھے ۔11 مئی 2011 کو ان کی گولیوں سے چلنی پرانی لاشیں ان کے ورثہ کو ملے جنہیں بعد میں پنجگور کے علاقے چتکان میں مادر سرزمین کے آغوش میں دفنا دیئے ۔

انٹرویو بابائے بلوچ سردار خیر بخش مری

babamarri-interview.jpegوینگاس یاسمین Veengas Yasmeen ایک ممتاز جرنلسٹ ہے وہ انگلش” ڈیلی دی فرٹےئر پوسٹ “، “ماہانہ دی بولان وائس”اورسندھی “ڈیلی عبرت میں آرٹیکل لکھتی ہیں۔ انہوں نے حال ہی میں ممتاز قوم پرست رہنما بابائے بلوچ سردار خیر بخش مری کا انٹرویو کیا۔

یہ انٹرویو انگلش روزنامہ “دی فرٹےئر پوسٹ 09-05-2013 کو شائع ہوا جس میں کا مکمل اردو ترجمہ قارئین کیلئے شائع کیا جارہا ہے۔
جناب خیر بخش مری نہیں بولتے ہیں اور جب بولتے ہیں تو بہت سے چہر ے ناراض ہوجاتے ہیں وہ کیونکر بولتے ہیں کیا دیکھتے ہیں اور سوچتے ہیں ؟اور بلوچستان انکی نظر میں کیا سوچتا ہے۔
سوال :۔ کیا آپ سمجھتے ہیں کہ دنیا اب تک کولڈ وار میں ہے اور آپ کاابھی تک سیاسی دنیا کے بارے میںnawabmarri-interview.jpg کیا تجزیہ ہے؟
جواب :۔ دنیا کبھی جنگ سے باہر نہیں نکلی ہے، بعض اوقات یہ گرم اور کبھی ٹھنڈی ہوتی ہے ۔ تمام لوگ لڑتے ہیں جنگ میں ، جیسا برطانیہ ، رومن ،صرف یہ دونوں نہیں اس سے پہلے بھی بہت سارے لوگ لڑتے رہے تھے اور دنیا کے دوسرے لوگ بھی جو کو

لڈ وار میں رہے۔
سوال : ۔ کیا دنیا سرد جنگ یا گرم جنگ میں ہے ؟
جواب:۔ کچھ لوگ سرد جنگ میں ہیں اور ہم جیسے لوگ گرم جنگ میں ہیں۔
سوال :۔ یہ گرم جنگ آپ کے لئے کیسی ہے ۔
جواب:۔ (مسکرا کر )بلوچستان میں آپریشن ہورہا ہے ہمیں لاشیں مل رہی ہیں میں یہ کہوں گا کہ یہی تو گرم جنگ ہے ۔ ہمارے لئے ۔
سوال :۔پاکستان کی موجودہ صورتحال یعنی 2013کے الیکشن کے بارے میں آپکی رائے کیا ہے آپ اس سے متفق ہیں یا نہیں ہیں؟
جواب:۔ میں پاکستان کے وجود کو قائم ہوتا نہیں دیکھتا۔
سوال : ۔ لیکن یہ عمل جاری ہے ہر چند کہ ماضی میں آپ بھی اس عمل کا حصہ رہ چکے ہیں آپ کا اس کے بارے میں کیا خیال ہے اور کیا مستقبل کی کوئی گورنمنٹ ہوگی ؟
جواب:۔ میں اسے نہیں سمجھتااس لئے کیا دیکھ سکھونگا۔
سوال : الیکشن 2013؟
جواب:۔ میں پاکستان کے وجود کو قائم ہوتا ہوا نہیں دیکھتا ہوں ۔
سوال :۔ اچھا یہ آپ کا پوائنٹ آف ویو ہے۔ آجکل یہ نظام سیاسی عمل کا ہے اور الیکشن چاروں صوبوں میں ہور ہے ہیں اگر الیکشن ہوگئے اور بلوچستان اسمبلی منتخب ہوتی ہے اور دنیا دیکھتی ہے کہ بلوچستان اسمبلی منتخب ہوچکی ہے اور پھر آپ کہاں کھڑے ہونگے کیونکہ یہ سیاسی عمل ہے اور کوئی بھی اس سیاسی عمل کو رد نہیں کرسکتا ۔ کیا آپ یہ خیال نہیں کرتے؟

nawabmarri2
جواب  بات کرنے دوران خیر بخش مری راضی نہیں دکھائی دے رہیں کہ جواب دیاجائے پھر کہا )مجھے کوئی اندازہ نہیں ہے یا میں اپنے آپ کو بیوقوف یا ہوش مند بنا رہا ہوں ۔ جیسا کہ میں آپ کو بتا چکا ہوں کہ یہ وہ ملک ہے جس کا کوئی وجود نہیں کیا میں اسے ملک کہوں یا گیم یا روبوٹ جسکا اب تک آپریشن ہورہا ہے ۔بنگال کہتا ہے کہ پاکستان امریکہ کا ایجنٹ ہے یا سامراجی طاقت ہے ۔ پاکستان کہاں ہے میں اسے کس طرح پکارو ں، یہ فوج ہے یا پنجاب ہے مجھے افسوس ہے کیا یہ تمہارا ہے یا میراسندھی جملے کا حوالہ دیتے ہوئے یہی کہ سندھی میں سنتے ہیں کہ آپ قوم کو کیا پیغام دینا چاہتے ہیں؟ لیکن پاکستان ہے کہاں پہلے اسے برطانیہ نے چلایا اب امریکہ چلارہا ہے۔اسی لئے کہتا ہوں کہ کونسا پاکستان ہے۔جسے آپ کہہ رہے ہیں۔
سوال :۔ جیسا کہ آپ کہہ رہے ہیں کہ پاکستان کا کوئی وجود نہیں ہے اور ابھی تک امریکہ اور دیگر قوتوں نے اسے سپورٹ کیاہوا ہے ؟
جواب؛۔ میر ا مطلب ہے کہ یہ ملک یا ریاست جہاں پنجابی اور مہاجر اپنے آپ کو قوم کہتے ہیں کونسی قوم کا ملک ہے یہاں صرف طاقتورکا حکم چلتا ہے ۔
سوال :۔ آپ بین الاقوامی قوتوں کا تذکرہ کرتے ہیں ۔آپ کیسا دیکھتے ہیں جب بین الاقوامی طاقت کبھی پاکستان کو لولی پاپ دیتی ہے اور قوم پرستوں کو چائے کی دعوت تو کیا دوغلی پالیسی نہیں ہے انکی؟
جواب:۔ میں نہیں سمجھتا کہ کون سپورٹ کررہا ہے ۔
سوال :۔ ایک نرم رویہ قوم پرستوں کی طرف جوکہ باہر ممالک میں رہتے ہیں جیسا کہ آپ کا بیٹا حیر بیار مری جواب:۔ (مسکر ا کر)میرے خیال میں یہ ایک اکیلا آدمی ہے جوکہ اخلاقی امداد کرتا ہے ۔

nawabmarri1

سوال:۔ کیا آپ یہ یقین نہیں کرتے کہ امریکہ میں تبدیلی ہورہی ہے اور اب لوگ اوپر آرہے ہیں جو کہ قوم پرستوں کی سیاست کو سپورٹ کرتے ہیں ۔
جواب:۔ (ہنستے ہوئے) میں اس قابل نہیں کہ کچھ کہوں لیکن اب یہ ہورہا ہے ۔
سوال:۔ تب آپ یہ خیال نہیں کرتے کہ بین الاقوامی طاقت بطور بلیک میلنگ یہ ٹول استعمال کررہی ہے اگر آپ ان کے پیچھے نہیں چلیں گے تو وہ قوم پرستوں کو سپورٹ کرینگے۔
جواب:۔ (زور دیتے ہوئے کہتے ہیں)انہیں بلیک میلنگ کرنے کی کیا ضرورت ہے۔ وہ ایک ہی دھمکی سے جلد خوفزدہ ہوجاتے ہیں جیسا کہ اب چائنا انہیں آنکھیں دکھا رہا ہے۔
سوال:۔وہ کون؟
جواب:۔ یہ امریکہ کے غلام
سوال: ۔ آپ کس طرح سے دیکھتے ہیں مشرف ڈکٹیٹر کے کیس کو، جو کہ عدالت میں ہے یہ پہلی بار پاکستان کی تاریخ میں ہورہا ہے جیسا کہ اس کے محل کو سب جیل قرار دیا گیا ہے ۔کیا انتظامیہ اس مقدمہ کو استعمال کرنا چاہتی ہے، ایک ٹشو پیپر کے طورپر تاکہ اس کے چہرے کو صاف کیاجائے ۔
جواب:۔ بلوچستان کیلئے ججز حکم دے چکے ہیں لیکن ان پر توجہ کون دے رہا ہے؟ آپ اسکو کیوں اہمیت دے رہے ہیں؟
سوا ل پر جواب: ۔ تمام دنیا اس کو اہمیت دے رہی ہے ۔
جواب ۔ (تب مسکراتے ہوئے) یہ دنیا بلی ، چوہے ،کتوں اور شیروں کی ہے یہ دنیا تقسیم ہے طاقتور لوگ قتل کرتے ہیں چوہے اور بلیوں کو آپ دیکھ سکتے ہیں سعودی عرب میں اوربین الاقوامی طاقتوروں میں کہ وہ کیا قوت رکھتے ہیں۔
سوال :۔ تو آپ مشرف کے کیس کو اہمیت نہیں دیتے ؟
جواب:۔ مشرف کبھی کہتا ہے کہ سب کچھ آرمی نے کیا ہے اور کبھی کہتا ہے کہ یہ صرف ایک آدمی نے کیا ہے۔ تو یہ کیا ہے؟یہ کس نے کیا ہے کیا سب ان میں ملوث تھے؟ آپ اس طرح کے سوال کیوں پوچھتے ہو
(سوال کرنے والا جواب دیتا ہے) دنیا جاننا چاہتی ہے مشرف کے کیس کو ۔
جواب :۔ کونسی دنیا
سوال :۔آخر کار میں نہیں کہہ سکتی چوہے اور بلی کی دنیا ،میں کہہ رہی ہوں میرے جرنلزازم کی دنیا کو ۔ اُسکا کیس کچھ بھی نہیں آپ کے لئے ۔ جب کہ مشرف نے ایک خونی پالیسی اپنائی بلوچستان میں اب تک کسی بھی ڈکٹیٹر کو کورٹ میں حاضر نہیں کیا گیا یہ پہلا موقع ہے کہ مشرف اند ر ہے کیا ابھی تک یہ آپ کو تبدیلی نظر نہیں آتی ہے خفیہ ہاتھ جس کواسٹبلشمنٹ کہتے ہیں 1948سے بلوچستان میں بہت بُرا کھیل کھیل رہا اور ایک ڈکٹیٹرجیل میں ہے کیا یہ بہت بڑا ڈرامہ ہے ؟
جواب:۔میرے لفظوں میں یہ کوئی تبدیلی نہیں ہے ہاں البتہ تم اسے کہہ سکتی ہو کہ یہ ایک ڈرامہ ہے
سوال : اگر مشرف آپ کے ہاتھ آجائے آپ کیا کرو گے ؟
جواب:۔وہ کبھی بھی میرے ہاتھ میں نہیں دینگے اگر وہ ہاتھ آیا تو پھر سوچوں گاکہ میں اسکے ساتھ کیا کروں گا۔
سوال :۔ مشرف کہتا ہے کہ میں نے بے نظیر اور اکبر بگٹی کو قتل نہیں کیا ہے تو پھر کس نے کیا ہے ؟
جواب:۔ اگر اُس نے نہیں کیا ہے تو پھر ہوسکتا ہے کہ وہ اشارہ دے رہا ہو کہ پٹھانوں نے پنجابیوں نے یا آرمی نے (کیونکہ پٹھان بھی تو فوج میں ہیں ) جبکہ ہم بلوچ تو محروم ہیں۔پھر اچانک کہتے ہیں نیا پاکستان میں تمیز نہیں کرسکتا کہ لوگ یہ کہتے ہیں کہ نیا پاکستان بنائیں گے تو پھر آخر بتائیں کہ پرانا پاکستان کیا تھا۔ کیسے موازنہ کروگے ؟
(سوال کرنے والی جواب دیتی ہے)یہ ایک سیاسی نعرہ ہے اب اس پر کچھ نہیں کہتے ہیں ۔
سوال:۔ جناب اختر مینگل 6نکات لائے ہیں اور جب لوگ ان کے 6نکات کو مجیب الرحمن سے موازنہ کررہے ہیں کیا کہتے ہیں آپ اس پر؟
جواب:۔ حقیقی نقطے کو بھول گئے پہلے وہ اپنی حیثیت ظاہر کریں ۔بلوچ باہر کے ممالک میں ہیں ۔ بلوچ پہاڑوں میں ہیں اور بلوچستان میں رہتے ہیں جبکہ اخترمینگل” سرکا ر پاکستان “کے آدمی ہیں ۔
سوال:۔ کونسی سرکار گورنمنٹ؟
جواب:۔ وہ گورنمنٹ جو کہ گورنمنٹ نہیں ہے لیکن گورنمنٹ کہلاتی ہے ۔
سوال:۔ اختر مینگل نے کہا کہ میرے والدکی خواہش تھی۔۔KBMنے مداخلت کی اور کہا کہ آپ مجھے اور انہیں لڑانا چاہتے ہیں
سوال پر جواب:۔ نہیں مری صاحب میں تاریخی ریکارڈ بنانا چاہتی ہوں ۔ جیسا کہ آپ کے پاس تاریخی حوالہ ہے اور آپ اُ سے محفوظ بنانا چاہتے ہیں تاریخ کے اوراق پر ۔
جواب :۔مسکراتے ہوئے اچھا تو یہ جوا ہے ۔
سوال :۔ نہیں ۔ اچھا ، زندگی بذات خود جوا ہے ۔ میں آپ سے پوچھنا چاہتی ہوں کہ بھٹو نے متعارف کرایا قانون سردار ی نظام کے خلاف1976میں لیکن اختر مینگل نے کہا کہ میرا والد راضی تھا کہ سرداری نظام کو ختم کیاجائے جو کہ وہ نہیں کرسکا بھٹو کی وجہ سے کیا آپ کو یقین ہے کہ مینگل راضی ہے اس نظام کو ختم کرنے میں؟
جواب:۔ سرداری نظام صدیوں پر محیط ہے اسے مشکل سے ختم کیاجاسکتا ہے ۔جبکہ یہ بہت وقت لے گا اور اسے جدوجہد کی ضرورت ہے ۔ جو کہ سرداری نظام کے خلاف ہو۔ بھٹو نے کہا تھا کہ جاگیر دارانہ نظام ختم کردونگا لیکن ابھی تک جاگیردارانہ نظام فیوڈل لارڈز کی طاقت کے ساتھ لاگو ہے ۔ صرف سردار ہی کیوں گنے جاتے ہیں ۔یہاں پر چوہدری ، خان ، وڈیرے بھی ہیں لوگ مجھ سے سرداری نظام کے متعلق پوچھتے ہیں ہم اسے ختم کرنا چاہتے ہیں لیکن اس کے لئے تو انقلاب کی ضرورت ہے
سوال :۔ ہم پوچھنا چاہتے ہیں کہ یہاں جاگیردارانہ نظام خاندانی ٹھوس پن کے ساتھ رائج ہے اگر بلوچ انقلاب میں داخل ہوتے ہیں تو کیا قبائلی نظام ختم ہوجائے گا؟
جواب :۔ شاید یہ ختم ہونے میں وقت لے گا۔
سوال :۔ کیا آپ بُرا مانتے ہیں اگر لوگ آپ کو سردار کہیں تو؟
جواب :۔ سردار تہذیبی اور ثقافتی نام ہے آج کل لوگ مجھے نواب کہتے ہیں یہ برٹش گورنمنٹ کی طرف سے تھا لیکن میں برٹش دورِ حکومت میں نہیں تھا۔
سوال : ۔ اگر لوگ آپ کو نواب کہیں تو کیا آپ کو غصہ آئے گا؟
جواب:۔ نہیں ، تمام غصے اب ٹھنڈئے ہوگئے ہیں ۔
سوال:۔ ہم سن رہے ہیں F.I.Rبے نظیر بھٹو مرحومہ اور اکبر بگٹی مرحوم کے لئے لیکن بالا چ مری کے لئے کوئی F.I.Rنہیں
جواب:۔ اگر میں کچھ بے نظیر قتل کیس کے لئے کہوں تو سندھی ناراض ہوجائیں گے ۔ اکبر بگٹی اور بالا چ دونوں کو مشترکہ مفادات کے حصول کے لئے قتل کیاگیا ۔
سوال:۔ بے نظیر کو کس نے قتل کیا؟
جواب:۔ مجھے شک ہے۔میرے پاس گواہ یا شہادت نہیں لیکن میں کہہ سکتا ہوں کہ بے نظیر کو مولویوں نے قتل کیا۔
سوال :۔ آپ کا خیال ہے کہ دہشت گرد ی کے نام پر اسے قتل کیاگیا اور دہشتگردی کی کوئی F.I.Rنہیں ہوتی ؟
جواب : میرے خیال میں دہشت گردی کا مطلب یہ ہے کہ جب لو گ آپ کے نام سے خوف زدہ ہوں۔یہ سرکار کے آلہ کار ہیں اور یہ ٹارگٹ کلنگ ہے انتہاپسند (ملا) بھی ٹارگٹ کلنگ کررہے ہیں ۔ دہشت گردی تو بلوچستان میں ہے جہاں ہم بلوچ روزانہ لاشیں وصول کررہے ہیں آپ سوچ بھی نہیں سکتے جو دہشت گردی بلوچستان میں ہورہی ہے۔
سوال :۔ بلوچستان جل رہا ہے اوراب ایک الیکشن ہونے جارہے ہیں ؟
جواب:۔(مسکراتے ہوئے) کونسے الیکشن؟
سوال:۔ آپ نے دہشت گردی کے متعلق کہا ہے ۔ حالیہ دنوں میں بلوچستان میں ہزارہ کمیونٹی کو لشکر جھنگوی کی جانب سے دہشت گرد حملوں کا سامنا ہو اس کے پیچھے کیا عوامل کار فرما ہیں کچھ لوگ کہتے ہیں یہ پہلے سے طے شدہ ہے اور بلوچستان کے حقیقی ایشو سے توجہ ہٹانے کے لئے ہے ؟
جواب:۔ یہ گورنمنٹ کے قریبی لوگ ہیں ایران اور سعودیہ عربیہ کے بلوچستان میں اپنے مفادات ہیں ان کے لئے بلوچ بہت بڑی رکاوٹ ہیں ۔وہ سمجھتے ہیں اگر بلوچستان پاکستان کے ساتھ قائم نہیں رہتا تو پھر پاکستان بھی نہیں رہے گا۔
سوال : ۔ آپ نے بڑا وقت افغانستان میں گذارا ہے کیا آپ فرق بتا سکتے ہیں کہ دیسی افغان اور طالبان یا مجاہدین کیا یہ دونوں طرف سے سکّے کے ایک ہی رخ ہیں؟
جواب :۔ دیسی افغان کونساہزارہ ، پشتون ، ازبک یا تاجک
سوال :۔ پھر آپ کس کو کہو گے ؟
جواب:۔ تو آپ دوبارہ مجھے ان سے لڑواؤ گے ۔
سوال :۔ نہیں صرف واضح کرنا چاہتی ہوں ۔
جواب:۔ میں کیا کہہ سکتا ہوں ۔
سوال :۔ افغانستا ن میں کچھ قبائلی انڈیا کے قریب ہیں ؟
جواب:۔ اگر میں سوال کررہاہوتا تو آپ کا جواب کیا ہوتا۔
سوا ل  مسکراتے ہوئے )نہیں شکریہ میں سوال پوچھ رہی ہوں۔
جواب:۔ کیا آپ مجھے ان سے لڑانا چاہتی ہیں۔
سوال: ۔ اچھا تو پھر کیا ڈرامہ ہے؟
جواب:۔ ظاہر ہے انڈیا پاکستان کو ٹف ٹائم دے گا اور جن قوموں کے بارے میں آپ جو پوچھ رہی ہیں میرے خیال میں ان پر لوگوں کو تحقیق کرنا ہوگا۔
سوال :۔ میں نے پڑھا ہے کہ اگر انڈ یا اور ایران چابہارمیں ایئر پورٹ بنا تے ہیں اور پھر اسے ایران اور افغانستا ن سے ملائیں گے تو پھر پاکستان کے راستے کی کوئی اہمیت نہیں ہوگی ۔ کیا یہ تبدیلی بنائے گی ساؤتھ ایشیاء میں ؟
جواب:۔ پاکستان کہاں ہے ۔یہ صرف طاقتور بین الاقوامی کھلاڑی ہیں ۔
سوال :۔ آپ پاکستان کے وجود کو مسترد کرتے ہیں اور اگر الیکشن ہوتے ہیں اور پھر پاکستان گورنمنٹ کہی گی کہ بلوچ لوگ پارلیمنٹ کے نظام سے راضی ہیں اور ہر ووٹ کی اہمیت ہے جو کہ سیاسی عمل کا حصہ ہے ۔ آپ کیسے سامنا کریں گے ؟
جواب:۔ پاکستان کہتا ہے کہ بلوچ مسلمان اور ہمارے دوست ہیں کیا کسی کے پاس ثبوت ہیںیہ تو وقتی طور پر چل رہا ہے ہم حامد کرزئی کی گورنمنٹ کو دیکھتے ہیں افغانستان میں کیا ہم کہہ سکتے ہیں کہ یہ عوام کی گورنمنٹ ہے ۔
سوال :۔ لوگ کہتے ہیں کہ جو پہاڑوں میں ہیں وہ جلد تھک جائینگے کیا واقعی ایسا ہی ہوگا؟
جواب:۔ اگر نوجوان تھک جائیں تو ہم بوڑھے بہت ہی تھک جائینگے ۔چلیں دیکھتے ہیں کیا ہم تھک جائیں گے یا پھر پہاڑوں میں رہ جائیں گے۔
سوال : ۔ اگر اختر مینگل پارلیمنٹ کا حصہ بنتا ہے اور کہتا ہے کہ بلوچوں کے مسائل کا حل پارلیمنٹ میں ہے تو کیا آپ کا رویہ ان کے لئے نرم ہوگا یا پھر سخت گیر موقف ۔ جو کہ اسٹبلشمنٹ کے ساتھ ہے ؟
جواب:۔ بلوچ اٹھ کھڑے ہوئے ہیں ایسے ہی اٹھ کھڑے رہیں گے ، صرف ایٹم بم ہی انہیں ختم کرسکتے ہیں ۔
سوال :۔حل کہاں ہے پہاڑوں میں یا مذاکرات کی میز پر ؟
جواب:۔ مجھے معلوم نہیں اور نہ ہی میں کہہ سکتا ہوں لیکن اگر ہم مذاکرات کے میز پرآتے ہیں اورتحریک اسکے لئے راستہ بناتی ہے تب ہم دیکھیں گے ۔ بہر حال یہ علاقہ بہت ہی ڈسٹرب ہے اور اس علاقہ کو ہم تباہی کا علاقہ کہہ سکتے ہیں کون جیتے گا کون ہارے گا ۔ایران ،چائنا اور افغانستان میں کبھی بھی امن حاصل نہیں کرے گا وہ کبھی بھی اس علاقے میں امن سے نہیں بیٹھے گا۔
سوال :۔یہ کون کرے گا ؟
جواب:۔وہ لوگ جو کہ بلوچستان میں کررہے ہیں ۔
سوال :۔ آپ کا مطلب یہ ہے کہ جو پہاڑوں میں ہیں وہ انہیں کبھی بھی پرسکون راستہ نہیں دینگے؟
جواب میں کچھ بھی نہیں کہہ سکتا ہوں ۔
سوال ؛۔آپ نیپ کے ممبر بھی رہے تھے جس پر بعدمیں پابندی لگ گئی تھی اورآپ افغانستان چلے گئے تھے اس کے بارے میں آپ کچھ بتانا پسند کرینگے ؟
جواب:۔ وہ میری پرائمری لائف کے دن تھے ۔
سوال:۔ کیا افغانستان کے بلوچستان میں اثرات ہیں ؟
جواب: ۔یقیناًاثرات ہیں لیکن اب ایران اور افغانستان دونوں بلوچستان کو قید کرنا چاہتے ہیں کیونکہ افغانستان ، ایران ، سندھ اور تمام جگہوں پر بلوچ قوم کی زمین موجود ہے اورسندھ جس کے بارے میں جی ایم سید نے کہا تھا کہ زمینی سرحدات کے حوالے سے بات نہ کی جائے ۔ ایک دفعہ بالا چ نے بھی کراچی کے بارے میں کہا تھا کہ کراچی بھی ہماری مقبوضہ زمین ہے ۔ لیکن سندھیوں نے کہا کہ سرحدات کو ڈسٹر ب نہ کیاجائے ۔ فی الحال اس موضوع پر خاموشی اختیار کرنے میں ہی اتفاق رائے بہتر ہے ۔
سوال:۔ لاپتہ افراد کو بازیاب کرانے کا حل کیا ہے ۔ اور کہاں سے بازیاب ہونگے ؟
جواب :۔ انہیں قبرستانوں سے واپس لایاجائے گا۔
سوال : کون لائے گا۔
جواب:۔ امریکہ کے غلام ۔جو خود کہہ چکے ہیں کہ مہاجر جناح صوبے کا کلیم (claim)کرتے ہیں۔
سوال:۔مثال کے طورپر اگر بلوچستان آزاد ہوتا ہے اور پاکستان تقسیم ہوتا ہے آپ کاکیا خیا ل ہے کہ ریاستوں میں لڑائی شروع ہوگی۔
جواب:۔میرا مطلب ہے کہ سول وار ہوگا۔ جیسا کہ ماضی میں اس براعظم میں دیکھا گیا تھا ۔ جبکہ ہم اس ریجن میں مسائل کا سامنا کررہے ہیں ۔
سوال:۔ آپ کا مطلب سندھی اور بلوچوں کے درمیان ۔
جواب۔ نہیں ریاست اورریاست کے درمیان
سوال:۔ میں کہنا چاہا رہی ہوں اگر کسی طرح پاکستان تقسیم ہوتا ہے اور تمام ریاستیں آزاد ہوتی ہیں جو کہ ایک دوسرے کے ساتھ منسلک ہیں ؟ تو کیا وسائل کیلئے جنگ ہوسکتی ہے؟
جواب:۔ ہاں جنگیں اس علاقہ میں ہوتی رہی ہیں تمام بڑے طاقتور کھلاڑیوں کو دوسروں کے وسائل پر اختیار حاصل ہے۔
سوال:۔ آپ کیوں امریکہ پر تنقید کرتے ہیں جبکہ وہ بلوچ جو بیرونی ممالک میں رہتے ہیں وہ ان جمہوری ممالک کے بارے میں نرم رویہ رکھتے ہیں جبکہ آپ مارکسٹسوں کی پیروی کرتے ہیں ۔ کیا آپ اور ان بلوچوں کے درمیان کمیونیکشن گیپ موجود ہے؟
جواب:۔میں صاف اور سیدھی گفتگو کرتا ہوں آپ جیسے لوگ آتے ہیں مجھ سے بات چیت کرتے ہیں ۔امریکہ اور روس دونوں شیر ہیں اور طاقتور کمزور کو نقصان پہنچاتے ہیں ۔ شیر کبھی چوہے نہیں کھاتا بلکہ چوہوں کو کوئی اور کھاتا ہے۔
سوال:۔ یہاں جنگ ہوگی یا امن
جواب:۔ شاید جنگ اور امن دونوں
سوال:۔ لوگ پوچھتے ہیں کہ بلوچ لیڈر ترقیاتی کام نہیں کرتے ہیں جبکہ مشرف گورنمنٹ اور پی پی پی گورنمنٹ سے بہت سے فنڈز ملے ۔
جواب:۔ طاقت ور ہمیشہ کمزور کو کہتے ہیں ہم نے انہیں ترقی دی ہوئی ہے وہ ہمیں کمزور بنا رہے ہیں اور کالونیز اور وہ کیوں کالونی بناتے ہیں ہمیں غلام بنانے کیلئے کیا کسی حکمراں نے اپنے گھر سے رقم دی ہے اور کون دیتا ہے ہسپتال اور سڑکیں جو کہ غریبوں کیلئے ہوں۔جب برطانیہ آیا اور انڈیا کو طلائی چڑیا (سونے کی چڑیا) کہا اور لوٹنے کے بعد اسی خطے کی چڑیا کو بغیر بال وپر کہا ۔
سوال : ۔ اکثر لوگ کہتے ہیں کہ قبائلی لوگ ترقی میں رکاوٹ بنتے ہیں ؟
جواب:۔ قبائلی طاقتور بننے سے پہلے بے یارومددگار ہیں اور یہ ان کے غلام ہیں ایک برطانوی شخص سنڈیمن نے دلال چاہا اور کئی لوگوں نے دلال بن کر ان کی مدد کی ۔
سوال :۔ مہذب دنیا دہشت گردی کے خلاف ہے لیکن بجائے اسکے کہ دہشت گردی ختم ہو دہشت گرد غیر ریاستی (Non State) ایکٹر ہیں جو کہ مملکت کے کرتا دھرتا سے زیاد ہ طاقتور ہیں کیا وجہ ہے یہ دنیا میں اُبھر رہے ہیں ؟
جواب:۔بین الاقوامی طاقتور کھلاڑی چائنا ، روس، یورپ ، امریکہ بذات خود دہشت گرد ہیں اور یہی دہشت گرد بھی پیدا کررہے ہیں ۔
سوال؛ ۔ آپ سعودی عربیہ کے کردار کو کہاں رکھتے ہو؟
جواب:۔ سعود ی بھی تو USAکے غلام ہیں ۔
سوال:۔کیا آپ یقین رکھتے ہیں کہ روس اب بھی خاموش رہے گا جبکہ امریکہ افغانستان میں داخل ہوگیا ہے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ شروع کی ہوئی ہے۔ کیونکہ ماضی میں مجاہدین کے دور میں رشیا کو افغانستان میں شکست ہوئی تھی؟
جواب:۔ مجھے یقین نہیں لیکن میری خواھش ہے کہ روس شاید امریکہ کیلئے مسائل کھڑے کریگا کیونکہ یہ انسانی جبلت ہے۔
سوال :۔ صرف افغانستان ہی کیوں برطانیہ ، روس امریکہ کی محبوب ترین سرزمین ہیں۔
جواب:۔ میں نے سنا ہے کہ یہ افغانستان کے ذریعے گرم پانی تک پہنچنے کے خواہش مند ہیں اور آپ نے سینٹرل ایشیا اور ساؤتھ ایشیا کے نا م لئے ہیں یہا ں کی دولت پر ان کی نظر ہے۔
سوال : ۔ آپ صرف امریکہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہیں NATOبھی تو طاقتور کھلاڑی رکھتے ہیں یہ امریکہ فوبیہ تو نہیں ؟
جواب:۔(ہنستے ہوئے)ہاں ہمارے بہت سے بادشاہ ہیں لیکن حتمی فیصلہ امریکہ کرتا ہے اس لئے تنقید کرتا ہوں ۔ آپ کیوں بین الاقوامی سوالات کررہی ہیں ؟
(سوال کرنے والی کا جواب) میں آپ کی تنقید یہ سن کر حیران ہو جاتی ہوں جبکہ قوم پرستوں کی سیاست کے لئے نرم گوشہ بین الاقوامی طاقت میں ہوتا ہے کیا آپ اسے مسترد کر دیں گے جب بین الاقوامی طاقتور ملک بلوچوں کو سپورٹ کرتا ہے (لیڈر) جو کہ اب بھی باہر کے ممالک میں رہائش پذیر ہیں جب کہ بلوچستان کیس بین الاقوامی منظر پر آیا ہے ۔
سوال:۔جبکہ ایک کو تنقید کرتے ہوئے دوسروں کو چھوڑ دیتے ہیں مثال کے طور پر یہاں تمام جاگیردار لوٹ کھسوٹ کررہے ہیں جبکہ آپ ایک اور صرف ایک کو تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں کیا یہ انصاف ہے ؟
جواب:۔ کیا دنیا انصاف رکھتی ہے آپ مجھے کیوں زحمت دیتی ہیں ہو۔
سوال :۔ تو پھر بلوچوں کو کون سپورٹ کرتا ہے ؟
جواب :۔ آپ کے خیال میں کون اور کون ہوگا۔
سوال:۔ مجھے یہ وجہ معلوم نہیں میں پوچھ رہی ہوں ؟
جواب:۔ کیا میں جھوٹ بولوں یا سچ۔
سوال:۔ مجھے یقین ہے کہ آپ سچ بولیں گے آپ اپنے اصولوں پر قائم رہنے والے رہنماہیں ہاں ہم پوچھتے ہیں کہ ہمیں شک ہے کہ انڈیا افغانستان میں ہے تو شاید انڈیا سپورٹ کرتا ہے؟
جواب:۔ کیا انڈیا صرف بلوچستان کیلئے ہے ۔ میں قیاس کرتا ہوں انڈیا وہاں پر صرف تجارت اور راستے کیلئے ہے۔
سوال:۔کیا یہ ممکن ہے کہ انڈیا ساؤتھ ایشیا میں چائنا سے زیادہ اختیار حاصل کرے؟
جواب:۔شاید، اگر بین الاقوامی طاقتیں اسکی مدد کریں ۔
سوال:۔انڈیا یا چائنا؟
جواب:۔ میں مارکیٹ جاتا ہوں تو چائناکی چیزیں نظر آتی ہیں ۔ یہی چائنا ہے جو ہمارا سونا بھی لے جارہا ہے اور ہماری پورٹ پر بھی اختیار حاصل کرچکا ہے۔
سوال:۔کیا بھٹو ہمیشہ اس شخص سے برہم رہے جو کہ ان سے متفق نہیں تھے یا پھر صرف ملٹری نے یہ سب لانچ کیا ؟
جواب:۔ یہ بھٹو اور ملٹر ی دونوں نے کیا اور کوشش کی کہ اپنی حکومت کو جائز بنایاجائے ۔ پھر بھٹو نے نعرہ لگایا روٹی کپڑا اور مکان کا اور اس پر کیا عمل کیا ۔ اور اب غریب آدمی باقی نہیں رہے اور بلاول بھٹو زرداری وہ کیا کرچکے ہیں ۔
سوال: ۔ ہم دوبارہ تاریخ کی طرف چلتے ہیں جیسا کہ ہمارے علم میں ہے کہ بلوچستان میں ذوالفقار علی بھٹو کے ملٹر ی آپریشن پر تنقید کی جاتی ہے کیا وہ بلوچستان میں آپریشن کرانے پر آزاد تھا؟
جواب:۔ میں نہیں سمجھتا کہ وہ بلوچستان میں ملٹری آپریشن کرنے پر آزاد تھا لیکن وہ بہت چالاک اور ظالم شخص تھا۔
سوال:۔ کیا بھٹو بنگال کے قضیے میں ملوث تھا۔
جواب:۔ میں نے سنا ہے۔
سوال:۔ آپ کیوں کہہ رہے ہیں؟ کہ آپ نے سنا ہے۔ آپ اُس وقت ان حالات کا تجزیہ کرتے تھے ۔؟
جواب:۔ حقیقت اور تجزیہ میں فرق ہوتا ہے جیسا کہ لوگ کہتے ہیں کہ امریکہ اور انڈیا ہماری مدد کرتا ہے لیکن کس نوعیت کی ہم مدد لے رہیں ؟ ہم غلام نہیں بننا چاہتے ہیں آزادی حاصل کرنے سے پہلے یہ مدد کی قسم نہیں چاہیے ہم زندہ رہیں یا مرجائیں ۔
سوال:۔ بنگال میں کون ملوث تھا کیا انہیں مجیب کے چھ نکات ہضم نہیں ہوئے یا وہ ناانصافی کو برقرار رکھنا چاہتے تھے؟
جواب:۔ وہ بنگال کی غلامی کو مزید برقرار رکھنا چاہتے تھے لیکن انڈیا نے انہیں آزاد کرایا۔
سوال:۔ آپ نے آزادی کا لفظ استعمال کیا کیا بنگال غلام تھا؟
جواب:۔ اگر انڈیا نہ آتا تو بنگال کو غلام ہی رکھتے۔
سوال:۔ آپ کیا محسوس کرتے ہوئے ڈکٹیٹر شپ اور جمہوریت جو کہ پاکستان میں ہے ؟
جواب:۔کیا ہمیں پارلیمنٹ کی ضرورت ہے جیسا کہ اختر مینگل کہتا ہے یا کہ ہمیں علاج کی ضرورت ہے انہوں نے ڈکٹیٹر شپ کو قانون بنا کر جائز قرار دیا ان کی پانچ سال کی جمہوریت نا انصافی پر مشتمل ہے ۔ بغیر فوج کے وہ کچھ کرنے کے قابل نہیں ہیں فوج کی اپنی حد ہوتی ہے جو کہ یہاں نہیں ہے ۔
سوال :۔2013الیکشن آپ کے نظر میں ؟
جواب:۔ پہلے وہ ہر حال میں سرمایہ داری کیلئے کام کرنا چھوڑ دیں ۔
سوال :۔ آپ کے فلسفے میں سرمایہ داری کیا ہے ؟
جواب:۔ کوئی اکیلا شخص کسی دوسرے انسان کا غلام نہ ہو۔ اور جہاں کسی کا استحصال نہ ہو۔
سوال:۔ کس فلسفہ کی لمبی زندگی ہوتی ہے تشدد کی یا عدم تشدد کی جیسا کہ ہمارے سامنے مہاتما گاندھی کی مثال ہے ؟
جواب:۔ کوئی شک نہیں مہاتما نے اپنی زمین کو ہموار کیا اورچیزوں کو تبدیل کیالیکن کوئی بھی عدم تشدد بعد میں تشدد میں ہی تبدیل ہوا۔
سوال : ۔ آپ اکبر بگٹی اور عطااللہ مینگل کو کس طرح دیکھتے ہیں؟
جواب :۔ میں نے بگٹی کے ساتھ طالب علمی کا وقت گزاراہے میں عطا اللہ مینگل کے متعلق کچھ نہیں کہہ سکتا کیونکہ وہ نہ تو سوشلسٹ ہیں نہ قوم پرست ۔
سوال :۔ پھر وہ کیا ہیں؟
جواب:۔ آپ میرے لئے مسئلہ مت بنا ئیں
سوال :۔ انتہا پسند عناصر ابھر رہے ہیں سندھ اور بلوچستان میں کیا وجہ ہے کچھ لوگ کہتے ہیں کہ انہیں ان کاؤنٹر کے لئے بنایا جارہا ہے ۔
جواب: مجھے معلوم نہیں ،ہوسکتا ہے کہ یہ مقررہ وقت کے لئے بنایا جارہا ہے اور تصادم کے لئے ہو۔

nawabmarri3.jpg

سوال: ۔ آپ سندھ اور بلوچستان کی سیاست کو کس طرح دیکھتے ہیں؟
جواب:۔ سندھ تعلیم یافتہ ہے مجھے امید ہے وہ زیادہ طاقت ور اور با شعور قوم پرست ہیں ۔جبکہ ہم بلوچ ہمت و حو صلے والے ہیں ۔
سوال:۔ حوصلے کب تک زندہ رہیں گے ؟
جواب:۔ ہم انہیں جگا رہے ہیں ہمارے لوگوں کے پاس حوصلے بہت ہیں ۔ لیکن تعلیم کی بھی ضرورت ہے۔ صرف ڈگریوں کی نہیں بلکہ سوشلسٹ تعلیم ۔ ہمارے محدود وسائل ہیں لیکن ہمارے جذبات ہمیں زندہ رکھے ہوئے ہیں۔
سوال:۔ بلوچستان میں جرنلسٹوں کو قتل کیا جارہاہے۔ لوگ کہتے ہیں کہ آزادی کی جنگ لڑنے والے انہیں مار رہے ہیں ۔ میرے پاس کوئی شہادت نہیں لیکن میں حقیقت جاننا چاہتی ہوں؟
جواب:۔ میں قتل کرنے پر یقین نہیں رکھتا اور مجھے اس بارے میں کچھ معلوم نہیں۔ (اچانک نواب خیر بخش مری کے ایک ساتھی نے مداخلت کرتے ہوئے کہا کہ مسلح دفاع والوں نے جرنلسٹوں کے قتل کی ذمہ داری قبول کی ہے)
سوال:۔ آپ نے کہا کہ مذہبی عناصر نے بینظیر بھٹو کو قتل کیا ۔کیا آپ سوچتے ہیں کہ انتہا پسند اتنے طاقتور ہوگئے کہ وہ کسی کی مدد و تعاون کے بغیر یہ اقدام کرسکیں ؟
جواب:۔ یہ کہنا میرے لئے مشکل ہے لیکن آرمی میں مذہبی انتہا پسند موجود ہیں اور آئی ایس آئی میں بھی ۔ امریکہ نے ان کی مدد نہیں کی لیکن آرمی مذہبی ہے۔
سوال :۔ سیاست کسے کہتے ہیں؟
جواب:۔ آزادی ، انصاف اور انسانیت
سوال :۔ بلوچستان کی سیاست کیا ہے ؟
جواب:۔ اختر مینگل اور رئیسانی پاکستانی سیاست کو پسند کرتے ہیں اور یہ خود غرض موقع پرست لوگ ہیں ۔کیا جمہوریت ان لوگوں پر بھروسہ کرسکتی ہے اور ان لوگوں کی ضرورت ہے وہ بلوچ جو پہاڑوں میں ہیں و ہی بلوچستان کے لئے کام کرتے ہیں اختر مینگل کہتے ہیں کہ وہ ووٹ کے ذریعے تبدیلی چاہتے ہیں اور وہ آگاہ نہیں تھے جب نواز شریف نے دھماکہ کیا ۔ ہم بندوق اٹھا ینگے اگر دوسرے کے پاس بندوقیں ہیں اور اگر کوئی بات کرتا ہے تو ہم بھی بات کرینگے ۔
سوال:۔ بلوچستان اور سندھ کی صورتحال میں کون سبقت لے گا؟
جواب:۔ مجھے امید ہے دونوں مل کر جدوجہد کرینگے اور اپنے مشترکہ مسائل حل کرلیں گے۔
سوال:۔ آپ کہہ چکے ہیں کہ آپ قتل سے نفرت کرتے ہیں لیکن جو پہاڑوں پر ہیں اور جنگ لڑرہے ہیں کیا آپ نہیں سوچتے کہ اب وقت آگیا کہ مسئلہ کا حل سیاسی بات چیت کے ذریعے حل کیا جائے؟
جواب:۔ میں بوڑھا آدمی ہوں اور ان کی طرف سے بات چیت نہیں کرسکتا ۔ لیکن کئی دفعہ پاکستان کے حکمرانوں /فوجیوں نے ہمارے ساتھ دھوکہ کیا ۔ نواب نوروز خان اور نیپ کے ساتھ انھوں نے کیا کیا۔وہ قرآن لائے لیکن طاقت کے ظالمانہ ا قدام کو نہ روکا۔ ہم بات نہیں کرینگے ۔ایک جگہ نیلسن مینڈیلا لکھتے ہیں کہ سفید آدمی (انگریز )سے ہم بات کرنا چاہتے ہیں تو انھوں نے یہ فرض کرلیا کہ یہ تو تھک چکے ہیں اور یہ نشانی ہے شکست کی۔ اسی لئے ہم کبھی بات نہیں کرینگے ۔
سوال:۔ آپ لڑنے کو ترجیح دیتے ہیں ؟
جواب:۔ ہمارے پاس سوائے جنگ کے دوسرا کوئی اور آپشن نہیں ہے ذاتی طور پر میں یقین کرتا ہوں کہ یہ بات کرنے کا وقت نہیں ہے۔
سوال : ۔ کیا جناح سیکولر تھا؟
جواب: ۔ آپ نے اس کے چھو ٹے بھائی (بھٹو ) کے بارے میں پوچھا تھا اور اب مسٹر جنا ح کے بارے میں۔ آپ اس کے رشتہ دارووں سے پوچھیں مجھے معلوم نہیں ۔
سوال :۔11مئی کو انتخابات ہورہے ہیں ؟
جواب:۔ جو پاکستان کو چاہتے ہیں ووٹ کرینگے اور جو نہیں چاہتے وہ کبھی ووٹ نہیں کرینگے ۔
سوال:۔ 11مئی کو آپ اور بلوچ کیا کرینگے ۔
جواب:۔(مسکراتے ہوئے )آپ زیر زمین معلومات حاصل کرنا چاہتی ہیں۔
سوال :۔ 11مئی کو بلوچستان میں لوگ کیا کرینگے کیا وہ T.Vدیکھیں گے
جواب:۔ میں صرف یہ کہہ سکتا ہو ں کہ بلوچ اپنی زندگیاں دے چکے ہیں اور صرف ان کی وجہ سے بلوچ کو ووٹنگ سے پہلے سوچنا چاہیے میں ان سے کہونگا کہ ووٹ نہیں ۔
سوال:۔ شکریہ
جواب:۔ میں خوش ہوں شکریہ

“Books in the state of Pakistan”

books2

Walíd Lál Baóc.

After wandering for six and a half hours in the neighbourhood’s tea shop with friends, when I headed towards home I got a text from a friend. He told me that a worthy discussion was being held on facebook about the Roman & Arabic script of Balochi writing. Upon reaching home, I too dragged open my laptop and logged in my facebook account. The first post I came across in my news feed was of Balochi writer who was complaining that the local markets refused to sell his book due to “strong anarchist” content. (I don’t know the contents of his book.)

It is to be noted here, that the Pakistani security forces had on several occasions raided educational institutions and have banned publication and marketing of several books. They would take some literature with themselves and later display them to the media at conferences as if they were explosives and immunizations.

The forces termed the books “Ishtihaal Angaiz”(Outrageous) and said the contents promoted anti-state tendencies. The post got me reminded of a forgotten event.

It happened so that a friend suggested me the novel “Love in the time of Cholera”. So, I read the original english copy and watched the movie based on the novel too. I got interested to read the Urdu translation as well. So I searched for translation. One of my overseas friends had the urdu translation. I asked him for the book. He agreed and said that would send the book whenever an acquaintance would be coming there. Thus I waited and few days later a friend informed me that he was coming. I asked him to do a favour by bringing me that book from that friend. But was astonished and shocked by the reply I got. He chuckled If you ask me to bring drugs or narcotics, I will, but not books.For an instance I wondered in amazement that why is it so that a person can be made to smuggle drugs but won’t bring a book.

BOOKS! Which are the source of enlightenment and shapers of vision

After a brief while I replied him It’s okay. Time passed by and I forgot about that book. Then after some days a friend told me that he was in Karachi and was due to visit me in some days and asked me if I wanted anything. I asked him about nothing else but to bring me that book. He apologized that he couldn’t bring the book due to strict checking at the airport. And carrying any sort of book for US was prohibited. I assured him that this book wasn’t one of those so called “Outrageous books”. It is mere a common girlish love story. But he exclaimed, “But still it’s a book after all”.

It made me realise that this state is one of the anti-books state. No matter If it is based on politics or history, literature or sciences, sensitive or general, the state just disgusted and condemned BOOKS.

Pakistani forces think that by looting, banning and burning books, they would restrict our voices, mutilate our intellect and constrain our knowledge. But they do not understand that ideas and visions cannot be restricted, banned, burnt or tortured. They cannot be raided or detained at airports.

A german poet wisely once said “where they had burnt books, they will end up in burning humans”.

ادیب نا کڑد نوشت

s-l400

عابد بلوچ

ادیب ہمو انسان مریک ہرا کہ اسے راج سینا دروشم آ ہر وخت تینا نظر ءِ شاغسہ ہمو راج نا ہر جوان او گندہ، حق او نا حق، راست او چپ، انصاف و نا انصافی،ظلم و زوراکی و انسان نا بنیادی حق آتا باروٹ الس اٹ شعور و آگاہی تالان کننگ کن تینا راست اننگا خیال آتے شاعری، افسانہ،ناول و نوشت نا دروشم اٹ خوندی کیک۔ دنکہ سیانڑاک پارہ کہ ادیب راج نا آدینک مریک۔ آدینک ہمو شیشہ ءِ ہراٹی بندغ تینا حقیقی آ دروشم ءِ خنیک۔ ولے بعض آ ادیب آک اصل کڑدار آن چپ مرسہ اسے زرخرید سینا کڑد ءِ دوئی کریرہ، دنکہ راج نا مچا نا انصافی، ظلم و زوراکی و انسانی حق آتا لغت ماری تے خنیسہ حاکم نا تعبداری نا خاطر آن قلم نا بے حرمتی کرسہ حق و ناحق، ظالم و مظلوم نا فرق ءِ مٹائفسہ اسے مجرم ئس جوڑ مریک۔ ولے ہراڑے دا وڑ نا مجرمانہ او ادیب ارے ہموڑے ادیب نا حقیقی آ دروشم اٹ گڑاس ہستی تینا قلم نا کمک اٹ راج نا ہر گندی و ظلم و زوراکی تے بے بیدس خوف و لالچ آن دنیا نا مون آ تالان کیرہ۔ اندا وڑ ادیب بھلو زمہ دار او ہستی ئس مریک ہرانا زمہ ءِ کہ راج نا حقیقی آ دروشم ءِ دنیا نا مون آ تالان کے۔ اسے راج ئس ہمو وخت آ شون الیک ہرا وخت آ کہ اونا ادیب آک غفلت نا تغ آن بیدار مرسہ تینا قلم نا کمک اٹ راج نا دشمن تیتو جنگ اتیرہ۔ راج نا پوسکنا ورنا تیٹی اسے ہندونو شعور ئس تالان کننگ کن نت دو خلیرہ ہرا کے انسان نا بنیادی شعور اٹ بریک دنکہ جوان گندہ، ظالم مظلوم، حق نا حق و انسانیت نا رکھ۔ ادیب مچا انسانیت نا پاسدار مریک۔ مطلب انسانیت تن ہرا جاگہ غا ہم ظلم و زوراکی مریک یا اونا بنیادی آ حق آک پلنگیرہ تو ہموڑے اندا ہستی تینا لوز آتیٹی ظالم و حاکم نا تغ ءِ حرام کیک۔ بلوچ راج اٹ ہم ادیب آتا اسے گچینو کڑد اسے۔ تاریخ گواہ ءِ کہ ہرا وخت آ سرزمین بلوچستان آ قوضہ کننگا چائے او ہرا دروشم اٹ بس ولے دا دھرتی نا جنگجو تیتو اورا ادیب آک ہم اسے بہادر او کڑد ئس دوئی کریر۔ تینا الس اٹ قومی شعور و بیداری ودی کننگ، قوضہ گیر ءِ قوضہ کننگ نا احساس تننگ، تینا دھرتی نا رکھ اکن جہد کریر۔ صرف دشمن ءِ بے تغ کتوس بلکہ دا دھرتی نا لغور و بزدل آتے ہم شغان ترسہ بروکا نسل نا مون آ اوتا کڑد ءِ اسے بزدل ئس نشان تسور۔ دنکہ ہرا وخت کہ انگریز سامراج سردار و نواب آتے بگی ءِ چکیفے تو ہموڑے بلوچ قوم نا مزاحمتی آ شاعر ملا مزار بنگلزئی تینا لوز آتے شاعری نا دروشم ترسہ بزدل آتے غیرت نشان تس۔ ہراڑے بھگی چکوکا سردار آتے شغان تس ہموڑے انگریز ءِ نا مون آ چلتن نا مثل اٹ سلیسہ جواب تروکا نواب خیر بخش مری(اول) نا بہادری نا واقع ءِ ہم قوم نا مون آ تالان کرے۔ میر یوسف عزیز مگسی قوم ءِ غلامی آ کشنگ کن اسے تاریخی او کڑد ئس دوئی کرے۔ ہمو دور اٹ انگریز سامراج ءِ تینا دھرتی آ قوضہ گیر نا خلاف تینا لوز آتیٹ جنگ تس و قوم اٹ شعور تالان کرے۔ اندا وڑ بے شمار ادیب آک بلوچ راج اٹ چراغ نا مثل اٹ داسکان روشن سلوکو۔ بابو عبدالرحمٰن کرد، میر عبدالعزیز کرد، بابو نادر قمبرانی، محمد حسین عنقا، میر گل خان نصیر، واجہ صباء دشتیاری و پین کہی ادیب آک بلوچ راج نا پاسداری ءِ کرسہ بیدس خوف و لالچ آن ہر جوان گندہ و ظالم و جابر نا مون آ چلتن نا مثل اٹ جک سلیسہ تینا ترندی اننگا لوز آتیٹی اکل تسور۔ اینو نا دور باری ٹی ادیب آتا کڑد آ چنکو جاچ ئس الین تو دا گڑا ننے بھاز آسانی اٹ دوئی مریک کہ ہرا ادیب حقیقی ڈول اٹ تینا اندا جاگہ غا سلیس و ہرا تینا حقیقی آ حالت ءِ بدل کرسہ حالت نا سختی و سوری تیتو اوار بدل مسور۔ بلوچ راج اٹ اندونو ادیب ہم ارے ہراکے راج نا گندی و نزوری، حاکم ءِ وخت ءِ دا کلہو تسور کہ نی دا دھرتی، دا راج اٹ غیر انسانی کڑد ادا کننگ اوس، ولے بھاز اندونو ہم اسُور ہراکے سخت اننگا حالت آتا دون آن تینا قلم نا استعمال ءِ جتا کریر، تینا شاعری، مضمون نگاری، افسانہ، ناول و فکشن اٹ بدلی ایسُور۔ تاریخ ہمو اسٹ اننگا گڑا ءِ ہراکے انسان نا ہر کڑدار ءِ خوندہ کرسہ مچا انسان تا مون آ تالان کیک و بروکا نسل آتے ہم دا نا کڑدار ءِ نشان ایتک۔

بغاوت ہند 1857ء

kashmir

بیبرگ بلوچ

انگلش ایسٹ انڈیا کمپنی 1600ء ٹی جوڑ مس دا کمپنی ہندوستان ٹی چنکو چنکو کاروبار نا بنداؤ کرے۔1611ء ٹی ہندوستان نا شارمچھلی پٹنم ٹی کمپنی تینا اولی گودام(فیکٹری)ءِ جوڑ کرے۔1612ء مغل شہنشاہ جہانگیر تون اَسے کاروباری معاہدہ اَس کرے گُڑا اندا سوب آن ایسٹ انڈیا کمپنی ہندوستان نا بازا شار تیٹی گودام جوڑ کرے کمپنی تینا کاروبارءِمونی درسہ کرسہ کرےآخر آ اسے بھلو کمپنی ئس جوڑ مس اُ بازا گِڑاک اونا دوٹی بَسُر تاریخ ٹی بریک کہ کمپنی تینکن اَسے فوج ئس جوڑ کَرے اسلحہ ہم ہندوستان ٹی ایس جمع کرے۔کمپنی کَرا کَرا مونی اِنسٹ کرے اُ ہندوستانی اُلس تون آوار ہندوستانی فوجی تا زیہا ظلم کننگ شروع کرے اندا ظلم نا سَوب آن ہندوستان ٹی اسے بغاوت ئس مس اَرادے بغاوت ہند پارہ۔ 10 مئی 1857ء اَسے سُرمئی شامس اَس دھلی آن 43 میل مُر میرٹھ چھاونی ٹی بظاھر اَر گِڑا اَردے نا معمول نا وڑاَس یکشمبے نا سَوب آن ایسٹ انڈیا کمپنی نا سول،فوجی انگریز آفیسر آک تینا بنگلہ غاتیٹی بے سُد اَسُرا۔ولے ایلو پاراغان ہندوستان نا تاریخ ٹی کُلان بھلا بغاوت تیار اَس ۔دا نا بُنداؤ میرٹھ چھاونی آن مروئی اس۔ دے نا تمننگ تون اَوار ہندوستانی سپاہیک بغاوت کرسہ چھاونی نا جیل آ حملہ کریر دافتا مسخت جیل ٹی قید تینا 85 سنگتاتے کشنگ نا اَس ارافتے کمپنی کارتوس استعمال نہ کننگ نا جرم اَٹ کورٹ مارشل کرسٹ جیل ٹی بند کریسس۔ جیل آ حملہ خاخر اَمبار تالان مس دا اسے تِریشونک حاکم و محکوم، ظالم و مظلوم نا نیام ٹی جنگ ئس جوڑ کرے۔منہ گھنٹہ ٹی تیوا چھاونی ٹی بغاوت مس۔ 11 مئی نا صوب ء باغی تا سپاہی تا اَسے بھلو کچس دھلی نا لال قلعہ نا مونا یکجا مَسُر ءُ مغل بادشاہ تون ملنگ نا پاریر۔82 سالہ بہادر شاہ ظفر باغی سپاہی تون اِیت کننگ کِن تینا سیکیورٹی انچارج کیپٹن ڈگلسءِ رائی کرے کہ نی دا باغی سپاہی تون ایت کر ۔ولے ڈگلس گدرینگوکا بغاوت آن بے خبر اَس اندا سوب آن اُو تینا سامراجی زبان ٹی باغی تون ایت کرسٹ اوفتے پدی اننگ نا پارے اندا دھمکی نا سوب آن ڈگلس ام دا باغی تا دوہان خلننگا۔سپاہیک قلعہ ٹی انار قلعہ ٹی اخس انگریز سول و فوجی آفسر اسُرا اُفتے کسفیر ءُ بہادر شاہ ظفر مجبور کریر کہ اوفتا ایتاتے بنے۔ لال قلعہ نا قو ضہ آن پد دا بغاوت نا خاخر کُلا دھلی شارٹ تالان مرسٹ اِنا دھلی نا اُلس ام دا بغاوت ٹی اَوار مرسٹ باغی سپاہی تا کمک کریر۔ منہ وخت باز انگریز افسر آتا ءُ باغی سپاہی تانیامٹی دا جنگ چلینگسٹ کرے۔16 مئی اسکان تیوا دھلی باغی تا قوضہ ٹی بَس دھلی نا قوضہ آن پد دا بغاوت ہندوستان نا ایلو علاقہ غاتیٹی کانپور، لکھنؤ، جھانسی، جبل پور، ناگ پور، فتح گڑھ آ تالان مَرسٹ اِنا۔ ستمبر 1857ء اِسکان دا بغاوت ہند تینا جوش ٹی ئس بازا جنگ آتیٹی کمپنی نا فوجی تے شکست مَس گُڑا ستمبر آن پد کمپنی تینا وفادار آ فوجی تے ءُ برطانیہ آن بروکا کمکءِ امو جاگہی آ وفادار آتے اَرا تینا جندنا دھرتی ہندوستان نا باغی سپاہی تے اِلسٹ انگریز نا وفادار جوڑ مسُر دافتے غُٹ اوار کرسٹ اسے بھلو طاقت ئس باغی سپاہی تاخلاف اوار کرے اُو دھلی آن باغی تون جنگ نا بنداؤکرسٹ 20ستمبر اِسکان دھلیءِ باغی تا قوضہ غان ولدا اَلک۔دھلی نا شکست آن پد بغاوت نا جوش پِنسَٹ کرے ۔اکتوبر ٹی کمپنی آگرہ، کانپور آ ام ولدا قوضہءِ الک۔ جون 1858ء ٹی گوالیار ٹی کمپنی نا قوضہ آن پد بغاوت نا اَرا بچت آ خاخراَس او ام کسک ہندوستان ولدا کمپنی نا کیرہ غا بس۔ ولے ایلو پاراغان برطانوی حکومت باز وختان تینا نظر ءِ ہندوستان نا وڑنگا ملک آ تخاسُس انتکہ برطانوی سامراج ہندوستان ءِ صرف ایسٹ انڈیا کمپنی نا قوضہ ٹی تخنگ خُواتویکا۔ گُڑا اندا سَوب آن 1857ء نا بغاوت برطانوی سامراج ءِ دا موقع تس کہ او تینا دا خواستے پورؤ کے۔ 2 اگست1858ء ءَ گورنمنٹ آف انڈیا ایکٹ نا زریعہ ٹی ہندوستانءِ تاج برطانیہ نا تابع کرسٹ اودے برطانیہ نا کالونی ئس جوڑ کرے۔ دا اسے زندہ او مثال ئسے ہمو قوم آتیکن ہَرا دا دور باری ٹی بے سُد مرسہ تینا قومی پہچان و ڈغار آن بے شعوری نا دو آن بے مسخت آ ویل آتیٹی اختہ مرسہ تینا ڈغار ئے سامراج نا کالونی ئس جوڑ مننگ نا موقع ایترہ۔ دا ہم سامراجی گل آتا اسے چَم ئسے کہ قوم نا نیام ئٹ بے مسخت او ویل وَدی کیک ہرا وخت آ قوم نا اُلس نا ویل آتیٹی تینے زیات اختہ کرے تو سامراج آسانی اٹ اوتا دھرتی ئے کالونی ئس جوڑ کیک۔ قومی شعور ہر قوم اَکِن بے حد ضروری ئے ناکہ ہندوستان نا وڑ آ دھرتیک برطانیہ کونا سامراج آتا دوٹی اینو ہم کالونی بدل مننگ کیرہ۔

Baloch genocide and silence of UN

womens

By Saeed Baloch:

On August 11, 1947, the British acceded control of Baluchistan to the ruler of Baluchistan, Mir Ahmad Yar Khan the then Khan of Kalat. The Khan immediately declared the independence of Baluchistan, and Mohammad Ali Jinnah (the representative of Pakistan) signed the proclamation of Baluchistan’s sovereignty under the Khan in presence of a representative of Crown – British government.

The New York Times reported on August 12, 1947: “Under the agreement, Pakistan recognises Kalat as an independent sovereign state with a status different from that of the Indian States. An announcement from New Delhi said that Kalat, State in Baluchistan, has reached an agreement with Pakistan for the free flow of communications and commerce, and would negotiate for decisions on defence, external affairs and communications.”
The next day, the NY Times even printed a map of the world showing Baluchistan as a fully independent country.

On August 15, 1947, the Khan of Kalat addressed a large gathering in Kalat and formally declared the full independence of Baluchistan. The Khan formed the lower and upper houses of Baluchistan’s parliament, and during the first meeting of the Lower House in early September 1947, the Assembly confirmed the independence of Baluchistan. Jinnah tried to persuade the Khan to join Pakistan, but the Khan and both Houses of the Baluchistan’s Parliament (Kalat Assembly) refused. The Pakistani army then invaded Baluchistan on march 28th, 1948, and imprisoned all members of the Kalat Assembly.

India stood silently by Lord Mountbatten, Mahatma Gandhi, Nehru, and Maulana Azad, the then president of India’s Congress Party said nothing about the rape of Baluchistan or later of the N.W.F.P.

Till date, Baluchistan has been the victim of human rights violations, all the major human rights organisations agree that there are gross human rights abuses in Baluchistan, which are being committed by Pakistan Army and ISI. Hundreds Baloch political leaders and activists have been assassinated in different parts of Baluchistan by Pakistani security forces.  since 2001, more than 23,000 Baloch political activists, journalists, writers, and children have gone missing, “illegally abducted” by the Pakistani state security forces and the victims of enforced disappearances are being “tortured and executed” in custody. more than 5,000 Baluch have been dumped in various parts of Baluchistan by Pakistani state security forces.

The number does not include those who were killed during the military attack and air strikes on their homes by Pakistan Air Force fighter jets and cobra helicopters, the Voice for Baloch Missing Persons (VBMP) has registered 667 cases of enforced disappearance and 116 of recovered mutilated bodies in 2016 alone.

The situation is getting worst and the genocide of Baluch nation is on the rise in different names and forms such as enforced disappearance, custodial killings, indiscriminate bombardment of Baloch houses, target killing of the most educated and learned section of Baloch society and economic deprivation of Baloch people in Gwadar to pave way of China-Pakistan Economic Corridor – CPEC. Many people have migrated from different parts of Baluchistan to safer places because of the bloodshed and military attacks by Pakistan army across Baluchistan.

Recently, Pakistan army’s special forces targeted killed and abducted hundreds of Baluch civilians in DASHT, DERA BUGHTI and BOLAN in the name of ‘war against insurgency’, but major casualties were the innocent civilians including women, children, and elders who were brutally massacred, and many women were taken into custody and imprisoned for several weeks. Nobody can exactly tell what those imprisoned women have gone through.

Pakistan is systematically committing a genocide in BALUCHISTAN to maintains its illegal occupation over Baluch land and to loot the resources of Baluchistan to feed, sustain and prosper Punjab.  Baluchistan is blessed with unexplored natural resources that have potential to serve whole region. Geological surveys proved that Baluchistan is rich in minerals like Metallic minerals, Aluminum, Chromium, Copper 2inc, Gold, Iron, platinum, and Uranium. Nonmetallic minerals: asbestos, barytes, Fluorspar, Gypsum, limestone dolomite.

Despite being the owners of a naturally rich land, the inhabitants of Baluchistan live in abject poverty. They are deprived of employment, quality education and clean drinking water.  Humans and Animals use the same water and there are no proper Healthcare facilities in Balochistan. Recently, several very educated Baloch youths including Rehan Rind Baloch and Noor Bibi Baloch died of cancer because Balochistan doesn’t have a cancer hospital. Whereas, Punjabis and its brutal army are rapidly exploiting the resources of Baluchistan along with Chinese imperialist. The ongoing exploiting-project known as CHINA PAKISTAN ECONOMIC CORRIDOR has become another cause of the acceleration of Baloch genocide. The people who live near to CPEC route are being massacred in daily basis by security forces.

In the beginning of this year, the Frontier Corps (FC) has been divided into two parts put all area into the military siege which includes Gwadar, Awaran, Kech and Panjgoor. The deployment of Frontier Corps (FC) has already resulted in the formulation of dozens of armed proxy groups (military death squads) and forced disappearances of innocent Baluch civilians. The Pakistan army plans to establish the second FC headquarter in Turbat, Kech areas which will be under an IG Command. This is another expansionist design of Punjabi army to strengthen its grip over the occupied territories of Baluchistan. Moreover, many settlers will move towards Baluchistan in name of the completion of this project (PAKISTAN-CHINA ECONOMIC CORRIDOR), which will be enough to convert the Baluch nation into a minority in Baluchistan.

The history unveils the fact that the effective source to keep a nation slave is the conversion of the population, in which the occupier states settle their big part of populations in the land of the subjugated nations to convert their local populations into a minority. The world history is full of such examples. Let’s take U.S and Australia, where the local populations were converted in minorities, and today they are deprived of their own national identities and languages. There is not only a human genocide going on in Baluchistan but Pakistan is also methodically committing the cultural and economic genocide of the Baluch nation.

It Is time that united efforts must be made to help the Baluch Nation to get rid of this trauma and miserable situation.

In 1948, the General Assembly adopted a Universal Declaration of Human Rights, which was not only considered a milestone in the human history, but also a light at the end of the tunnel, drafted by a committee headed by Franklin D. Roosevelt’s widow, Eleanor and the French lawyer Rene Cassin.  The document proclaims basic civil, political, and economic rights common to all human beings. However, it was the same year when Pakistan trespassed the document of the Universal Declaration of Human Rights by invading a sovereign state (Baluchistan) and conducted massive military offensives in every nook and cranny of Baluchistan which resulted in many deaths and enforced abductions of Baloch political leaders and common civilians.

Despite the existences of such type of the historical fact and ample evidence against the state of Pakistan, the United Nations continues to ignore the Baloch genocide. The Baluch nation – men, women, children, and elderly are increasingly asking that how may Baluch must die before the UN take notice of the Baluch genocide and held Pakistan accountable for its crimes against humanity and war crimes?  The UN and international community ignored the genocide of Bengali people by Pakistan and now it seems the UN is waiting for Baluchistan to be turned into another Rwanda. Pakistan so far succeeded in concealing its genocidal policies against Baloch nation because the UN and rest of the civilised world remain silent on Pakistani war crimes in Baluchistan.

In 1971, Pakistan killed more than three million Bengalis and raped millions of Bengali women but the UN has failed to even pass a single resolution against Pakistan. UN and civilised world’s criminal silence on the genocide of the Bengali people has encouraged Pakistan to repeat the same in Baluchistan. On the other hand, from 1967 to 1989 the UN security council adopted 131 resolutions directly addressing the Arab-Israel conflict, moreover, Israel had been condemned in 45 resolutions by United Nations Human rights council since its creation in 2006 which is the only democratic country in the middle East. That brings to light the fact that there is a serious deficiency in The United Nations which strongly violates the UN charter and its values, which ought to be fixed before it makes Baloch nation lose hope towards the United Nations.

روشنائی آ کسر نا راہشون نوشت

Saba_balochلالا خان بلوچ

قوم آتا تاریخ اٹ استاد نا اسے عظیم او کڑد ئس مسونے۔ انسان تعلیم ءِ دوئی کیک، تینا حقیقی آ خن تے ملیک، دنیا نا حقیقت آن واقف مریک، تینا زند نا سرسوبی نا راز آتا چاہنداری دوئی کیک، انسانی حق آتیا باورٹ شعور دوئی کیک، تینا قوم نا تاریخ ءِ خوانک و قومی شعور دوئی کیک، دنیا ٹی انسانی دورشم اٹ سنگت دشمن نا فرق ءِ پُو مریک، ظالم مظلوم نا سیالی آن واقف مریک، سامراجی، قوضہ گیر نا چم، کڑدار ءِ پُو مریک، دا کُل اندا عظیم آ ہستی استاد نا کمک مریرہ۔ استاد قوم ءِ تعلیم ترسہ اونا حیققی آ خن تے ملیک۔ دا تعلیم ہمو روشنائی ءِ ہرادے دنیا نا طاقت ور زواک آک ہم تارمہ کننگ کتانو۔ اندا خاطر آن اگہ اسے قوم ئس دا روشنائی ءِ دوئی کرے تو ہمو قوم ءِ دنیا نا ہچو طاقت ئس تارمئی ٹی تخننگ کپک۔ ولے شرط دادے کہ تعلیم حقیقی آ تعلیم مرے، ہمو تعلیم ہرا انسان ءِ انسانیت و انسانی حق آتا باورٹ آگاہی ایتے، زند نا مقصد ءِ دوئی کننگ نا راز آتے پاش کے، زندگی نا مطلب آن واقف کے، تینا قوم، مذہب، زبان و تاریخ آن بلد کریفے دا تعلیم نا حقیقی آ دروشم آکو۔ ولے دنیا نا تاریخ اٹ دا یل ہم نوشتہ ءِ کہ زوراک، سامراج و قوضہ گیر آل محکوم و مظلوم آ قوم آتے ہمو تعلیم خوانفنگ نا اسے بے سرسوب او کوشست ئس کرینو و کننگ او ہراڑان اوتینا مفاد آتے دوئی کننگ و محکوم آ قوم ءِ انسانی حق آتیان نابلد تخنگے۔ انتئے کہ او دا چالاکی ءِ اندا خاطر آن کیرہ کہ غلام آ قوم ہمیشہ بے شعور مرے، اودے اونا حق آتا باروٹ ہچ معلوم مف، غلامی آ زند ءِ پُو مف۔ ولے حاکم ءِ دا گڑا بھاز جوان معلوم ءِ کہ اگہ اسے غلام ئس تعلیم دوئی کرے اوٹی شعور بس تو اودے اونا حق آتیان دنیا نا ہچو طاقت ئس مُر کننگ کپک۔ اندا خاطر آن مظلوم و غلام آ قوم تے دا حقیقی آ تعلیم آن مُر تخنگنگ نا بھاز کوشست مسونے، ولے قوم نا اندا ہستیک (ہراکے استاد نا پن اٹ چاہنگیرہ) قوم ءِ تعلیم ترسہ قومی شعور تالان کرینو۔ بلوچ قومی تحریک اٹ استاد آتا اسے طاقتور او کڑد ئسے۔ اینو تاریخ اٹ اسے روشنائی ءِ چراغ سینا مثل اٹ نظر بریرہ۔ تینا قومی شعورو علم ءِ تینا روحانی آ اولاد آتے ترسہ اینو اوتا ہمو شاگرد آک قومی تحریک ءِ مونی دننگ او۔ بلوچ قومی تحریک اٹ استاد آتا کڑد ءِ مچے خوانن تو ننے تحریک اٹ ئسے ترند او کڑد ئس نظر بریک۔ کنا استاد نا ہمو شعور بشخوکا لوز آک داسکان کنے یات او۔ کنا عظیم آ استاد شہید ماسٹر نذیر مری ہمو کسر ءِ نشان تس ہرا ہر مظلوم و محکوم آ قوم تیکن اسے سبخ ئسے، او ہر وخت پاریکہ کہ تعلیم دوئی کبو دا ریاست نمے ہچ مون آ الیپک، نمے شون الننگ و قوم نا ہیت ءِ کننگ ءِ برداشت کپک، غریب اکن تعلیم بے حد ضروری ءِ۔ شروع ٹی کنے مغز اٹ دا ہیت ہمو وخت آ تولتسہ، ای دا پُو مسوٹہ کہ غریب اندادے کہ پیسہ کم ارے اورتو، گدان تیٹی رہینگک، مال ماڑی اف اورتو، اندا خاطر آن غریب کن تعلیم ءِ المی سرپند مریک۔ ولے نہ نہ دا تو بھاز گچینو او شعور تالان کروکو لوز ئسور، داسہ کنے معلوم مس کہ استاد محترم غریب اصل اٹ غلام آ قوم ءِ پاریکہ، ہر وخت دا پاریکہ کہ غریب ءِ المی تعلیم دوئی کروئی ءِ، واقعی استاد جی شہید ماسٹر نذیر مری نی ننے حقیقی آ تعلیم ترسہ ننا خن تے ملننگ کن بھاز کوشست کریس ولے ریاست دا راز ءِ پُو مس کہ دا استاد آک بلوچ قوم اٹ قومی شعور تالان کننگ او اندا خاطر آن کسر آن کننگ کن شہید کریتا، ولے ای اینو ریاست ءِ دا پاوہ کہ دا استاد نا اینو اخس شاگرد اریر او نی کن شہید نذیر مری او، ای تینا استاد نا ہمو عمل، تعلیم شعور ءِ مچا قوم اٹ تالان کننگ کن سوغند ارفینوٹ۔ بلوچ قومی تحریک اٹ استاد آک قربانی ترسہ بلوچ قوم نا ورنا تیٹی اسے اندونو شعور ئس تالان کریر کہ داسہ ریاست ہچو ڈول سیٹی تینا قوضہ گیری ءِ برجا تخنگ کپک۔ دا عظیم آ استاد آتا کہی شاگرد آک داسہ ہم قومی تحریک اٹ قربانی نا فلسفہ ءِ دوئی کرسہ دھرتی نا آجوئی کن جہد کننگ او۔ قلم نا طاقت اٹ ریاست نا ہر چم ءِ دنیا نا مون آ پاش کرینو، ریاست ءِ ہر جاگہ غا بے سرسوب کرینو، دنیا نا مون آ تینا حق آجوئی نا نعرہ ءِ خلننگ او۔ اینو ننے بلوچ قومی تحریک اٹ بابائے بلوچ نواب خیر بخش مری، شہید صباء دشتیاری، ماسٹر نذیر مری، زاہد آسکانی، ماسٹر علی جان، ماسٹر بیت اللہ بلوچ کہی استاد آتا شاگرد آک قومی تحریک ءِ مونی دننگ او، او چاہے استاد آتا خُڑک مسونو یا اوتا لوز تعلیم و شعور ءِ کتاب تاریخ آن دوئی کرینو ولے دا قوم اٹ اسے اندونو شعور ئس تالان کریر داسہ دا حقیقت ئس مس کہ بلوچ قوم ءِ اونا جہد آجوئی نا تحریک آن ہچو ظلم زوراکی ئس مُر کننگ کپک۔ اندا سلسلہ ءِ ریاست برجا تخنگ کن منے دے مست اسے پین عظیم او استاد شہید بیت اللہ بلوچ ءِ شہید کرسہ تینا گنوکی ءِ ڈکننگ کن تینے دھوکہ ترسہ تینا ہمو بے سرسوب آ سوچ آتے اسے وار ولدا دورائفے کہ دا استاد آتے شہید کرسہ بلوچ قومی تحریک ءِ نزور کیو ولے بلوچ قوم نا با شعور آک ریاست ءِ دا باور کریفیر کہ نی اسے استاد ئسے شہید کیسہ اونا ہزار آ روحانی آ اولاد آک نے تون جنگ ایترہ۔ اینو دا عظیم آ استاد آتا قربانی تا فلسفہ ءِ مونی تخیسہ دھرتی نا آجوئی کن ہزار آک شاگرد آک جہد کننگ او۔ دا ہستیک روشنائی آ کسر نا راہشون آکو، تاکہ دا دنیا ارے دا روشنائی آ کسر اٹ بلوچ قوم تینا سفر ءِ برجا تخیک تاکہ تینا مزل آ سر متانے۔

ماسٹر! معذرت ہم منافق لوگ ہیں

18194843_1467656493265414_3178908465388229715_nعادل بلوچ
جب کوئی انسان منافق ہوجائے تو اُس کیلئے دن کو رات کہنا بڑی بات نہیں کیونکہ منافق کیلئے اگر کوئی شے اہمیت رکھتی ہے تو وہ صرف اپنے ذات کی نشو و نما ہے ۔خوف، لالچ اور خوشامدی منافقت کی عکاسی کرتے ہیں ،جیسا کہ نفسیات دان مریض کی روز مرہ کی معمولات سے ہی مرض کی نشاندی کرتے ہیں اسی طرح خوف ، لالچ اور خوشامدی سے منافقت کی بہترین عکاسی ہوتی ہے ۔ منافق انسان کینسر کی طرح پھیل کر معاشرے کو منافقت کی بھینٹ چڑھاتی ہے ۔ جس معاشرے میں آج ہم رہ رہے ہیں اس کو منافقت مکمل گھیر چکی ہے ۔ میں نے ہمیشہ اپنے نزدیک لوگوں کو ’’مُلاؤں ، مذہبی انتاپسندوں ، تنگ نظروں کو منافق کہتے سُنا ہے(وہ خود بھی اُس جُرم میں شریک ہیں) لیکن یہ لبرل ، سیکولر ، سوشلسٹ ، نیشنلسٹ منافقوں کا کیا ہوگا؟ دنیا کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کیلئے مُلاؤں کے پاس توگڈ طالبان اور بیڈ طالبان کا تصور موجود ہے ، کیا اب یہ نام نہاد سوشلسٹ ، نیشنلسٹ اور لبرلوں کے پاس بھی گڈ مظلوم ، بیڈ مظلوم یا گڈ ظالم یا بیڈ ظالم کے تصور نے جنم لیا ہے ؟طیارہ حادثے میں سب کے DPسیاہ ہوجاتے ہیں ، فرانس حملے میں سب کے اندر کا نام نہاد سوشلزم ، لبرل ازم اور نیشنلزم باہر نکل کر کراچی، کوئٹہ اسلام آباد پریس کلبوں میں موم بتیاں جلانے پہنچ جاتے ہیں ۔ لیکن ماسٹر بیت اللہ جیسے درویش انسان کیلئے کیوں کوئی لبرل باہر نکلے؟ کیا ماسٹر بیت اللہ سوشل میڈیا ایکٹیوسٹ تھا؟ ماسٹر بیت اللہ جیسا معصوم انسان اس معاشرے میں خودداری دکھا رہا تھا جس کے سیدے معنی موت ہے ، ابھی بھلا یہاں کوئی خوددار ہوسکتا ہے ؟ بھائی ماسٹر بیت اللہ کو کیا ضرورت تھی دازن سے تمپ پیدل جاکر اسکول میں بچوں کو پڑھانے کیلئے ؟ ماسٹر بیت اللہ کو کس نے کہا تھا کہ وہ اُن کسانوں اور مزدوروں کے بچوں کے ساتھ مخلص ہوجائے ان کو پڑھائے ؟ جس طرح ہزاروں گھوسٹ اساتذہ کراچی و کوئٹہ میں آسائش و آرام کو زندگی گزار رہے ہیں تو اس طرح ماسٹر بھی گزار سکتا تھا ۔لیکن کیا کرے ماسٹر بیچارہ سادہ لوح بلوچ تھا ۔
میرے لبرل ، سیکولر ، سوشلسٹ ، نیشنلسٹ منافق دوستوں ! آج صبح سوشل میڈیا میں نیوز آنکھوں کے سامنے گزری جس میں بتارہا تھا بلوچستان کے علاقے مند میں پانچ دہشتگرد مقابلے میں مارے گئے ۔ بلوچستان میں تین تین سال قبل اغوہ ہونے والوں کا مقابلے میں قتل ہونا کوئی دل دہلادینے والا واقعہ نہیں ہوتے ۔ دوسرے منافقوں کی طرح میں نے بھی خبر پڑھنے کے بعد فیس بک کو لاگ آوٹ کرکے اپنے روز مرہ کے کاموں میں مصروف ہوگیا ۔ کیونکہ اس میں کوئی بڑی بات تھوڑی ہے بلوچستان میں اب تو اس طرح ماسٹر جیسے درویش انسانوں کا قتل عام معمول کی بات ہے اب میرا جیسا منافق کس کس کیلئے موم بتیاں جلائے؟ دیکھو بھائی ایک تو یہ بلوچستان کا معاملہ ہے ، دوسرا ملکی سلامتی کے اداروں نے کہا ہے کہ یہ دہشتگرد تھے اس معاملے ہمارے جیسے لوگوں کا خاموش رہنے میں ہی عافیت ہے۔ دیکھے بھائی اگر ماسٹر بیت اللہ توہین رسالت کے الزام میں مارے جاتے تو ہم سوشل میڈیا کو سر میں اُٹھاتے ، ٹیوٹر میں ٹرینڈ کرواتے ، پریس کلبوں کے سامنے موم بتیاں جلاتے ، فیس بک ڈی پی تبدیل کرتے اس طرح کرنے میں سانپ بھی مرجاتی ہے اور لاٹھی بھی نہیں ٹوٹتی ہے ۔بھائی ماسٹر بیت اللہ کی بد نصیبی تو دیکھ مارا بھی بلوچستان جیسے جنگل میں گیا ، اگر یہ سکینڈری اسکول کا ٹیچر پنجاب ، سندھ اور پختونخوامیں مارا جاتا تو ہم اپنے سوشلسٹوں کے دس بارہ آن لائن نیوز میں اس تشہیر کرواتے ، اپنے لبرل دوستوں سے آرٹیکل لکھواتے ، مین اسٹریم میڈیا میں بیٹھے اپنے سیکولر دوستو ں سے اس واقعہ کو بریکنگ نیوز کرواتے ، لیکن بھائی یہ بلوچستان کا معاملہ ہے ۔ دیکھوں بھائی ہمارے آئن لائن نیوز کے اس طرح کا رسک کیسے لے سکتے ہیں ؟ اگر بادل نخواستہ آئن لائن نیوز بند ہوگئی تو ان کے بال بچوں کا کیا ہوگا؟ دیکھے بھائی ہمارے آرٹیکل لکھنے والے دوستوں پر کڑی نظر رکھی جاتی ، اس لیئے بلوچستان کے معاملے میں ہم اجتناب برتتے ہیں ۔ ہماری بھی کچھ مجبوریاں ہیں ، آپ ہماری مجبوریوں کو سمجھنے کی کوشش کریں ۔ مجھ سمیت میرے تمام لبرل ، سوشلسٹ ، نیشلسٹ دوستوں کو بخوبی علم ہے کہ 17جون 2015 ء کو تمپ سکینڈری اسکول سے صبح سویرے ماسٹر بیت اللہ غائب ہوئے ۔ بھائی یقین جانیے اگر ماسٹر سلیبرٹی ہوتا تو ہم اس واقع پر کچھ کرتے کیونکہ سلیبرٹیزکا معاملہ خود سوشل میڈیا میں اوچھل جاتا تو وہاں ہمیں کوئی مشکلات پیش نہیں آتی ہوگی ۔کامریڈ لینن کے اس قول پر ہمارا ایمان ہے کہ ظلم کے خاتمے کیلئے خونی انقلاب کی ضرورت ہوتی ہے ، تشدد کا جواب تشدد سے دیا جاتا ہے ، چے گیورا سے ہم مکمل اتفاق کرتے ہیں ہے کہ ظلم کے خلاف ہر بولنے والے ہمارے کاروان کے مسافر ہے ۔ لیکن دوست ہمارے یہاں حالات کچھ ٹھیک نہیں ہیں جب حالات ٹھیک ہوجائیں گے تو ہم بلوچستان کے معاملے پر بولیں گے ، ہم پروفیسر صبا دشتیاری، ماسٹر علی جان ، سر زاہدآسکانی اور ماسٹر بیت اللہ سمیت تمام لوگوں کیلئے بولیں گے بس حالات ٹھیک ہوجانے دیں۔
ماسٹر! معذرت  ہم منافق لوگ ہیں ۔

سیاسی عمل میں چیلنجزاور ان کا سدِ باب

hf_140046_article

:جلال بلوچ

انسانی ارتقاء کو اگر ہم دیکھیں تو ہمیں یہ بات نظر آتی ہے کہ وہ شروع دن سے رکاوٹوں سے نکلنے کی تگ و دو کرتا نظر آئے گا۔ ایک مسئلہ ختم تو دوسرا سر پہ آن پڑا، دوسرا اپنے انجام کو پہنچا تو تیسرا۔سلسلہ یو ں ہی چلتا رہا ہے اور چلتا رہے گا ۔ دنیا میں کامیاب انسان یا بڑی ہستیاں وہ کہلائے جاتے ہیں جنہوں نے اس فطری حقیقت کا خندہ پیشانی سے استقبال کیااور رکاوٹوں کو راہ سے ہٹانے کے لیے ان کے سدِ باب کا ساما ن کیا۔انسان نے جب سے دنیامیں قدم رکھا ہے مشکلات اور رکاوٹوں کا سامنا کرتا چلا آرہا ہے، اگر ہم لمحہ بھر کے لیے سوچ لیں کہ اگر زندگی میں چیلنجز نہ ہوں تو زندگی کیسی ہوگی، یعنی ہر کوئی آرام اور سکون کی زندگی گزار رہا ہو،آیا ایسے میں زندگی پہ جمود طاری نہیں ہوگا اور اگر جمود طاری ہو تو؛ کیاانسان نت نئے تبدیلیوں کا پیش خیمہ بن سکتا ہے یا بن سکتاتھا؟انسان کی اسی سرشت نے چیلینجز قبول کی تو ستاروں کو تسخیر کرنے کے عمل سے گزررہا ہے۔چیلینجز اور رکاوٹوں سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ انسان کی زندگی اس وقت بے رونق ہو جاتی ہے جب اس میں مشکلات اور چیلینجز کا پہلو شامل نہ ہوں۔
سماجی عمل میں رکاوٹوں اورمشکلات پر اگر بات کی جائے تو قلم کی سیاہی خشک ہوگی پر بات اپنے انجام کو پہنچ نہیں پائے گا۔ ہمارا مضمون انقلابی اور سیاسی عمل میں درپیش رکاوٹیں اور ان کے سد باب اور تدارک ہے۔ہم یہ دیکھنے کی کوشش کرینگے کہ سیاسی عمل میں چیلینجز سے کیا مراد لیا جاتا ہے ،یہ مشکلات کیسے آتے ہیں اور ان کے سدِباب کو ممکن کیسے بنایاجاتا ہے؟
ہر سماج جہاں سیاسی یا انقلابی عمل شروع ہوتا ہے یا جہاں لوگ تبدیلی کی بات کرنے کے ساتھ ساتھ عملی طور پر اپنا کردار نبھاتے ہیں ، اس میں رکاوٹوں کاراہ میں حائل ہونا فطری عمل ہے ۔ بعض اوقات قوموں کے عروج و زوال کا جب ہم مطالعہ کرتے ہیں ان کا جنہوں نے عروج حاصل کیایا جو زوال پذیری کا شکار ہوئے توان کے اس عمل میں چاہئے کامیابی ہویا ناکامی، رکاوٹوں کے سدِباب کے عوامل ہمارے سامنے آتے ہیں ، جو فتحیاب ہوئے ان کے تدابیر اور جو ناکام ہوئے ان کے دورانِ عمل کی کمزوریاں عیاں ہوتی ہیں۔
سیاسی عمل میں چیلینجز کے اسباب کے جو بنیادی عوامل ہیں ان میں سماج کی نوعیت ،جس میں جغرافیہ ، آب و ہوا، سماج کا معیار(تعلیمی اور معاشی)،حالات، سماج میں رہنے والے مختلف طبقات کے مقاصد،مخالفین کے مقاصداور دنیا کے حالات قابلِ ذکر ہیں۔ سیاسی کارکن اگر ان عوامل کو پسِ پشت ڈال دے تو وہ کبھی بھی مسئلہ اور اس کی نوعیت کو سمجھ نہیں پائے جس سے مسائل اتنی پیچیدہ صورت اختیار کریں گے کہ مسئلہ یارکاوٹ کئی اور مسائل جنم دینے کے اسباب فراہم کریں گے۔

چیلنجز سے نمٹنے کے لئے منطقی سوچ بنیادی اہمیت کا حامل ہوتا ہے ،منطق کے بغیر کام پیچیدگیوں کا سبب بنتا ہے۔
کسی بھی سیاسی انقلابی عمل میں درپیش مسائل کچھ اس انداز میں ہمارے سامنے آتے ہیں ۔
۱۔ سماج میں بسنے والے باشعور،ترقی اورتبدیلی کے حامل لو گ پرانے طریقہ کاریا یوں کہیے کہ فرسودہ طریقہ کار، یا استحصالی نظام سے اتنے دل برادشتہ ہو چکے ہوتے ہیں کہ وہ نئی راہوں کا تعین کرنے کی جانب پیشرفت کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیں۔ یہ جانتے ہوئے بھی کہ راہ میں بہت ساری مشکلات آئیں گے ۔ جذبات کی بنیاد پر تو سبھی سماج ایسے مسائل سے نمٹنے کی کوششیں کرتے ہیں ،پر اس امر میں کامیاب ایسے معاشرے ہوتے ہیں جن کے پاس مسائل سے نمٹنے کا منطقی طریقہ کار موجود ہوں ، جو تخلیق اور تسخیرکے ہنر سے آشناء ہوں۔اگر ایسا نہیں ہوا یا انا کے گھٹا ٹوپ اندھیروں میں سماج ڈوبا رہا تو اس کے صفحہ ہستی سے مٹنے کے اسباب بھی اس کے اسی عمل سے شروع ہونگے۔ ابتداء میں جو بنیادی مسائل درپیش آتے ہیں ان میں
1۔ سیاسی جد و جہد میں یہ دورانیہ ہر تحریک کو لاحق ہو ا ہے ، کام یقیناً مشکل ہے جس میں سماج کا پرانے یا روایتی طریقہ کار کو چھوڑ کر نئی روش اختیار کرنا ،وہ بھی کسی ایسے سماج میں جہاں قبائلی طرزِ زندگی ہو، تعلیم کا میعار غیر تسلی بخش ہو اور اگر پڑھے لکھے لوگ ہوں تو وہ بھی بینکنگ نظامِ تعلیم سے فارغ التحصیل ، جنہیں روزی روٹی اور روز گار کے سوا کچھ اور سو جھتا ہی نہ ہو۔اب ایسے سماج میں جہاں لوگ غلامانہ طرزِ زندگی، وہ چاہے انفرادی غلامی کی قسم ہو یا اجتماعی صورت میں ہو، جہاں لوگ انا کی خول میں مقید ہوں یا قبائلی سوچ کی زنجیروں میں جھکڑے ہوئے ہوں ، اب سماج میں اگر ایسی سوچ کے حامل لوگ رہتے ہوں توکسی نئی سوچ کی شروعات یا جدت پرستی کسی صورت کسی چلینج سے کم نہیں ہوگا ۔ سیاسی عمل جہاں تبدیلی کی بات ہورہی ہوتی ہے وہاں عمل کی راہ میں جو رکاوٹیں سامنے آتی ہیں ان میں ابتدائی کردار ایسے معاشروں کا ہی ہوتاہے جو تعمیر نواور عمل کی راہ میں حائل ہوتے ہیں ۔
2۔ غلامانہ سماج میں ایسے افراد اور جماعتیں موجود ہوتے ہیں جو سماج پر اپنی اجارہ داری قرار رکھنے کے لیے غلامانہ سوچ کو پروان چڑھاتے ہیں جنہیں سیاسی اصطلاح میں نام نہاد جمہوری سوچ کے حامل افراد کے القابات سے نوازا جاتا ہے جو مخالفین کے مقاصد کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے آکسیجن مہیاء کرتے ہیں ۔ نئی سوچ چونکہ اپنے ارتقائی عمل سے گزر رہی ہوتی ہے اور بلوغیت کی سیڑھی تک پہنچنے سے پہلے نئی سوچ کو ختم کرنے کے لیے ایسے عوامل انتہائی درجے کی کوششوں میں مگن رہتے ہیں ۔ایسے افراد اس بات کا بخوبی ادراک رکھتے ہیں کہ نئی سوچ اور طریقہ کار اگر رائج ہوا تو اس سوچ کے حامل افراد گدیوں پر براجمان ہونگے جس کے مثبت اثرات بہت جلد عوام ذہنی طور پر قبول کرینگے ، یہ جانتے ہوئے کہ عوام کا نئی سوچ کی جانب گامزن ہونے سے پرانے طریقہ کاراور اس کے کرداروں کی موت واقع ہوگی اسی لیے وہ عوام کو گمراہ کرنے کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے ہیں۔ بلوچ سماج میں ایسی سوچ ہمیں بلوچ پارلیمانی پارٹیوں میں بکثرت دکھائی دیتی ہے جن میں نیشنل پارٹی، بی این پی (مینگل) اور بی این پی (عوامی) قابل ذکر ہیں۔ان کی تاریخ اور کردار کے بارے میں بہت کچھ لکھا جاچکا ہے اور اگر ان کی حالیہ کارکردگی کو دیکھیں توپا کستان کی پارلیمانی کرسیوں کی بندر بانٹ میں ایک دوسرے سے سبقت لے جانے کی کوششوں میں لگے رہتے ہیں ۔دراصل یہاں قبضہ گیر کی پالیساں ہوتی ہیں جو انہیں اس نہج پہ پہنچاتی ہیں ، قبضہ گیر کی پالیسیوں کا مقصد عوام کوایسے موضوعات فراہم کرنے کی کوشش ہو تی ہے کہ جس سے عوام نئی سوچ اور طریقہ کار سے دور ہوں۔ ریاستی عمل کے ایسے اثرات ہمیں بکثرت ایسے حالات کے حامل سماج میں، وہ چاہے دنیا کے کسی بھی حصے میں واقع ہوں دیکھنے کو ملتی ہیں ۔
3۔ غیر ترقی یافتہ معاشروں میں یا یوں کہیں کہ ایسے معاشروں میں جن میں لوگ اپنی راہوں کے تعین کرنے کا عزم کرچکے ہوتے ہیں ، استعماری قوتیں مذہب کے ٹھیکداروں کو جدت پسندوں کے مقابل لا کھڑا کرتے ہیں ۔ قدامت پسندمعاشروں میں چونکہ عقیدہ انتہائی حساس معاملہ ہوتا ہے جسے استعمال کرنے کے ہنر سے دشمن آشناء ہوتا ہے۔ عقیدے کا بطور ہتھیار استعمال کرکے دشمن سماج کومذہبی
منافرت کا شکار کرتی ہے جس سے سماج میں افراتفری پھیل جاتی ہے ۔ بلوچ سماج کااگر جائزہ لیا جائے تو ۱۹۸۶ء میں کوئٹہ میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والوں پرریاستی حملہ اس وقت کے پولیس ڈی یس پی ہمایوں جوگیزئی کی سربرائی میں شروع ہوئی ۔یہ وہ دورتھا جب بلوچستان میں آزادی پسندوں نے اپنے آپ کو منظم کرنے کے لیے اپنے کیمپ تشکیل دینے کا عمل ایک عرصے کی خاموشی کے بعد پھر سے شروع کی تھی۔ ریاست کو اس بات کا بخوبی علم تھا کہ اس سے پہلے کہ بلوچ سماج اس نئی سوچ کو پروان چڑھائے ان میں ایسی منافرت کو ہوا دی جائے جس سے سماج میں رہنے والوں کی سوچ منقسم ہو۔۱۹۸۶ء سے لیکر آج تک بلوچ سماج کو ریاست کے ایسے اوچھے ہتھکنڈوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے جو کبھی شیعہ سنی ، کبھی بریلوی دیوبندی تو کبھی نمازی ذکری کی صورت میں سامنے آتا ہے ۔اس ریاستی پالیسی میں اب تک ہزاروں افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں اور لاتعدا د لوگ بیرونِ ملک ہجرت کرچکے ہیں جن میں ہزارہ برادری کے افراد قابلِ ذکر ہیں۔ اب تک کی یہ ریاستی پالیسی نئی سوچ کی راہ میں تریاق کا کام کرتی چلی آرہی ہے ۔ابتدائی دور میں تو چند ایک گروہ ہی وجود رکھتے تھے اب جب کہ جہدِ عمل میں برق رفتاری آئی ہے تو مذہبی انتہاء پسندوں کے گروہ بھی ریاستی پشت پناہی میں اسی شدت کے ساتھ بڑھ رہے ہیں۔
سدِباب:۔ بلوچ سماج میں گزشتہ تحریکوں کی کاکرکردگی کا اگر جائزہ لیں تو سماج اور موجودہ تحریک پہ اس کے اثرات کے بہت سارے عوامل سامنے آئینگے اگر غیر جانبداری سے تحقیق ہو تو اس سے ہم نتیجہ اخذ کرسکیں گے کہ گزشتہ ادوار میں جس انداز سے تحریک کی آبیاری ہونی تھی نہیں ہو پائی ، ہمیں جس انداز میں نئی سوچ کا پرچار کرنا چاہیے تھا وہ نہیں ہوا، سیاسی عمل میں جن طریقہ کار کو اپنانا چا ہیے تھا ہم اس سے روگردانی کرتے رہے ۔ جس کی وجہ سے تحریک کی راہ میں مشکلات یا اکثر جو ہمیں دیکھنے کو ملتی ہے وہ ہے گزشتہ ادوار میں تحریک میں تسلسل کا نہ ہونا۔جن کی وجہ سے اغیار نے ہر موقع پہ زہر اگلنے کے عمل کو جاری رکھا۔ جس کے اثرات سماج میں ہمیں مختلف طریقوں میں دیکھائی دیتی ہیں۔جیسا کہ اوپر ذکر ہوچکاہے یعنی روایتی سوچ، وفاق پرستی اور مذہبی انتہا پسندی ۔
ان چلینجز سے نمٹنے کے لیے سیاسی عمل میں جب تک سیاسی ثقافت پروان نہیں چڑھتی اس وقت تک نشیب و فراز کا یہ سلسلہ ختم نہیں ہوگا۔ چلینجز اور مشکلات سے مقابلہ کرنے اور ان سے گلوخلاصی کے لیے سیاسی رہنماوں کو اس جانب جو اقدام کرنے چاہیے وہ ہیں
1۔ اداروں کا قیام اورانہیں مستحکم بنیادوں پہ استوار کر نے سے سیاسی عمل میں تعمیر اور ترقی کی راہوں کا تعین کرنا ممکن ہوجاتا ہے کیو نکہ فیصلے فرد سے اداروں کو منتقل ہوتے ہیں جس میں ہمیشہ اجتماعی سوچ پروان چڑھتی ہے جو سماج میں تبدیلی کے آثار کا پیش خیمہ ثابت ہوتی ہے۔ اداروں کے قیام اور ادارتی طرز اپنانے سے جلد عوام کا اعتماد حاصل ہوتا ہے جس سے عوام اور رہنماء مسائل ایک ہی صف میں نظر آئینگے۔ جو عمل اور تحریک کی آبیاری میں کلیدی کردار کا حامل ہے جس سے راہ میں حائل رکاوٹوں کا خاتمہ اور مقصد کاحصول ممکن ہوجاتا ہے۔
2۔ جب اداروں کا قیام عمل میں لایا جاتا ہے تو اس سے کام کی تقسیم کا عمل آسان ہوجاتا ہے جس سے کام میں خلل کے آثار کے امکان بہت کم ہوں گے اور اس سے جو عمل کرنے جارہے ہو اس کے متاثر ہونے کے امکانات محدود ہوجاتے ہیں۔ہاں البتہ اس ضمن میں مشکلات یہ درپیش آتی ہیں کہ سیاست کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے یااپنے کام میں ماہرین کی قلت ہوسکتی ہے ، لیکن اس کمی کو پورا کرنے کے لیے جنہیں ذمہ داریاں سونپی جائے ان کے ساتھ کمک کار( ایسے افراد جو ممکن ہے کہ اس سیاسی عمل میں پیش پیش نہ ہوں لیکن کام جو ہو رہا ہے اس میں مہارت حاصل ہوں) ہونے چاہیے۔ ایسے افراد کی مشاورت اس کمی کو کسی حد تک پورا کرسکتی ہے ۔
3۔تعلیم و تربیت کے بنا کسی سوچ کی ترقی “خام خیالی سے زیادہ کچھ نہیں” ۔ کسی بھی سیاسی پارٹی کو اگر اپنے مقاصد احسن طریقے سے حاصل کرنے ہیں تو ان کی پہلی ترجیح اپنے ورکرز کی تعلیم و تربیت کے حوالے سے ہونی چاہیے۔ اس حوالے سے ان کی ہر ممکن کوشش ہوکہ ورکرز کو وقت و حالات کے مطابق بہتر سے بہتر تعلیم و تربیت کے مواقع فراہم کریں۔سیاسی تحریکیں جہاں آزادی کی سوچ اور عمل دونوں موجود ہوں تو ایسے میں سیاسی ورکروں کے لیے ریاستی اداروں میں تعلیم کے دروازے بند کیے جاتے ہیں جس کی تازہ مثال بلوچ سٹوڈنٹس آرگنائزیشن (آزاد) جو کہ خالص طلباء تنظیم ہے اس پر ریاستی پابندی جس سے طلباء کے لیے ریاست میں موجود تمام اداروں میں تعلیم کے دروازے بند ہوگئے ہیں۔ایسے حالات دنیا کی دیگر آزادی پسندوں کو بھی پیش آئیں ہیں ، سوچنا یہ ہے کہ ایسے مواقع پہ کونسے اقدام کرنے چاہیے جس سے تعلیم کا سلسلہ چلتا رہے۔ مشکلات اور مسائل تو بے شمار آئینگے۔ جن میں ماہرین کی کمی، تدریسی مواد کا انتخاب، تدریسی مواد کی منتقلی، معیشت اور دیگر جن کا حالات تقاضہ کرتی ہے۔لیکن اگر سوچ منطقی ہو تو ہر مسئلے کا حل احسن طریقے سے ممکن ہے۔
چار الفاظ لکھنے یا ان کے پڑھنے سے یہ ممکن ہی نہیں کہ ہم آنے والے یا موجودہ چلینجزکا خندہ پیشانی سے مقابلہ اور ان کے تدارک کے لیے کوئی جامہ حکمت عملی وضع کریں جب تک ہم اس حقیقت کو من و عن تسلیم نہیں کریں گے کہ دنیا میں شاید ہی کوئی ایسا عمل موجود ہو جسے پایہ تکمیل تک پہنچانے کے دوران چیلنجز کا سامنا نہ کرنا پڑتا ہو۔اسی طرح سیاسی عمل میں ہر قسم کے چیلینجزکا آنا سیاسی عمل کا حصہ ہوتا ہے۔چیلینجز کے مثبت اثرات بہت زیادہ ہوتے ہیں جن کا اگر ہم بغور تجزیہ کریں تو اس کے دنیا میں آزاد ہونے والوں پہ جو اثرات پڑے ہیں وہ آج سب کے سامنے عیاں ہیں ۔دراصل اس عمل میں کامیاب وہ ادارے یا سماج ہوتے ہیں جہاں سیاسی ثقافت مضبوط ہوتی ہے سیاسی سوچ کی وجہ سے وہاں چینجز کو مثبت انداز میں دیکھا جاتا ہے کیونکہ وہ اس با ت کو بخوبی جانتے ہیں کہ اگر چیلنجز نہ ہوں تو ترقی ممکن نہیں یا نئی سوچ کا پروان چڑھنا ممکن نہیں ، تعمیر اور تخلیق ممکن نہیں ، آگے بڑھنے اور کام کرنے کا جذبہ اجاگر نہیں ہوگا، اگر چیلنجز نہ ہوں تو عمل اور عمل کرنے والوں پہ جمود طاری ہوگی۔ ان کی ذہن سازی نہیں ہوگی، ان کے لیے وقت و حالات کو پرکھنے کے مواقع دستیاب نہیں ہونگے۔
جب ہم مثبت انداز میں چلینجز کو ذہنی طور پر قبول کرتے ہیں تو ہر مشکل کا سدِباب ہمارے لیے ممکن ہوگا وہ چاہے سمتِ مخالف سے آنے والی کوئی بھی پالیسی اور عمل ہو۔